فیچر

میون نیب یا چون


تحریر: صوفی شوکت

نیب رسالہ گو ۵۳ وہُر، یعنی تنہ اوسس بہ زینے … واریاہو چیزو علاوہ چھہ امین کامل صابن کاشرس ادبس یہ تہِ اکھ تیتھ دیت یس نہ مشراونہ ہیکہِ یِتھ۔ نیب ناو بوزۍ تھے چھہ ادبک سہ منظر نامہ اچھن تل گردش کران ییتہِ خالص علمی بنیادن پیٹھ ادبچ مۅلانکون ٲس سپدان۔ تحقیککۍ اعلیٰ معیار، تاریخک اعلیٰ شعور، بہترین ادبی ذوق تھاون واجنۍ جماعت تہ خاص کرتھ بے لاگ تنقیدکۍ معیار قایم کرنک اکھ پۆز رجحان چھہ امہ رسالک وطیرہ رودمت۔ نصف صدی گیہ پتھ کُن، امۍ رسالن کیاہ دیت ادبس تتھ پیٹھ کرن تحقیق کرن والۍ تحقیق ….اسہ چھیہ بدل کتھ کرنۍ….

ادبک منصب کیاہ چھہ؟

یہ سوال چھہ میہ پریتھ ساعتہ عجیب باسان۔ سہ امہ مۅکھہ ز ادبکہ منصبک تعین چھہ نہ نیبرۍ کنۍ سپدان بلکہ ادبی روایت چھیہ پانہ مختلف دورن منز اکس تہذیبی منظرنامس منز پنن مقام متعین کران۔ لہٰذا ہیکو أسۍ ونتھ ز ادیب سند رول چھہ اکس ادبی ریوایژ منز محض امکانی آسان۔ اتھ صورتس منز ہیکو نہ فی الحال کانہہ کتھ وثوقہ سان ونتھ۔ آ، ییژ ہن ہیکو ونتھ ز ادیب سند رول چھہ پانۍ پانے تہذیب کہ بطنہ منزہ زنم نوان۔

سانہِ چھہ مسلہ یہ ز ونۍ کین چھہ نہ ییتہِ کانہہ غالب ادبی رجحان۔ لکھارین ہنز ذاتی طرزِ فکر چھیہ نہ اسہِ کُنہِ تہِ تتھس نقطس کن نوان یتھ زن أسۍ تہذیبی نقطہ نظر ونہو تہ تمیک تجزیہ کرتھ ہیکہو ونتھ ز ونۍ کین کیاہ صورتِ حال چھہ تہ سون کلہم ادب کتھ منصبس پیٹھ چھہ۔

بحیثیت قاری چھہ اکثر یہ احساس گنان ز کاشرس عصری ادبی منظرنامس پیٹھ چھہ نہ کانہہ منفرد تہ یکتا طرزِ احساس سانۍ تخلیق متعین کران۔ صرف ہیکو یوت ونتھ ز پریتھ لکھارۍ چھہ ذاتی تاثراتن زیر اثر ادب تخلیق کران یم زن سیاسی، سماجی، ثقافتی یا باطنی وٲرداتن متعلق چھہِ آسان۔ چنانچہ عمومی طور چھہ یہ باسان ز لیکھن والین ہنز اکثریت چھیہ اکۍسے نہجہ پیٹھ۔ اکے قسمچ لفظیات چھیہ اکے قسمک تجربہ ہیتھ برونٹھ پکان۔

طرزِ احساس چھہ نہ مطلب ز کنہِ نظریہس تل روزتھ لیکھن، سہ امہ مۅکھہ ز تہذیبی طرزِ احساسکۍ موٗل چھہِ نظریاتو کھوتہ کہیا سرنۍ آسان۔ یم موٗل چھہِ انسان سندس طریقہ ادراکس تام پھہلتھ آسان۔

اتھ معاملس منز ہیکن یار دوس سوال تلتھ ز سانۍ صوفی ریوایت چھیہ کم و بیش اکے لفظیات تہ تجربہ ہیتھ برونٹھ پچمژ … تمن چھہ عرض یہ ز سانۍ صوفی ریوایت چھیہ تمی تہذیبی طرزِ احساسچ بازگشت یمچ بہ کتھ چھس کران تہ ازچ لفظیات تہ تجربہ چھہِ تہذیبی پراگندگی ہند نشان۔

تہذیبی طرزِ فکرِ منز چھہ پریتھ اظہار منفرد آسان مگر توتہِ چھیہ نہ سۅ انفرادیت قدر بنان بلکہ چھہ سہ اظہار تتھ فکرِ دوام بخشان یۅسہ فکر تتھ معاشرس شناخت چھیہ بخشان۔ چنانچہ للہِ پیٹھہ احد زرگرس تام یۅسہ روایت اسہِ نش محفوظ چھیہ سۅے چھیہ سانۍ تہذیبی تہ فکری شناخت۔

اتھ تناظرس منز ییلہ أسۍ تتھ ادبی دورس کن نظر چھہِ تراوان یتھ اندر نادم، راہی، کامل زوان چھہِ سہ چھہ سہ دور یتھ منز غالباً سانہِ صوفی ریوایژ پننۍ امکانات مکمل ٲسۍ کرمتۍ تہ اکس نوِس طرزِ احساسس کژ ٲس جاے خالی سپزمژ۔ سرسری طور اگر وچھو تہ تتھ فکرِ اوس نہ سٲنس معاشرس سیتۍ کانہہ واٹھ یمہِ فکرِ ہندس اثرس تل تمہِ وقتک ادب پریتھیوو مگر اگر سنو تیلہ اوس سہ تصور بلکل تتھ تصورس سیتۍ واٹھ کھیوان یتھ منز زن انسانیتک مسلہ تمام لسانی تہ جغرافیایی سرحد ژٹان چھ۔

پنن تصورِ انسان مکمل کرنہ باپتھ ہیکہ اکھ تہذیب بییِس تہذیبس نش اثر قبول کرتھ تہ کران تہِ چھہ مگر سۅ قبولیت چھیہ نہ کُنہِ اصولہ ورٲے آسان۔ چنانچہ تمہ دورچ جدلیات یمیک ذکر میہ کۆر چھیہ صاف تہ واضح ز پننین ضرورتن تحت کرۍ تخلیقی فکرِ تم اثرات قبول تہ یس ادب برونٹھ کن آو سہ اوس شوبہ دار، مسلسل پکوُن تہ زندہ۔ یہ دور اوس سانہِ کاشرِ روایژ کژ نٔو میلہ کنۍ تہ سون ادبی سفر آسہِ ہا نوین منزلن کن قدم آوری کران اگر نہ کینہہ سیاسی، مذہبی، معاشرتی تہ تاریخی جبر واقع آسہ ہن سپدمتۍ۔ نتیجہ دراو ز معاشرس منز لۆب تمۍ منظرنامن زاین یتھ منز مختلف سطحن پیٹھ مختلف تہذیبی فکرہ متحرک روزہ۔ اتھ تصادمس منز دراو نتیجہ یہ ز تہذیب لہراونک اکھ خطرناک رجحان گۆو پیدہ یمۍ برونٹھ کن پکتھ سانۍ کلہم شخصیت بدلٲو۔ امۍ بدلاون کۆر ہنا برونٹھ کن پکتھ سون تہذیبی طرزِ احساس ختم تہ ابلاغک سہ مسلہ گۆو پیدہ یمۍ ادیبس تہ قاری یس درمیان سہ کھن دیت یس نہ أسۍ ونیک تام پُروِتھ چھہِ ہیکان۔ تخلیق کارس تہ عام انسانس درمیان یس طرز احساس سفارتچ کٲم اوس کران سہ طرز چھہ لگ بھگ ختم۔

ونۍ کین چھہ صورتحال یہ ز ادبس چھیہ پننۍ پرزنتھ ختم سپزمژ تہ پنن منصب مشتھ گومت، تہ لکھ چھہِ ادبہ نش دست کش سپدیامتۍ۔ أسۍ چھہِ پانۍ پانے ونان ز لُکن چھہ نہ ادبی ذوق … اسہِ چھیہ نہ خبرے ز أسۍ کتھہ کنۍ چھہِ امہ تہذیبی تصادمکۍ حصہ بنان تہ ادبک جواز پانے ختم کران۔

یہ سورے بحث کۆر میہ امہ مۅکھہ ز نیب رسالہ چھہ نہ فقط اکھ ناو، اکھ میگزین کینہہ بلکہ چھہ یہ واقعتاً تمہ تہذیبی طرزِ احساسک نیب دوان یس اسہ مشۍ مشۍ چھہ گومت۔ یہ رسالہ چھہ سہ تحریک یس تتھ صورتحالس پیٹھ سوال چھہ قایم کران یمیک ذکر میہ گۅڈے کۆر۔ یہ رسالہ چھہ ونہِ تہِ ادیبن آلو دوان ز تم کرن یتھ معاشرس منز پننۍ حیثیت متعین تہ کم از کم کرن پانس کیت لیکھنک جواز پیدہ۔ یہ رسالہ چھہ تخلیق کارن بار بار یاد پاوان ز ادیب چھہ تہذیبی طرزِ احساسک معاشرتی قایم مقام آسان۔

سیاست دانن، معیشت دانن ہیکو نہ ونتھ کیاز یہ چھہ ادیبے یمۍ سندس وجودس منز تم اجتماعی خواب چھہِ زندہ آسان یمن ہند تعبیر زندہ معاشرن ہندس صورتس منز اسہِ برونٹھہ کنہ مثال چھہ۔

نوٹ: نیب رسالہ چھ واحد کاشر رسالہ یس انٹرنیٹس پیٹھ ونۍ کین دستیاب چھہ۔

زمرے:فیچر, تنقید

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s