افسانہ

شینہ مہۍ (افسانہ) – محمد رمضان


محمد رمضان

میدان کہ اکہِ اندہ نمودار گژھتھ پوٚک نوجوان  الہ پلہ کلو میڑا تہ پکنک عادت نہ آسنہ کنۍ زن کھژس شانش۔ امۍ پرژھ مردیادمس «ہے ژہ کیا چھکھ گرا یپارۍ نیران تہ گرا ہپارۍ؟ کتہِ چھہ چون مکانہ؟»

مردیادمۍ ترٲو دور نظر تہ زیٹھ نٔر برونہہ کن کڈتھ دوٚپنس۔«ہُہ چھکھہ وچھان، ہُہ، دور ہُتھ اندس کُن نیتھہ ننۍ جاے، پتھرس پیٹھ ہُہ ملبہ، پھٹۍ متۍ دارِ دروازہ۔ اتۍ نے کیا اوس سہ مکانہ۔»

امہ برونہہ زِ نوجوان پرژھہِ ہے امس ہے یارہ کۅس سا خالی جاے، کس سا ملبہ، مردیادمۍ ژیون تہ کٔڈن کتھہِ پھٔٹھ۔ «ژیہ کتہِ ییی ملبہ بوزنہ۔ سہ چھکھ وۅنۍ نمت تُلتِھ۔ سرکارن تُلا کِنہ لوکو نیو، تمیک تہِ لوٚگ نہ پتاہ۔ لگہِ ہے کپارۍ؟ بہ کٍتس کالس روزہ ہا اتھ ملبس نظر دنہِ یوان روزان۔ مگر میہ چھہ ونہِ کالک بتہ یاد، سہ ملبہ چھم اچھنے تل۔ ملبے کیازِ مکانہ تہِ۔ مگر زنتہ سراب۔ اتی چھہ، اتی چھہ نہ»

نوجوانس آیہ امۍ سندس اتھ کلامس پیٹھ اسنہ ہنا تہ پانسے سیتۍ گلنوون کلہ۔ مردیادمۍ کٔڈ بییہ پننۍ نٔر نیبر کُن مگر یمہِ لٹہِ پھرنٲون پانس اندۍ اندۍ مکانن کُن۔ نٔرے یٲژ نہ، پانہ تہِ پھیور۔ «وچھ ساری گرہ چھہِ اندۍ اندۍ وارہ کارہ استادہ تہ انزہ منزہ پیوٚو یۅہے اکھ سون مکانہ۔»

اتھ جملس منز باسیوو نوجوانس کیہہ تام ٹیچھر ۔ تمۍ دژس زیر۔ «ہے ژہ چھکھ تتھہ پاٹھۍ کلامہ کران زن کٲنسہِ مکانہ وٲلتھ نمت اوسے!»

«نہ سا نہ، کٲنسہِ وول نہ۔ دپھ پانے پیوٚو ؤسۍ۔ کوٚچ مکانہ اوس ضرور، مگر تیوت تہِ اوس نہ ٲویل زِ ہنگہ تہ منگتہ پییہ ہے ؤسۍ۔ فکری توٚر نہ۔ کیہہ تام وکانہ گوس۔» امۍ پھرنٲو بییہ اکہ لٹہِ اندۍ پکھۍ مکانن کن پننۍ نٔر۔ «حالانکہ یم پرانۍ کٔچ مکانہ تہِ ٲسۍ نہ کم مضبوط آسان۔»

نوجوانن دژ اندۍ پکھۍ نظر۔ مکانہ ٲسۍ دور مگر تمہ پتہ تہِ اوس نہ اتہِ کانہہ کوٚچ مکانہ۔ سٲری ٲسۍ کنکریٹ۔ نوجوانن ووٚن منہ اندری «خبر کتھ عالمس بچور»۔

مردیادم پوٚک اکھ زہ قدم برونہہ، پتہ آو نوجوانس کُن واپس۔ «ژیہ آسیتھ بوزمت یہ چھہ بنیلۍ لد علاقہ۔ ییتہِ چھہِ کالہ پگاہ بنلۍ یوان۔»

«اچھا کر آیہ بنیلۍ؟» نوجوانن پرژھس اپز حیرانی ظاہر کٔرتھ ۔

« یوان ٲسۍ!» مردیادمۍ ووٚن پیٹھے تسنز کتھ ژٹتھ تہ تھووُن کلامہ جاری « میانہِ لۅکچارہ تہِ آیہ اکھ زہ بجہ بنیلۍ یٹہ۔ میہ چھہ یاد مکانہ یم اکھ اکس سیتۍ لبہِ سیتۍ لب ٲسۍ، تمن اوس بنیلۍ یٹو سیتۍ واٹھ ژھینان تہ دیوارو منزہ ٲس زبردست گرد نیران۔ خبر کٲتہن ؤرین ہنز گرد۔» مردیادم اوس دۅن اتھن ہندۍ اندرم پاس اکھ اکس سیتۍ رلاوان تہ دوراوان، رلاوان تہ دوراوان۔ یی کران لوٚگ اکہ اتھہ سیتۍ نوجوانس سینس ٹاس۔ نوجوان لوٚگ ٹاس لجمژِ جایہ زنتہ گرد دٕننہِ۔

مردیادم اوس امہِ نش بے خبر، کلام جاری تھٲوتھ۔« پیٹھہ ٲسۍ نادیوار تہِ میژِ ہندۍ۔ بنیل تہِ اوس رکان تہ لبہ تہِ آسہ اکھ اکس سیتۍ بییہ ملحق سپدان۔» امۍ رلٲوۍ دۅشوے اتھہ، اونگجین منز اونگجہِ ترٲوتھ، چیرہ۔ « مگر سون یہ غیرملحق مکانہ پیوٚو نہ کنہِ بنیلۍ یٹہِ سیتۍ ؤسۍ۔بلکہ دریوو یہ سارنی بنیلۍ یٹن۔»

اتھہ سیتۍ ٹاس لگنہ پتہ اوس نوجوان امس نش رژھ کھنڈ دورے روزتھ۔ غیر ملحق۔نوجوانس آو نہ کینہہ سمج زِ مردیادم اوسا امس سیتۍ کتھہ کران کنہ پانسے سیتۍ۔ خۅدکلامی! اپز دلچسپی ہٲوتھ پرژھس امۍ دوری۔ «پتھ کیا گوس ادہ، پانے پیوٚوا وسۍ؟»

« گوس کیہہ تام وکانہ تہ پیوٚو پانے ؤسۍ۔» مردیادمۍ پھرۍ لگ بگ امۍ سندی لفظ تہ اتھۍ سیتۍ رکیوو تہ دژن نوجوانس کُن نظر یُس ونہِ سینس پیٹھ اتھہ پھران اوس۔ سہ آو امس نکھہ تہ تھوون امۍ سندس پھیکس پیٹھ اتھہ تہ کلامہ جٲری۔ « یُتھنہ دپکھ ملبہ کیا چھہ پتہ ہمیشہ یتھے پاٹھۍ روزان۔ نہ چھیہ جاے خالی روزان۔ مکانہ چھہِ دوبارہ بناونہ یوان۔ بلکہ پتمہِ کھۅتہ زیادہ مضبوط۔»

یہ ؤنتھ دژ مردیادمۍ تتھۍ اندس کن نظر ییتنس تمۍ امس پنن مکانہ زیٹھ نٔر کٔرتھ ہوومت اوس۔ یہ لوٚگ اتھۍ اندس کُن تیز قدمو پکنہِ۔نوجوان پوٚک امس پتہ مگر زنتہ اکھ قدم برونہہ تہ تریہ قدم پتھ۔ یہ اوس وۅنۍ تھوٚکمت تہ مردیادمۍ سندس مکانس متعلق امۍ سنز بیہ مٲل دلچسپی تہِ ٲس سوریمژ۔

واریاہ برونہہ پٔکتھ پھیور مردیادم پتھ کُن تہ پییس نوجوانس کن نظر تہ گوس برم۔ یہ نوجوان زنتہ اوس یۅہے مردیادم پانہ پنن گرہ کُن پکان۔سونچن آ، یتھے پاٹھۍ کیا اوسس بہ بے مصرف پھیرتھ تھورتھ پنن گرہ واپس یوان۔

مردیادم تہ نوجوان ٲسۍ وۅنۍ اکھ اکس دور مگر اکۍ سے لٲنہِ منز کھڑا اکھ اکس کُن بُتھ کٔرتھ زنتہ رزِ ہندۍ زہ اند۔ یہندِ رشتچ یہ رز ٲس نہ ہُمس بوزنہ یوان تہ نہ یمس۔

«پیٹھہ زن چھیہ امس میہ سیتۍ شکل تہِ رلان۔» مردیادمس گوٚو احساس تہ ژوٚلس ہکہ نیرتھ۔ یہ اوس اتھۍ خیالس زِ کمۍ تام تھوو امس پھیکس پیٹھ اتھہ۔ سیٹھا گوٚب اتھہ۔ کنی دٕنن دتھ پھیور یہ پتھ کن۔ امس پتہ کنہِ اوس امۍ سند پرون ہمسایہ وٹھن کمجار کٔرتھ کھڑا۔ مردیادم گوٚو زن روٹہ۔ ہمساین وزنوو۔ «ہے ژہ کتھہ پاٹھۍ یور کُن؟ واریاہ کالۍ؟ ژیہ مشرٲوتھ اسۍ بالکلے!»

مردیادمس توٚگ نہ کہنی ونن۔ امس گیہ گٹھہ گوجہ۔ « کینہہ نسا، یہ۔۔۔یہ اوسم ہمس نوجوانس پنن۔۔۔ مکانہ ہاوُن۔۔۔پنن وسۍ پیومت مکانہ۔ نہ، نسا نہ جاے ہاونۍ  ییتہِ نس سون مکانہ اوس۔»

ہمساین روٚٹ یہِ نالہ متہِ تہ نوجوانن ترٲو دوری یہندس اتھ قربتس پیٹھ اسنہ ہنا تہ یمن کن تلِن تیز قدم ۔

«میہ گژھہِ معافی دنۍ تہندس زمینس پیٹھ بنوو میہ مکانہ۔» ہمسایہ اوس مردیادمس ونان۔ «سیٹھا کرییہ کوشش تہند پے پتاہ ژھارنچ، مگر تہۍ زن ٲسوہ غیبے گمتۍ۔»

مردیادمۍ ووٚن نہ امس کہنی۔

«یہ ملبہ کٍتس کالس روزِ ہے۔ ژھۅٹہ ڈیر۔ محلکۍ ساری بدمعاش، زارۍ ٲسۍ اتی جمع گژھان۔ تمہ پتہ آیہ ہونۍ جماتھا۔ نہ ٲسۍ کٲنسہ دۅہس پکنہ دوان تہ نہ راتس شۅنگنہ۔» ہمسایہ لوٚگ صفایی دنہِ۔

مردیادمۍ ووٚن نہ امس بییہ کہنی۔

«مشکلن دیوو تمن کمیٹی والین اتھہِ زہر تہ کرۍ تم دفع۔ مگر پتہ ییتہِ کُنہِ ژھوٚٹھا اوس، سہ اوس اتھۍ زمینس پیٹھ چھکنہ یوان۔ تم مچھہ تہ سۅ پھکہ گاند۔ کینہہ مہ پرژھ۔» ہمساین کٔر پھیرنہ نرِ سیتۍ نس بند زنتہ مشک اتی اوس۔

نوجوان ووت یمن نکھہ تہ گوٚو یمن لرِ تتھہ کنہِ کھڑا زنتہ یم تریشوے اکہِ تکونکۍ تریہ زٲویہ ٲسۍ۔

مردیادم ووٚتھ ہمسایس کن « یہ کیا، یہ نوجوان۔ امۍ سندی مۅکھہ آس یور۔۔۔مکانہ ہاونہِ۔»

ہمسایس زن گیہ نوجوان سندِ ینہ تھۅتھ۔ نوجوانس کن وچھنہ ورٲیی ووٚتھ سہ مردیادمس کن۔ «ہے پکھ سا اژ سا گرہ۔ زن اژکھ پننے گرہ۔ فرق چھا کینہہ۔»

مردیادم پکہِ ہے نہ کینہہ مگر تس درایہ قدم۔ پکنہ برونہہ دژ تمۍ ضرور نوجوانس کن نظر۔ ہمساین تھوو کلامہ جاری۔ «پتہ کوٚر میۍ جگرہ۔ سٲرے جاے کرنٲوم صاف تہ نیمے یہ مکانہ ہن بنٲوتھ۔»

ہمساین کوٚر امہ مکانہ کس دروازس کن اتھہ سیتۍ اشارہ۔ بییہ زہ قدم کڈتھ کھولن بر تہ یم تریشوے نفر ژایہ مکانس اندر۔ یم واتۍ مکانہ کس دوٚیمس پورس پیٹھ ۔ مردیادم گوٚو دارِ کُن تہ کھولِن امکۍ پٹۍ۔

« ییکیا ییتۍ نس اوس دوٚیمس پورس دارِ پیٹھ میون مول بہت ججیرِ لمان آسان. »

«کٲما کارا اوسس نا کینہہ؟» نوجوانن ووٚن پانسے سیتۍ۔ مردیادمۍ زن بوز ادلہ بدل۔

«پوٚرمت ہا پوٚرمت، زیادہ پوٚرمت اوس نہ، شاید اوس پونژمہِ پاس مگر تیلہِ ٲس تتھ پرنس سیٹھا برکت۔» یہ ؤنتھ بیوٹھ مردیادم دارِ پیٹھ ژاٹہ کوٚٹھ کٔرتھ۔ نوجوان بیوٹھ امس برونہہ کنہِ زنگہ وہرٲوتھ۔

کینژس کالس ژھۅپہ کِرتھ ترٲو مردیادمۍ نوجوان سنزن زیچھن زنگن کن نظر تہ ووٚنن۔«مالۍ سندِ گذرنہ پتہ ٲس تسنز یہ جاے خالی۔ کانہہ اوس نہ اتہِ نس بیہنس بہران زنتہ مالۍ سند روح اتہِ نس برابر بہت اوس۔» یہ ؤنتھ ووٚتھ سہ دار‏ِ منزہ تہ بیوٹھ رژھ کھنڈ دور تہ لوٚگ اندری اندری کیاہ تام توبہ پرنہِ۔ نوجوانن تہِ پھیُر امس کن بتھ۔ مردیادمۍ تھوو کلامہ جاری۔«میہ کٔر پننۍ جاے یمہ کمرہ دور مکانہ کہ دوٚیمہِ طرفہ دارِ پیٹھ مقررتاکہ اگر منزۍ خرافات تہِ ذہنس منز یہن مالۍ سندس روحس واتہِ ہا نہ تکلیف۔»

«کرکھ نا یہ دٲر بند! اپٲرۍ چھیہ ژھٹھ یوان۔» نوجوانن وچہ پننہ دۅشوے نرِ سینس پیٹھ۔

مردیادم ووٚتھ تھوٚد تہ ووت دارِ نش۔

«دارِ ہنز کتھ ؤژھ۔ ژہ بوزتہ یہ دٲر ٲس سانین خیالن، خوابن، وۅمیذن، توقہن ہنز دٲر آسان۔ یہے دٲر ٲس سٲنس کُنِرس، سانین غمن منز سانۍ رازدار آسان۔ » مردیادم اوس ونان۔

«تٍر تہِ آسہِ ہے اپاری یوان۔» نوجوانن ووٚن لۅتی کتھ ژٹتھ۔

« وشنیر تہِ۔ » مردیادمۍ ووٚن ژکھہِ سان۔ «اتھۍ دارِ پیٹھ ٲسۍ اسۍ اسان تہِ، اچھو اوٚش تہِ ہاران۔ امی دارِ کنۍ ٲسۍ اسۍ دنیا وچھان۔»

مردیادمۍ اوٚن اکھ دارِ پوٚٹ نصفا ؤٹتھ۔ پتہ اوٚنن بیاکھ پوٚٹ تہ تھٲون یم دۅشوے منزس اڈہ وتھۍ۔ پتھ کن نوجوانس پیٹھ نظر ترٲوتھ ووٚنن۔ «ہمساین ہنزہ دارِ آسہ اکھ اکس سیتۍ یتھے پاٹھۍ کتھہ کران۔ ازکۍ پاٹھۍ ٲسکھ نہ موٚٹۍ موٚٹۍ پردہ تراونہ یوان۔ پتہے چھہ نہ آسان ہمسایہ مکانس منز چھا کانہہ روزان تہِ کِنہ نہ۔ ہمساین ٲس اکھ اکس پیٹھ نظر گذر آسان۔»

«نظر گذر!» نوجوانن پھرۍ امۍ سندی لفظ تعجب سان۔

«آ نظر گذر، اسہ کم سِر ٲسۍ یم ژورِ پیہن تھاونۍ۔ وے تام ٲسۍ ضرورت پینہ وزِ اکھ اکس منگان۔» مردیادم آو تہ بیوٹھ پننہ جایہ واپس۔

نوجوان وو٘تھ مردیادمس کن «ہے ژہ کم کتھہ کرنہِ لو٘گکھ۔ اسۍ آیہ یور چون مکانہ وچھنہِ۔ کتہِ چھہ چون مکانہ؟»

»سون مکانہ اوس ییتۍ نے، یمی مکانہ چہ جایہ۔ «

نوجوان اوس سوچان امس بٕڈس کٲژا ہیکتھ چھیہ زِ اپارمہِ کمرہ منزہ گوٚو ٹھس۔ نوجوانن زیٹھرٲو پننۍ گردن زنتہ کتھ تام خطرس کن اوس دوان تہ ووٚتھ مردیادمس کن۔ «اپارمہِ کمرہ مںزہ گوٚو ٹھس۔ »

مردیادمۍ زن نہ بوزے تہ تھوون کلامہ جاری۔ «اچھا بہ کیا اوسس ونان؟ آ، اپارمہِ کمرہ طرفہ اوس آنگن رژھا یتھ منز وارِ ژکُلا تہِ اوس۔ اپارۍ اوس کھُلہ ڈُلہ نظارہ بوزنہ یوان۔ یہ جاے چھیہ قدرتن خوبصورتی منز گٔرتھ تہ ژٔرتھ بناومژ۔»

مردیادم اوس ونہِ ونانے زِ نوجوانن ژٔٹ امۍ سنز کتھ۔ «تتھ چھا کانہہ شک مگر اسہِ ما گوٚو ژیر؟»

«بس ییکیا نیرو۔» مردیادمۍ دژ پننہِ گرِ کن نظر۔ «یہ ہمسایہ آسہِ نا بۅنہ اسہِ کِژ چاے بناوان۔»

«گوژھے نا۔ زمین ہے کھیوٚمت چھنے۔» نوجوان ووٚتھ تھوٚد تہ گوٚو اڈ وژھہِ دارِ کن۔ امس آیہ امہِ منزۍ شینہ مہۍ بوزنہ۔ امۍ دیت دۅشونی پٹین دکہ۔ دارِ ہندِ گلہِ منزہ آیہ یکدم تٍرِ ژھٹھ اندر۔ یہ ووٚتھ مردیادمس کن۔«ہے شین ہسا لوگن۔ ینہ سا اسۍ ییتی بند گژھو!»

«شین؟ سہ کیتھ شین؟» مردیادمس تہِ لج کیاہ تام بانبر۔

یم دۅشوے وتھۍ بانبرِ ہتۍ ہیرن تہ بر کھولتھ درایہ مکانہ نیبر تہ لگۍ تیز قدمو مکانہ سیدہ میدانس کن دورنہ۔ ہمساین دژ پتۍ کنۍ برہ پیٹھہ کریکھ۔ «ہے چاے چییو نا؟ تہۍ کوٚت ژلۍ وہ؟»

«شین لوگن شین۔ اسہِ پییہ ونی واپس نیرُن، نتہ گژھو خبر کٲتہن دۅہن پیٹھ بند۔» مردیادمۍ دیتس ژلان ژلان جواب۔

«ادہ تہۍ کیا وتہِ پیٹھ چھوہ؟ یہ چھہ نا تۅہہ پننے مکانہ؟» ہمساین ووٚن زن پانسے سیتۍ۔

مردیادم تہِ اوس نوجوانس لرِ قدم تلان پانسے سیتۍ ونان۔ «یمہِ دۅہہ سون مکانہ وسۍ پیوٚو، تمہِ دۅہہ تہِ کیا ٲسۍ اسۍ یتھۍ میدانس کن یتھے پاٹھۍ ژلان۔»

بر دنہ برونہہ رود ہمسایہ یمن دور تام وچھان یوٚت تام یم شیینہ مہۍ ہوۍ میدانہ کس تتھۍ اندس کن غیب گٔے یمہ منزہ یم نمودار گمتۍ ٲسۍ۔

زمرے:افسانہ

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s