تنقید

راہی سنزِ’دَہہِ وہرۍ‘ نظمہِ ہنز سام


سجاد امین ملک

’’دہہِ وہرۍ‘‘ نظم چھیہ شاعرانہ تخیلچ اکھ رٔژ مثال۔ نظمہِ منز چھہ باونہ آمت زِ اکھ شعری کردار کِتھہ پاٹھۍ چھہ بے خیالی منزاکِس تتھِس یارہ بلس پیٹھ واتان ییمیک موجودہ صورتحال تسندس ذہنس موجود پۆت آکھ نٔنراونک باعث چھہ بنان۔ نظمہِ منز چھہِ شعری کردار سندۍ جذبات تہ خیالات اکھ اکِس منز تتھہ پاٹھۍ تحلیل آمتۍ کرنہ زِ اکھ نٔو تخلیٖق چھیہ پنن زندہ زوٗ آکار پرٲوتھ تہ ’’دہہِ وہرۍ‘‘ عنوان رٔٹتھ قارۍ یَس برونہہ کنہِ دیدمان سپدان۔ یتھہ پاٹھۍ جسم تہ روح یکوٹہ انسانۍ وجودک باعث چھہ بنان تتھے پاٹھۍ چھہِ لفظ تہ جذبہ رٔلتھ شاعری خلق کران۔ اگر انسانۍ وجودہ منزہ جسم تہ روح بیۆن بیۆن یِن کڈنہ یمن راوِ پنن آسُن۔ بلکہ ونو زِ پورہ انسانہ سند وجودے مۅکلہِ، بلکل یتھے پاٹھۍ اگرے شاعری منز لفظ تہ جذبہ الگ الگ یِن کڈنہ یمن روزِ نہ کہنے وقعت تہ نہ ہیکہِ شاعری بارسس یِتھ تکیازِ دۅنوے چھہِ تخلیقہ؛ تخلیق ؤنتھ گۆو سہ چیز یُس زہ یا دۅیو کھۅتہ زیادہ چیزن ہندِ ملاونہ سیتۍ کُن تہ منفرد بناونہ آسہِ آمت۔ انسان سند تخلیق کار ییتہِ پانے ذات باری چھہ تتہِ چھہ شاعری ہند تخلیق کار اکھ شاعر آسان۔ شاعر چھہ لفظن تہ جذبن تتھہ پاٹھۍ ہم آہنگ کران زِ یہندِ تحلیلہ سیتۍ چھہ یمن دۅشونی چیزن درمیان بیٚنیر کھٹان تہ کُنیر پرٲوتھ چھہِ کُنہِ نظمہِ ہنزِ صورژ منز لفظہ باوتھ پراوان۔ یتھ وٲرڈسؤرتھ’’Man Speaking to Men‘‘ ونان چھہ۔ مگر یہ سورے چھہ شاعرانہ تخیلک کمال یتھ کولرج کُن کرن واجنۍ قوت چھہ ونان یعنی مختلف چیزن یکجا رٹنک طاقت، یُس وکھرہ وکھرہ چیزن اکِس وحدژ منز انان چھہ تہ شکلاوان چھہ۔ امہِ پتہ ییلہ تہِ زانہہ قاری یہ شاعرانہ تخلیق پران چھہ تس چھہ اتھ منز پنن پان آور لبنہ یوان۔ تس چھہ باسان زِ اتھ منز باونہ آمت تجربہ چھہ نہ شاعر سند بلکہ تس پنن۔ تس چھہ بے پھروک زیوِ نیران:

دیکھنا تقریر کی لذّت کہ جو اس نے کہا
میں نے یہ جانا کہ گویا یہ بھی میرے دل میں ہے

نظمہِ منز باونہ آمت تجربہ ہیکہِ اسہِ منز پریتھ اکِس سیتۍ سپدِتھ تکیازِ اسہِ منز چھہ ونیر (fancy) تہ تخیل دۅشونی ہنز ٲڈرن ازلے موجود یُس اسہِ انسان آسنک شرف چھہ بخشان تہ شاعر تہِ چھہ اسے ہِیوٗ اکھ انسان۔ مگر کولرج نہِ خیالہ ییتہ عام انسانس نِش محض بنیادی تخیل چھہ تتہِ چھہ شاعرس نش اکہِ خاص قسمک تخیل آسان یتھ سہ ثانوی تخیل یا شاعرانہ تخیل ناو دمو۔ غلام نبی فراق چھہ ’’کولرج تہ تخیل‘‘ ناوۍ مضمونس منز کولرجن یہ سونچ کاشراونس دوران لیکھان:

’’ونیر چھہ نہ بے شک کہین سوایے یاداشک اکھ انداز تہ طرز۔۔۔

یہ (بنیادی تخیل) چھیہ خود شعوریتچ سۅعمل یۅس تمام علمچ تہ ادراکچ بنیاد بنان چھیہ۔ یہ چھہ تمی عملہِ ہند انسانۍ نقل ییمہِ سیتۍ خداین یہ دنیا تخلیق کۆر۔ روٗد ثانوی تخیل یہ چھہ بنیادۍ نِش مختلف۔ یہ چھہ شاعرانہ تخیل۔ یتھہ پاٹھۍ بنیادی تخیل اکسی عملہِ منز ظاہرس تہ ظاہر زانن والِس یکجا کران چھہ، تتھے پاٹھۍ چھہ ثانوی تخیل یا شاعرانہ تخیل شاعر سند دل تِمن چیزن سیتۍ یمن سیتۍ امۍ سند سوچ تہ امۍ سنز فکر آورۍ آسان چھہِ یکجا کران۔  بقول کولرج یہ چھہ میل کران سنین احساسن سنین خیالن سیتۍ۔

راہی سنز یہ نظم چھیہ ترین بندن پیٹھ مشتمل تہ تریشوے بند چھہِ شاعرانہ مزازچ باوتھ کران۔ اتھ سیتۍ سیتۍ چھہ نظمہِ منز راہی سنزِ نظم نگاری ہند نشانہ ہاوکھ تہِ موجود، یعنی شاعرانہ کردار یا باوکھ  یسندِ سیتۍ یہ نظم اکھ خۅد کلامی چھیہ بنیمژ۔ گۅڈنکس بندس منز چھہ کردار باوان زِ تمۍ کیاہ وُچھ یعنی بے خیالی منز کتھ خاص جایہ نِش ووت سہ۔ دویمس بندس منز چھہ سہ ونان زِ یہ تمۍ اتھ جایہ وُچھ، تہِ وُچھتھ کیاہ پیۆو تس یاد۔ یعنی شاعر چھہ تخیلہ دسۍ کردارس موجودہ صورت حال پیٹھ وُپھنٲوتھ پتھ کال کِس صورتحالس منز واتناوان۔ تریمس بندس منز چھہ شاعر کردارہ دسۍ موجودہ تہ پتھ کالک صورتحال اکھ اکِس سیتۍ مِلوتھ تہ شروپرِتھ اکھ نۆو صورتحال باوان یُس تمۍ جذبلۍ انہارہ ژیونمت چھہ آسان۔  رحمان راہی سنزِ یتھ نظمہِ منز چھیہ اسہِ وٲرڈسؤرتھنۍ نظم’’Tintern Abbey‘‘ ہنز ژھاے لبنہ یوان مثالہِ پاٹھۍ:

Five years have past; five summers, with the length
Of five long winters! and again I here
These waters, rolling from their mountain-spray springs
With a soft inland murmur. Once again
Do I behold these steep and lofty clips,
That on a wild secluded scene impress
Thoughts of more deep seclusion; and connect
The landscape with the quiet of the sky.

دہہِ وری برونہہ تہِ یہ کۅل ٲس یژھے سنۍ باسان
بونہِ پیٹھ ٲس یتھے پاٹھۍ گژھان منزۍ بوٗلیاہ
زنتہ خاموش سرس منز چھیہ تلان وۅٹھ گاڈاہ
سے کِکر پھُلیہ ہوا پرانہِ شرابچ تیہہ ہیتھ
نب یۆہے ناگ ونک زوٗن یہے زل پرۍ یاہ
بے خیالی منز بہ تتھۍ یار بلس پیٹھ ووتس

As in a landscape to a blind man’s eye: ۔
We are laid asleep  In body, and becomes a living soul:
While with an I made quiet by the power
Of Harmony, and the deep power of joy,
We see into the life of things

نیب آوارہ دِلَس لگۍ تہ نظر سیتۍ آیس
اوہ یۆہے آب بران میانۍ نظر پرزناون
بس ییمی وقتہ، ییتی وعدہ کۆرُن، خواب گۆرُن

For I have learned
To look on nature, not as in the hour
Of thoughtless youth; but hearing oftentimes
The still sad music of humanity

دَہ وری گے تہ یہ بوٗنۍ اتہِ مدراوان خواب
قبرِ پیٹھ پیوٗر چھہ پرانان تہ پھۅلان نوۍ سوسن

راہی سنزِمذکورہ نظمہِ منز چھہ وٲرڈسورتھنہِ Solitary Reaper نظمہِ ہند تہِ آلو کنن گژھان:

A voice so thrilling ne’er was heard
In spring-time from cuckoo bird
Breaking the silence of the seas

بونہِ پیٹھ ٲس یتھے پاٹھۍ گژھان منزۍ بولیاہ
زنتہ خاموش سرس منز چھیہ تُلان وۅٹھ گاڈاہ

مضمون کِس دسۍ لابس منز شاعری نسبت وٲرڈسورتھنۍ یۅس راے دنہ آمژ چھیہ سۅ مدِ نظر تھٲوتھ ونو زِ شاعرانہ عمل چھیہ بۅنہ کنہِ دِنہ آمتیو مرحلو منزۍ گزرِتھ طے سپدان:
* شاعر
* ژیونمُت تجربہ
* جذبہ
* یاداشت
* تِتھُے/ہیوٗ جذبہ
* نظم
* قاری
* جذبہ

یہے شاعرانہ عمل چھیہ مذکورہ نظمہِ منز باونہ آمتِس تجربس نظمہِ ہِنز صورت دنس منز عملاونہ آمژ۔ نطمہِ منز چھہ شاعرانہ باوژ بل تہ باوژ ول اکہِ منفرد اندازہ ورتاونہ آمتۍ۔ اتھ منز چھہِ تشبیہہ، استعارہ، پیکر تراشی تہ تجسیم کاری بیترِ ورتاونہ آمتۍ۔ مثالے:

1) بونہِ پیٹھ بوٗلۍ گژھنس چھہِ سرس منز گاڈِ ہنز وۅٹھ تُلنس سیتۍ تشبیہہ آمژ دِنہ۔

2) کِکر پھُلیہ ہوہس منز پرانہِ شرابچ تیہہ۔

3) نبس ونہ کِس ناگَس سیتۍ تہ زوٗنہِ زل پریہ سیتۍ تشبیہہ ِنہ آمژ (یمن ژۅشونی ہند یکوٹہ رٔلتھ اکھ داخلی رشتہ پاد سپدُن چھہ لوٗبہ وُن تاثر پیدہ کران)

4) نیب آوارہ دلس لگنۍ تہ نظرِ سیتۍ یِنۍ، ہیرِ ہند قدمن میٹھۍ دوان گنزراوُن، وقتک مس قدمو پکُن (تجسیم کاری، پیکر تراشی)

5) یاوُن گنڈُن، کوچہ منزۍ وُپھُن، مانزِ اتھو نۆٹ وایُن (معصومیژ، مارۍ منزر، جوانی تہ امارن ہندِس وسجارس کُن اشارہ)

6) نظر پرزناوُن تہ وعدہ کرُن تہ خواب گرُن (عاشقس تہ معشوقس درمیان رشتس کُن اشارہ یُس موت چہِ تخریب کاری سیتۍ ٲخرس پھٹان چھہ)

7) قبر۔ (موتچ علامت)

نظمہِ ہند معنوی تھزر
"موت چھہ مختلف زبانن منز واریہن عظیم نظمن ہند موضوع رودمت۔ ’’دہہِ وہرۍ‘‘ منز چھہ راوی پننس محبوب سنزِ قبرِ پیٹھ پرانین یادن وُزناوان۔ موت چھہ ٹھہراو تہ پوشوُن فرار تہ زندگی چھیہ حرکت تہ ہیتھے ژلہ لار۔ نظمہِ ہندۍ روشن شبیہہ چھہِ دہہِ وہِرۍ برونہہ تہ دہہِ وہرۍ پتہ دۅن صورت حالن برونٹھ کُن انِتھ” تِژھ اکھ نامیاتی وحدت قایم کران زِ قاری چھہ انسانۍ صورت حالس متعلق سونچنس پیٹھ مجبور سپدان۔ نظمہِ منز چھہِ انسانۍ شخصیتکۍ ترے گوشہ گاشراونہ آمتۍ:

1) انسان تہ تسند تخیل: نظمہِ منز چھہ ہاونہ آمُت زِ کتھہ پاٹھۍ چھہ نظمہِ ہند کردار بدس کالک نظارہ وچھتھ پننہِ یادہ وترِ یا تخیلہ دسۍ پتھ کالہِ سپدیمتس واقعہس سیتۍ پنن پان جوڑان۔ کتھہ پاٹھی چھہ تخیلہ دسۍ جذباتۍ انہار موجودہ صورتحالس پیٹھ پنن عکس تراوان۔

2) انسان تہ زمان و مکانچہ پابندی: نظمہِ منز چھہ زیریں سطحس پیٹھ انسان اکِس وقتی دایرس منز بند ’’Time Bound‘‘ ہاونہ آمت یتھ ہاییڈ گر (Dasein) یا (Being There) ونان چھہ۔ شاعرانہ کردارہ دسۍ چھہ ہاونہ آمت زِ کتھہ پاٹھۍ چھہ انسانس لۅکچار، جوانی تہ بُجرہ کیو دورو منزۍ گذرتھ آخر کار ییمہِ عالمہ نیرن پیوان۔ اتھ سیتۍ سیتۍ چھہ ہاونہ آمت زِ کتھہ پاٹھۍ چھہِ بدس کال، پَتھ کال تہ پیش کال انسانہ سنزِ شخصیژ پیٹھ اثر انداز سپدان۔

3) انسان تہ مابعد الطبیعات: نظمہِ ہندس آخری مصرعس منز چھہ انسانس منز موجود مابعد الطبیعاتی پرژھنے (Metaphysical Quest) آسنس کُن تہِ اشارہ کرنہ آمت یعنی انسان چھہ پانس اندۍ پکھۍ موجود صورتحالس سٔنِتھ بعضے تتھۍ ہِوۍ سوال کران یتھ کُن راہی اشارہ چھہ کران:

پرژھلۍ دلن کھار ۍ کنڈۍ سوالن
(دہن سۅرمۍ اچھ ژھرے جوابن)
یہ آرہ ول کہندِ سالہ آمژ؟
یہ زون کیاہ واتہِ آفتابس؟
بۆچھِس کیمِس کمۍ گلابۍ کُٹھ دیت؟
لحذ اندرۍ کۆت گیۆو سکندر؟
(قعرِدریا سلسبیل)

حوالہ

1) Preface to Lyrical Ballads, William Wordsworth

2) غلام نبی فراق ’’کولرج تہ تخیل‘‘ ادبی تنقید (انہار: خاص شمار)، حصہ دوم 1982

3) Being in Time,  Martin Heidegger, 1927

4) علم تہ ادب، کاشر ڈپارٹمنٹ، یونیورسٹی آف کشمیر، دویم چھاپ 2004

سجاد احمد ملک چھہِ کشمیر یونیورسٹی ہندس کاشرس ڈپارٹمنٹس منز ریسرچ کران۔

زمرے:تنقید

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s