تنقید

قاضی غلام محمد سنز شاعری: صورت خانہ


مظفر عازم

پتمین پنژاہن شیٹھن ؤرین ہندین بدلونین دورن منز رودۍ کینہہ شاعر پننہِ قدمہ پوٚد پوٚد دوان تہ پننۍ منزل پراوان؛ تم تہِ یمن پننہِ رنگک احساس اوس، تم تہِ یمن بدلونین نہجن کُن ظۅن اوس نہ۔ شاید اوس صرف اکھ شخص یُس زندگی منز اکس بیۍ سندۍ پاٹھۍ مصروف روزِتھ، مقامی تہ عالمی ادبہ چین تراین واقف ٲستھ، تہ وقتہ کین فیشنن پرزنٲوتھ تہ سٔرتھ سونچتھ پنن طرز پایہ بوٚڈ زٲنتھ تتھ گۅڈ بران اوس: قاضی غلام محمد۔

ییلہ سید محی الدین زور تمۍ سنزِ اردو شاعری پیٹھ ونہِ زِ امکۍ نقش و نگار چھہِ کشیرِ ہندین فنکارن ہنزِ کارۍگری کھۅتہ زیادہ پوشہ ونۍ؛ ڈاکٹر عروج زیدی ونہِ تمۍ سندین فارسی شعرن پیٹھ چھہ پھرۍ پھرۍ حافظ تہ سعدی سند گمان گژھان؛ تمۍ سنزِ ماجہ زیوِ ہنزِ شاعری پیٹھ کیا تگہِ میہ امہِ کھۅتہ ونن۔ مگر کتابہِ ہندین پننہِ پسندہ کینژن خاص نۅکتن کُن پرن والین ہند توجہ پھرنہ خاطرہ چھہِ کینہ اشارہ پیش۔ فارسی شاعری پیٹھ گژھۍتن حافظ تہ سعدی سند گمان؛ مگر تمۍ سنز کاشر شاعری چھیہ تیژ «کاشِر» ییژ نہ شاید تسندس کٲنسہِ زِٹھس یا کٲنسس کالہ بٲج سنز چھیہ۔ یہ چھیہ لفظن، پیکرن تہ استعارن ہندِ حسابہ، پننہ روانی حسابہ، پننہ منظر نامہ حسابہ، موضوع تہ مضمون ژارنہ کہ حسابہ، زندگی ہند اکھ پنن فلسفہ آسنہ کہ حسابہ، تہ منظر نامس سیتۍ شاعرس دلی تہ ذہنی واٹھ آسنہ تہ تتھ باوتھ کرنہ کہ حسابہ کاشِر۔ تمس اوس کاشریو شاعرو منزہ محمود گامی پسند، مگر تمۍ سند پنن عالم چھہ تمس پنن، صرف پنن، تہ اتھ چھہ سے پایہ بجر ییمچ کتھ تم ناماور عٲلم چھہِ کران یہند میہ ناو ہیوٚت۔

قاضی غلام محمد چھہ یادہ وترس زالۍ دوان، صرف لۅکچارہ پیٹھہ کس نہ، پیرِ وادن ہندس تتھ یادہ وترس یُس سانہِ منہ کین تہہ خانن منز رژھرتھ چھہ؛ یتھ مثلا ینگ (Jung) زالۍ دیہِ ہے، تکیازِ تم منظر چھہِ پرانین لکہ داستانن زیوان تہ خالص تخیلک رنگ رٹان۔تتھ عالمس منز چھہ تاپک تہ گاشک لول، تکیازِ گاش تہ وشنیر چھہِ زندگی ہندۍ دوست؛ تتہِ چھہ انہِ گٹیک خوف، تکیازِ انہِ گۆٹ چھہ ترُن تہ زندگی ہند دشمن؛ تتہِ چھہ وصلک سریہہ، تکیازِ زو ذٲژ چھیہ امی مٲنتھرِ سیتۍ نوان، پھۅلان تہ پھبان؛ تتہِ چھیہ فراقچ دگ، تکیازِ دوریر چھہ زندگی ہنز کۅل رٲسۍ کران؛ تتہِ چھہ بیہ سۅکھ لولک تہ بیہ ٲنتھ حسنک ٲنہ خانہ یُس تمام زندگی انسانس بے قرار تھاوان چھہ؛ تتہِ چھہ منزلہ پتھ منزلہ برونٹھ کن قدم کڈنچ کل یتھ خواب ونان چھہِ، یم زندگی ہندۍ رنگہ ولۍ انہار چھہِ تہ یم مینتھ تولتھ آسان چھہِ نہ۔ مگر اتھ ساریۍ دولژ چھہ اکھ بے رحم پزرک احساس ہمیشہ لرِ لۆر روزان زِ سانۍ امار، سانۍ وۅتھ ژھانٹھ، سانۍ خواب چھہِ موسمی پوش، کینژس کال وہۍ کران تہ پتہ چھہ یہند آفتاب لوسان۔ یمنے ٲنہ تاپہ ٹیکین پیٹھ چھہِ شاعری ہیتھ سٲری فن دٔرتھ۔ (شاید چھہِ یمے فلسفکۍ تہ مذہبن ہندۍ اصلی موضوع تہِ)۔ اکس بییس آسہِ یمو منزہ کنہِ اکس یا کینژن پاسن پیٹھ نظر آسان؛ قاضۍ صابنۍ شاعری چھیہ یمن لگ بگ سارِنے انہارن کۅم کٔرتھ؛ تمن نشہِ چھہِ یمن سیتۍ واٹھ تھاون والۍ سٲری وہۍ لبنہ یوان، سیدِ سیوٚد بیانن منز نہ، کلامہ کس ورگہ معنیس منز۔ کینہہ یٔژ پاٹھۍ ورتاومژہ علامژ چھیہ «پرون»، «ناگ»، «بونۍ»، «ژونگ»، «گام»، «ساز»، «وتھ»، «مندور»، «دیان» تہ «دیانک سر»، تہ «جوگۍ» یُس پۆتس کار کٔرتھ گژھان چھہ۔ یہ داتھُر چھہ پانہ ونان زِ یہ وہراون وول کُس آسہِ۔

گۅڈنیک صفت یس پرن وٲلس اتھ شاعری سیتۍ آوراوان چھہ، تتھ ونو روانی تہ شبیہہ سازی یا پیکر تراشی۔ اکس اکس شعرس منز لفظ سوٚمۍ تہ کنہِ جایہ نہ زیوِ روٚٹ گژھان۔ اتھ صفتس کن ظۅن تھاوُن چھہ امہِ کنۍ ضروری زِ ییلہ گوٚب تہ معنی دار کتھ کرنۍ آسہِ، روانی چھہ اکثر چھپہِ لگنک خطرہ آسان۔ کینژن ناماور شاعرن ہندس کلامس منز چھہ واریاہہِ لٹہِ روانی ہنزِ کمی ہند احساس سپدان، خاص کر ییلہ کانہہ سنۍ کتھ وننۍ آسہِ۔ اگر یہ بے حد ضروری صفت تیوتاہ نایاب تہِ چھہ نہ، مگر وۅزم بدلہ شاعر سندِ پننہِ منہ زامژ پیکر تراشی چھیہ قاضی غلام محمد سنزِ کاشرِ شعرہ سۅمبرنہِ «صورت خانہ» کین شعرن ہنز اکھ ٹاکارہ خصوصیت۔ زیادہ تر پیکر چھہِ بصری، یعنی یمن سٲنس وچھنہ کس حیسس سیتۍ واٹھ چھہ، «منہ آنگن منز راتھ وچھم / کن زوٚن شُر اکھ زونہِ گندن»۔ یتھۍ پیکر چھہِ پریتھ غزلس کیو نظمہِ منز۔ نوۍ نوۍ تہ پرن وٲلس کل کڈن والۍ تہ سوٚن اثر تراون والۍ یم بصری پیکر چھہِ تیتۍ وفور زِ کانہہ شعر چھہ نہ یُس نہ ولنہ ییہ۔ امہ کھۅتہ کم پہن، مگر یتھی زودار چھہِ یمن اسۍ سمعی پیکر ونو، یعنی یمن سٲنس بوزنہ کس حیسس سیتۍ واٹھ چھہ، «اسۍ ما وٲتتھ پییہ پتھ ون / سۅرنے واینۍ ہش چھیہ گژھن»، یا «ہیرِ گوٚو ٹھس تہ دل ہیوٚتن راوُن»۔ ژمہِ چھہۍ لگنکۍ (لمسی)، زیوِ مزک باس دنکۍ پیکر چھہِ لگ بگ غیب۔ خوابس منز تہِ چھہ یہ شاعر یا تہ وچھان، یا بوزان یا کُنہِ وِزِ مشک ژیتران۔ یہ چھہ نفسیاتی معاملہ، مگر میانۍ کنۍ چھیہ یہ حدہ روٚس طلبگار ٲستھ تہ تھدۍ خواب وچھِتھ، رٔچھتھ رژھرتھ تہ اچُھہہ تہ ابوس عالم پنن سٲلہ میدان بنٲوتھ بدنی لطفو نشہِ بے نیاز آسنچ علامت۔ بنان چھہ بے نیازی ہند سبب آسہِ ماحولک شٹھنیار، یا آسہِ شاعر سند خاص قسمک مزازہ، مگر یہ چھیہ محض اکھ راے تہ بہ چھس نہ نفسیاتک ماہر۔ میہ چھہ یہ نظرِ تل زِ وصلک ہاوس چھہ «صورت خانہ» کین شعرن منز ٹاکارہ پاٹھۍ موجود۔ ییلہ شاعر (یا غزلک کردار) «پرانہِ مندورِ کنۍ» گژھان تہ تتہِ «تمس» وچھان چھہ، سہ چھہ پانے پانس حیرتن گٔژھتھ پرژھان،

نافہ اوسا تمس ہران جامن
نظرہ آسا تمس شراب وہان

وۅنۍ نبا یور کن ژہ پھیرکھ زانہہ
پانہ کیہتام چانہِ اچھ چھیہ ونان

یا

اسونہِ ہۅنجہ اسۍ شیرِ اکس اکھ لاگو پوش
بتھۍ وۅشلاوو تن شیہلاوو بونین تل

یم شعر چھہِ زودار شبیہن منز بوزن وٲلس، ونن وٲلس سیتۍ تُلتھ نوان، اکس عجیب روبہ خانس منز واتناوان، تہ اچھ گاش تہ خوشبۅے سرنکۍ حیس آوراونس سیتۍ تن شیہلاونچ کل کڈان۔ اکھ کتھ چھیہ شاید یہ زِ یہ شاعر چھہ نہ صرف پیکر تراشی ہند فن مۅلناونہ خاطرہ یہ مرژہ گری کران، حالانکہ رژ شاعری کیت چھہ سہ تہِ اکھ شاعرانہ کمال۔ «صورت خانہ» چھہ زیادہ پہن شعری کردارن ہنز یا کنہِ واقعچ کانہہ کیفیت باونہ مۅکھہ کتھہ صرف پیکرن ہنزِ زبانۍ کران۔ اتہِ چھہِ زندگی ہندۍ فلسفیانہ پزر تہ شاعری ہنز نزاکت رلان۔

قاضۍ صابنۍ لفظ چھہِ زیادہ پہن دۅہ دشۍ ورتاونکۍ کاشرۍ لفظ مگر یمے چھہِ شبیہہ تہ استعارہ بنان۔ تہند استعارہ چھہ کُنہِ اۆگن، کُنہِ دۆگن، تہ کُنہِ واریاہ گۆن آسان۔ یم استعارہ چھہِ تتھہ کنہِ اکھ اکس سیتۍ وٲٹھتھ آسان زِ وازہ محمودن «کتنس ابسن ور دِمہ یو» چھہ یاد پیوان۔ سنتھ پرو تہ «کتھ»، پیٹھۍ ونۍ پرو تہ «کتھہِ ہنا»۔ قاضی چھہ حسابہ کہ علمک بوٚڈ وۅستاد بنتھ یونیورسٹی ہنزن ہیرن پھرۍ پھرۍ کھسان تہ وسان، پننہ علمہ کس روحس چھہ وٲتتھ، مگر تمہِ چین لبن ہند روغن چھس نہ لاران ۔ اۆند پۆکھ چھہ خوابک، شعر چھہ بالہ کۅلہِ ہندۍ پاٹھۍ روان تہ سۆدرہ کھۅنہِ ہندۍ پاٹھۍ سوٚن۔ یندرازنہِ دربارک یہ سوز بوزنہ باپتھ چھہِ کن گۅڈہ خالی کرنۍ، تکیازِ یہ سوز چھہ سانہِ روایتک انگ ٲستھ تہِ نۆو۔ یہ شاعری پرنہ تہ امیک رنگ چھاونہ خاطرہ چھہ واریاہ کینہہ ترٲوتھ، مشرٲوتھ تہ منسٲوتھ امس شاعر سندِ کۅنگہ قہوک «نشہ کرُن» پیوان۔ دپان چھہ:

میون دل رنگہ مۆت چھہ معصوم شُر
چانۍ یاداوری چھیہ سبز الاو

یہ رنگہ مۆت شُر چھہ پرون یاد پیتھ راوان، نۆو وچھتھ راوان، سونچتھ راوان، رٲوتھ راوان، تہ لٔبتھ راوان، تہ راونہ کس اتھ سفرس منز اتی اسان تہ اتی ودان۔ یہ چھہ مزازہ کنۍ بوزۍتو شاعر۔ مگر میہ ہیوٚت فلسفہ دگن، یہ شاعر چھہ نہ فلسفہ دگان۔ یہ چھہ خواب ہاوان:

گۅڈہ ییتہ گاہ پیوٚو افتابک
تتہِ چھس لر ترٲوتھ سونچن

تتہِ چھہ نہ شۆنگتھ، لر ترٲوتھ چھہ سونچان، شاید سونچان سون سفر کتہِ پیٹھہ گوٚو شروع۔ توے چھہ زندگی ہند آگر، افتاب پھرۍ پھرۍ وشینرک تہ راحتک استعارہ بنان۔ شاعر چھہ تاپھ (گاش، وشنیر) سورے ژہتھ یژھان نیُن:

نٲگنہ بۆٹھ پۆت ہردک تاپھ
پانو کوتاہ وہراوتھ

ناگہ بٹھس پیٹھ ہردک مزہم مزہم تاپھ چھاون چھہ سون اکھ خاص طمع، مگر یہ «پانو کوتاہ وہراوتھ»! کل بل چھہ یم تریہ لفظ، یمے چھہِ سمُت کٔرتھ اکھ زودار، سہل، سادہ تہ روان، تہ نیرل کتھ بنان۔ وونۍ اگر یہ تاپھ، یہ گاش نصیبہ آسہِ نہ، تیلہ چھہ وقتک بیاکھ پاس انہ گۆٹ۔ انہ گٹس منز چھہ انسان وٹنہ یوان، کھوژان۔ کھوژان کتھ چھہ، تتھ ہیکہِ نہ زیو دِتھ، مگر پھرٹۍ چھہ گژھان۔ یہ چھہ سون تہِ تجربہ، مگر شاعر ییلہ اتھ خوفس باوتھ کرِ، سہ چھہ ونان:

عجایبات چھہ انہ گۆٹ یتھُے چھہ دۅہ لوسان
یہ میون کُٹھ تہ بہ دوشوے چھہ اکھ اکس کھوژان

«بہ» چھس کھوژان، تہِ تۆر یکدم فکرِ، مگر «کٹُھ» تہِ چھہ کھوژان۔ تتھ پیٹھ چھہ غور کرن۔اگر اسۍ «بہ» انسانہ سند استعارہ مانو، «کُٹھ» چھہ تیلہِ یہ دنیا، سون زمینہِ ژکل یا سٲرے کٲینات۔ اسہِ چھیہ شوب امی زمینہِ، امی میژِ سیتۍ؛ اتھ زمینہِ چھیہ شوب سانہ سیتۍ۔ تاپھ آسہِ، وشنیر آسہِ، تہ وۅتھ بو آسہِ، تیلہِ چھہِ اسۍ تہ یہ زمین اکھ اکس اکار بکار۔ انہِ گوٚٹ کڈِ کاڈ تیلہِ چھہِ اسۍ دۅشوے اکھ اکس دشمن۔ انہِ گٹس منز تہِ چھیہ یہے زمین، انہ گٹس منز تہِ چھہِ اتھ زمینہ «اسۍ»، مگر خوف چھہ یوان اسہِ دۅشونی ولنہ۔ اتھ دۅہ دشۍ محسوس سپدن واجنہ تبدیلی چھہ شاعر نہ واہ واہ کران تہ نہ وۅہو کڈان، سہ چھہ صرف ونان «عجایبات»۔ یہ اکھ لفظ چھہ سونچکۍ دروازہ وتھۍ تراوان، نتہ یہ اوس اکھ عام تجربہ۔

یہ گوٚو اگر اسۍ آفتاب تہ رات تمن معنین منز نمو یہنز اسہ کتھ کٔر۔ مگر «گاش» چھہِ اسۍ امنہ امانس تہِ ونان (تتھ ملکس منز چھہ گاش)، گاش چھہِ اسۍ اولادس تہِ ونان (یم اسہِ وٲنجہ وشنیر آسان چھہِ)، گاش چھہِ اسۍ مثالہِ پاٹھۍ خبرداری تہ علمس تہِ ونان تہ بییہ واریاہن دلس ویہ ونین چیزن تہِ؛ تتھے پاٹھۍ چھہِ اسۍ «انہِ گۆٹ» تہِ واریاہن چیزن ونان یم سانہِ زندگی ویہ ونۍ آسن نہ۔ اگر خیالکۍ یم پاس نظرِ تل روزن، شاعر سند گاشس خوش آسن تہ انہِ گٹس کھوژُن چھہ یمن شعرن ہندِ مدتہ سیتۍ وہراو رٹان۔

احمد بٹوارۍ ووٚن: یار، یار باش آمے/ گاش آمے لتۍیے۔ یہ چھہ وۅنۍ بیاکھ گاش، یارباش یارہ سندِ ملاقاتک گاش، یتھ اسۍ وصل ونو۔ وصل چھہ ژکہِ زو ذٲژن ہندس تتھ سمُت سپدنس ونان یُس زندگی ہند دریاو پکہ ون تھاونچ ضمانت چھہ، تہ فراق چھہِ اسۍ تتھ دورِرس ونان یُس یہ سمُت ناممکن بناوان چھہ، یا دپو یُس زندگی ہنزِ وسونہ ویتھہِ ٹھۆر کران چھہ۔ وصلہ کس سرورس تہ دوریر کس عذابس چھیہ زوذاژ ہندس کلہم نظامس منز اوے کنۍ اہمیت۔ یہ جذبہ چھہ انسانس ازلے غالب۔ جذبہ چھہ زوراور تہ حدہ روٚس؛ زبان چھیہ اسہِ تنگ دامن، اوے چھہِ لولکۍ احوال وننس منز یٔژ پاٹھۍ مٲنڈمژ زبان استعمال سپدان، اتھ حدس تانۍ زِ عام لولہ شاعری چھہِ «لولو» ؤنتھ کینہہ لکھ ٹسنہ کران؛ تی شوبیس۔ توے کنۍ چھیہ نہ لولہ شاعری لگ بگ پریتھ شاعرس نالۍ گژھان مگر کاپہِ چھیہ یوان کمنے؛ یہ چھیہ جان شاعرس فن ازماوان۔ اگر ادا گژھہِ، یہ چھیہ کلامس خۅدکفیل تہ باگہِ بۆرت شاعری ہند فن بناوان۔ اسۍ وچھو قاضی غلام محمد کِتھہ کنۍ چھہ اتھ سمندرس تار لبان۔

درایکھ میہ نش تہ ٲنہ لبن دہ ہیۆتن وۅتھن
آیکھ میہ نش تہ دٲن تھرین تل گنداں چھہِ خواب

دٲن تھرین تل خوابن ہندِ گندنک عالم چھہ زندگی ہند جشن مناونچ سۅ کل یۅسہ سانین روحن ہندین تہہ خانن منز چھیہ؛ ٲنہ لبن دُہ وۅتھنک تصور چھہ سانہِ پتہ وتھ یادہ وتریک بیاکھ پاس، زندگی ہند ماتم کرنک۔ اکھ بیاکھ شاعر ونہِ ہے آیکھ میہ نش تہ خۅش گوس، دل پھوٰٚلم، بیترِ ، مگر یہ شاعر دپان دٲن تھرین تل گندان چھہِ خواب۔ یا بییس جایہ ونان:

لولہ چانے کرۍ میہ ہوہس نالہ متۍ
بونہِ شہلس گٔے میہ سینس نارہ تتۍ

اکھ اکھ لفظ چھہ اکھ اکھ داستان، اکھ کتاب۔ «ہوہس نالہ متۍ» کرنکۍ لفظ چھہِ آش ٲستھ یا نہ ٲستھ لول رچھنک تہ وتہ وچھان روزنک دنیا، «بونہِ شہل» چھہ اتھۍ ہوہس تابع، چھہ تہ یہ شہل مگر «نارہ تتۍ» چھہِ امی خیالہ سیتۍ، یہے بونۍ چھہ نار (چنار)۔ کٔژن تانۍ لفظن منز یہ سورے ویپراون چھہ تھدِ پایہ چہ شاعری ہنز علامت۔ یہ شاعر چھہ خبر کتھ صحراوس منز، شاید چھس محبوب برونٹھ کنہِ، تہ دۅشوے راوۍ، خوابن تہ خیالن منز یا اکھ اکۍ سنز نزدیکی چھاونس منز، مگر بہر حال راوۍ۔ ترنین رٲژن منز الاو زٲلتھ بیہنک یہ دیوانگی ہند عالم چھہ اسہِ یادہ ؤترہ کس پتھ ونس منز، تہ ییلہ قاضۍ صٲبنہِ پسندک کاشر شاعر محمود گامی امہ راونچ کتھ کران چھہ، سہ چھہ اکھ تازہ پیکر بنٲوتھ ونان: «کُنزہ ڈجہ قلفن الفتہ چانے»؛ «صورت خانہ» سجاون وول شاعر چھہ ونان:

حیس رود نہ ۂر دِمو الاوس
کۆت واتۍ خبر کتھن کتھن منز

کتھن کتھن منز حیس نہ روزن، ۂر تہ الاو؛ لفظی معنی وچھو یا علامتی معنی سرو، یہ چھہ بے مثال شعر۔ امہ تصور چہ ساریۍ مثالہ کرو نہ « صورت خانہ» منزہ نقل مگر دۅن کتھن کُن چھہ توجہ دیُن۔ اکھ یہ زِ پننہ مۅچھہِ منز چیرن وول یہ جنسی جذبہ چھہ کُنہِ وزِ خالص تصورن ہنز ارزتھ بنان بلکہ بظاہر چھہ نہ «جنسی» روزانے، محض چھہ جذبہ روزان۔ محبتک یہ اکاے جذبہ چھہ محبوب سندِ کھۅتہ زیادہ ولنہ یوان۔ تِتھۍ سے کُنہِ موقعس پیٹھ چھہ «صورت خانہ» تمس صرف شیرِ گلاب لٲگتھ وچھن یژھان، ادہ یہندِ مۅکھہ لوگن تہ تہندِ:

ویرِ لوگُن یہ کہنزِ اور مہ سن
شیرِ لٲگتھ تمس گلاب وچھو

دوٚیم یہ زِ صورت خانک شاعر چھہ گاشس تہ وصلس تِتھے کنہِ ملہ ون کران یتھہ کنہِ اسہِ ہیرۍمین سطرن منز بوو۔ یتھ ژھۆٹس مضمونس منز شعرہ پتہ شعر نقل کرنک چھہ نہ کانہہ ارادہ ، پرن وول پرِ کتاب تہ سرِ پانے، مگر گاشک، گٹہِ ہند، فراقک تہ وصلک یہ پیٹھۍ ونۍ منظر نامہ ہیکو نہ ییمہ شعرہ ورٲے بند کٔرتھ ییمہ کس دوٚیمس مصرعس منز نار تہ شیہجار ہکچہ گندان سہ ساز چھہ بنان یُس دلہ کین کنن منز بسان چھہ (کن میہ دژاو گوس دیوانے۔ ۔۔۔):

پادشاہ یار وچھتہ کیا خۅش آس
گاش ہیتھ دراو، گاش ہیتھ آیاو

پادشاہ (بے نیاز) گاش، آو تہ دراو۔ سٲری سادہ لفظ چھہِ اکھ تیُتھ پیکر بنان یُس ہوشس تھپھ تراوان چھہ۔ حسنک تہ فنکاری ہند تصور چھہ امی لولہ کہ جذبہ پیٹھہ وۅپدان۔ شاعرس چھہ «عرفکۍ رۅنہ ہٹۍ» یاد پیتھ وُبوٚدر تلان۔ سہ چھہ تتھ پتھ کالس ونۍ دوان ییتہ لکہ بٲتھ تھنہ پیمتۍ چھہِ، تہ یہ سورُے چھس یاد پیوان «چانہِ اچھ» وچھتھ۔ کایناتکۍ رنگہ ولۍ انہار رٔلتھ یۅسہ کنۍ شیچھ یمہ اچھ یتھ دوٚیمس شعرس منز بوزناوان چھیہ، ادبی دنیاہس منز چھیہ تمہِ چہ مثالہ کم:

اچھ چانہ چھیہ زن لکہ بٲتچ لے
ننہِ وانہ دواں پتھ کالک پے

لکہ بٲتچ لے یتھ پتھ کال رۅنہ ہٹیو سیتۍ رنزناوان اوس، سۅے چھہ وچھن وول «چانین اچھن» منز وچھان۔ حسن چھہ اچھن منز تہِ، حسن چھہ یادہ وترس منز تہِ، تہ حسن چھہ یتھ وسیع کایناتس منز ہلم وہرتھ تہِ۔ اکھ مارۍمۆند منظر یُس اسہِ منز واریاہو وچھمت یا محسوس کوٚرمت آسہِ، مگر شعر بنیوو صرف «صورت خانہ» کین صفن پیٹھ۔ یہ چھیہ اکھ رژ مثال زِ تھدِ پایچ لولہ شاعری کتِھہ کنہِ چھیہ کرنہ یوان:

تِتھہ پاٹھۍ ژہ پییہ ہم راتھ ژیتس
زن کاوہ قمیر ژۆل بونیو تلۍ

کایناتہ کہ حسنکۍ بٲتھ گیوِتھ نہ تھۆک انسان زانہہ، نہ تھکہِ۔ ازیک انسان چھہ بلاین منز گیر تہ اتھ حالس منز چھیہ بعضے خوبصورتی ہنز تہ نغمن ہنز کتھ بیقلازی باسان۔ مگر نہ گژھہِ زوذاژن ہنز کۅل چھنبۍ تہ نہ روزِ سونتہ واوچ چھہۍ تن شیہلاونے۔ خوبصورتی ہندۍ سٲری رنگ یم بیہ ٲنتھ کایناتس منز وہرتھ چھہِ، تم سٲری چھہِ معشوقہ سندس بدنس منز تتھے کنۍ یتھہ کنہِ اقبالؒ سندین لفظن منز اسمان منہِ پھلس منز چھہ۔ سانۍ زبان چھیہ کلامہ کین سوٚدرن کۅم کٔرتھ تہِ اتھ ٲنہ خانس کِژ ژھر تہ چھینۍ۔ «صورت خانہ» چھہ حسن لفظن منز ویپراونچ ناکامی ہاونہ مۅکھہ اکھ نایاب ٲنہ گران:

چانہ انہارہ میون شعر ونن
ٹوپہ تل تاپہ ٹیۆک کھٹتھ تھاون

پوٚز ونیون امۍ لولہ متۍ: «میون دل رنگہ مۆت چھہ معصوم شُر»۔ نہ تراوِ سانۍ ٹوپۍ یہ پوٚت کل زانہہ تہ نہ ویپہِ تاپہ ٹیۆک سانہِ ٹوپہِ تل۔ یہ گردش روزِ ہر ہمیشہ تتھے کنہِ سانۍ تن تہ سون من گرا تنبلاوان تہ گرا سنبلاوان یتھہ کنہِ یہ پتھ وتھ اوسمت چھہ۔ اردو شاعر فیض احمد فیض سند یہ شعر گوٚو پننہ وقتہ سیٹھا مشہور: وہ تو وہ ہے تمہیں ہو جاۓ گی الفت مجھ سے / اک نظر تم مرا محبوبِ نظر تو دیکھو۔ وچھن لایق چھہ قاضی غلام محمدن شعر کۆت چھیہ عاشق تہ معشوق دۅشونی ہند حال بٲوتھ لفظن ہنز وولٹیج واتناوان؛ تصورک عالم کوتا چھہ وہراونہ یوان:

کٲر نحقے بہ چھس نہ نۆمرٲوتھ
تہۍ تہِ زانہہ وُچھزہون سہ کارِ وۅگن

مارۍمندیت ژھانڈنچ، پرزناونچ، للہ ناونچ تہ مۅلناونچ مالے، یہ ژھینہ گژھنچ دے تہ اتھ سیتۍ رل گژھنچ کل چھیہ انسانس ہر ہمیشہ سۅ بے قراری دوان ییمہ ورٲے زندگی ہند یہ دریاو راسۍ گژھہِ ہے، تہ ییمہ سیتۍ انسان ہمیشہ نوین نوین دردہ نین ہندۍ خواب وچھان چھہ۔ یہ «خواب» چھہ زندگی ہند ساروے کھۅتہ بۅڈ سِر۔ میہ کیا چھہ خوش کران، میہ کیا چھہ ویان، میہ کیا چھہ پرہ تہ میہ کیا گۆژھ، اتھ سارۍ سے چھہ چھونپ لگان ییلہ اسۍ اچھ ؤٹتھ تتھ عالمس کُن پھیران چھہِ یُس دپہ وے تہ ابوس چھہ، مگر یتھ اسۍ اصلی «اسۍ» ونان چھہِ۔ سانۍ اچھ چھیہ «سانۍ» اچھ، سانۍ ارزتھ، مگر وچھن والۍ چھہِ «اسۍ»، یہ گاش چھہِ «اسۍ»۔ یمن «خوابن ہند تعبیر» ژھانڈنہِ چھہ نیرُن اچھ مژرتھ۔ یۆتانۍ نہ تمہ تعبیرک پے لگہِ تۅتانۍ چھہِ خوابے سانۍ وسمتھ، تہ یہ وسمتھ چھیہ سہ وٲراگ سران یُس ذٲژ کنۍ صحراو ٲستھ سانین ارمانن ہند سٲلہ میدان چھہ۔ «صورت خانہ» چھہ یہ رمز یتھہ کنہ باواں:

اچھ مژرٲوتھ گوس وبالۍ
پھیران اوسس دردہ نین

«صورت خانہ» چھہ یژ پاٹھۍ یمنے خوابن ہند ٲنہ خانہ۔ اتہِ چھہ نہ کانہہ چیز «ناممکن»۔ کتابہِ ہنز زان کران چھہ امۍسے شاعر سند اردو شعر، «غیر ممکن ہے جو اسباب و علل کی رو سے / خواب میں شعر میں ممکن نظر آتا ہے میاں»۔ یِم شعر کمن کمن ہاوسن ہنز علامت چھہِ:

اۆبر ڈالُن اتھو تہ کاڈ کڈُن
بالہ تیغس کھسن تہ زونہ گندن

تتھ مکانس نہ ٲسۍ دارِ نہ بر
تتھ مکانس اندر میہ اوس اژن

پانہ کُس پژھ کری اگر ژہ ونکھ
سبز رٲژن بہ چھس وہان بعضے

ٲنہ خانہ چھہ ٲنہ خانہ۔ مگر انسانہ سندۍ دم چھہِ گٔنزرتھ، یم مۅکلن پننس وقتس پیٹھ۔ نہ روزِ خواب تہ نہ خواب وچھن وول۔ سونچکس سفرس چھہ یہ ٹیٹھہ موٚدر پزر نٲلی نال۔ «صورت خانہ» چھہ اسہِ اکھ مسلسل غزل دوان، «یتھہ تتھہ ییلہ پیوس بہ توٚت وٲتتھ»۔ گۅدنیتھ چھیہ بحرچ یہ ناگہ جۅے کمہ تانۍ کریٹھہِ مانٹک ظۅن پیدہ کران۔ پتہ چھہ خۅدکلامی ہندس مۅڈس منز سون شاعر «تمس کستاں» سندۍ خواب وچھنک پے دوان۔ یہ چھہ «یتھہ تتھہ» تمۍ سند گرہ نشہ واتاں تہ تتہِ چھیس کوفورچ بۅے یوان، یۅسہ «تمۍ» سندِ گزرنچ خبر دوان چھیہ۔ امس چھہ تہ پیوان سرُن یہ نہ امۍ ہرگز کونچھمت اوس:

کوفورچ بۅے ٲس ہوہس منز
وق جوگۍ گوٚمت اوس کار کٔرتھ

«جوگۍ» چھہ سانہ تصورکس عالمس منز بٔستھ۔ جوگۍ، یس ہنگہ تہ منگہ آنگنس منز بود گژھان تہ آلو جورا دتھ پننۍ وتھ رٹان چھہ، گژھیس تہ ژلہِ کۅچھ منز اکہ نندن ہیتھ، پژِ تہ دِیہ نند بون بییہ واپس، تہ ٲخر کار ژلہِ کُنہِ دۅہہ شوشہ نارِ منز شہہ تہ دلہ منز دبراے ہیتھ۔وق جوگۍ گوٚمت اوس کار کٔرتھ ۔۔۔؛ یہ چھہ خوابہ کین وڈون ہند سہ انجام یس خوابن ہند ٲخری تعبیر چھہ۔ اتھ مقامس کن گژھہِ ظۅن تہ یہ خیال، یہ پزر تہِ ولہِ سونچس نال:

کم پوشہ چمن؟ کِتھۍ سروہ شہلۍ؟
بلۍ پاد بچارن لوکن پھلۍ

امہ وِزِ چھہ سوُے کینہ باسان سراب، خوابہ موٚت اگر حقیقت پسند آسہِ، سہ چھہ نہ اورہ کنہ تہِ غافل آسان۔

«صورت خانہ» چھیہ غزلن تہ نظمن ہنز سوٚمبرن۔ واریاہ غزل چھہِ مسلسل (یہ چھیہ فلسفیانہ سونچچ خاصیت)، نظمہ چھیہ سارے خاص، مگر بہ کرہ صرف اکہ نظمہِ ہنز کتھ، «نذر حبہ خاتون» ۔ فارسی، اردو تہ کاشرِ کین جان جان ادیبن ہند سٔنتھ مطالعہ کرن وول شاعر ییلہ حبہ خوتونہ ونان چھہ،

رنبہ ونۍ خیال چانۍ دلس چھِم وتش دوان
یم یم غزل میہ لیکھۍ تمن گو بہانہ چون

سہ چھہ یکوٹہ پرٲنس سیتۍ، پننہ زمینہِ تہ امہ چین پُھلین سیتۍ، شاعری ہندس حسنس سیتۍ، تہ موسیقی ہندس شیہجارس سیتۍ پنن محبت ہاوان۔ تہ «سیپارہ ترہہ مرہ پریم اکہ آنے/پھیرہ نو کُنہِ گوم زیرِ زبرے/عشقن خط کٲنسہ پوٚر نہ یکبارو» ونن واجنہِ حبہ خوتونہِ پنن حال باوان،

پوٚز بوز خوابۍ وچھ میہ دۅہے کم نوینہ رنگ
پوٚز بوز خوابۍ وچھ میہ دۅہےٲنہ خانہ چون

خواب وچھن تہ رچھن والۍ امۍ زندہ دلن چھیہ اسنہ گندنہ چین گرین منز ظرافتکۍ باغ تہِ پھۅلرٲوۍمتۍ مگر خبر کیازِ چھہِ نہ تتھۍ شہکار یتھ کتابہِ منز شامل کرنہ آمتۍ ۔

«صورت خانہ» کین کینژن سِرن ہنز یہ باوتھ کٔرتھ شوبہ امی کتابہ ہندس یتھ شعرس پیٹھ کتھ اند واتناونۍ:

پھیران گہے چھہ دردہ نین بازرن گہے
اسۍ کِتھۍ چھہِ خونہ ملۍ چھہ ہیواں غم کنان چھہ خواب

زمرے:تنقید

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s