عبدالاحد آزاد

عبدالا حد آزاد نوِ طرزک شاعر


 

فردوس احمد پرے

عرش تہ لا مکان چون دیر و حرم دکان میون
نوو چھہ لدن مکان پرون از نہ پگاہ یہ کارک

عبد الا حد آزادس برونہہ ٲس کاشرِ شاعری ہنز اکھ زیٹھ روایت ییمک آغاز ژۅداہمہ صدی منز سپدمت چھہ ۔ لل دید تہ شیخ العالم ؒ اوک طرف ترٲوتھ آیہ اتھ طویل دورس دوران واریاہ گونماتھ یمو وژن تہ غزل صنف ورتٲوتھ پننۍ وۅندہ باوتھ کٔر۔ موضوعی لحاظہ ییلہ امہ دۅرچہ شاعری کُن نظر تراوان چھہِ اتہ اوس صرف عشقیہ تہ سری موضوعن للہ کھول کرنہ یوان۔ ییتہِ شاعر نسوانیت اختیار کٔرتھ تہ عاشق بنتھ پننس معشوق سندِ وصلہ خاطرہ کریشان اوس آسان۔ یہ وتھ ٲسۍ متعین کٔرتھ سٲری شاعر اختیار کران۔ کانہہ نۆو شاعر (رسول میرس ورٲے) ہیۆک نہ اتھ منز موضوعی یا ہیتی لحاظہ تیتھ کانہہ تجربہ کٔرتھ یتھ منزتس پننۍ الگ انفرادیتھ حاصل سپدہے بلکہ ٲسۍ اتھ برعکس برونہے ہموار سپزمژ وتھ رٔٹھتھ تمے گسہ آمتۍ لفظ تہ موضوع ورتاوان تہ قدامت پسندی اختیار کران۔ یم سٲری شاعر ٲسۍ انسانی زندگی سیتۍ سپدن وٲلس صورت حالس نشہِ چشم پوشی کٔرتھ پننس محبوب سندۍ گیت گیوان۔ بقول پروفیسر رحمان راہی:
’’ آزادس تہ مہجورس برونہہ ٲس یسلہ کاشر شاعری یا تہ لول نتہ اسراریتھ۔ تتھ شاعری منز اوس نہ وطنی حالات یا سماجی، سیاسی یا اقتصادی نظام بدلاونہ باپتھ کُنہِ واضح جدو جہدک پیغام۔‘‘ ؂۱
یہ کتھ تہِ چھیہ وننس لایق زِ اتھ دوران آیہ کینہہ تژھہ مثنوی یہ تہِ لیکھنہ یمن منز امہِ دورکۍ سیاسی تہ سماجی زندگی ہندۍ حقیقی حالات ٹاکارہ چھہِ۔
آزادس چھہ یہ امتیاز زِ سہ چھہ گۅڈنیک کاشر شاعر یس برصغیرس منز ترقی پسند تحریکہِ نشہ متاثر سپدتھ انسانی زندگی تہ تہندس نفسیاتس قریب آو تہ کۆرن روایتی شاعری منز ورتاونہ ینہ والیو موضوعو تہ زبانۍ نشہ انحراف۔ یتھہ پاٹھۍ کٔرۍ تمۍ کاشرِ شاعری منز موضوعی تہ زبانۍ لحاظہ کینہہ تتھۍ عناصر پیدہ یم امہ برونہہ شاعرن منز بالکل نابود چھہِ۔ بقولِ پروفیسرمجروح رشید :
’’ آزادن اکثر کلام وچھان چھہ احساس گنان زِ تمۍ سندین غزلن، وژنن تہ
نظمن منز چھہ اکہ نوینہ قسمک تخیلی فضا میلان۔ یودوے یہ کلام نوینہ
طرزک آسنہ باوجود ماہیژ  (Nature)کنۍ ہنگامی چھہ مگر یہ کتھ چھیہ
پننہِ جایہ مسلم زِ آزاد ییمہ قسمہ کین تجربن زیو اوس اننۍ یژھان تم ٲسۍ کاشر
شاعری ہندِ مروجہ اسلوب نشہِ بالکل بدون ‘‘۔؂۲
آزادس برونہہ دژ گۅڈہ مہجورن امہ نویر پسندی ہنز ژینہ ونۍ۔ یودوے تمۍ گۅڈہ رسول میرنس رومانی دامنس تھپھ کٔر مگر امہ پتہ کۆر تمۍ اکھ تیتھ انفرادی لہجہ قایم ییمہ سیتۍ تس الگ تہ منفرد شناخت میج۔ تمۍ انۍ کاشرِ زبانۍ اندر نٔوۍ نٔوۍ استعارہ، تشبیہہ تہ محاورہ ییمہ سیتۍ اکہِ طرفہ آزادنہِ خاطرہ تہِ وتھ ہموار سپز تہ دویمہ طرفہ گیٔہ کاشر زبان تہِ پرانیو ہتہ واد ؤریو پیٹھہ مٲنڈمتیو موضوعو، ترکیبو تہ الفاظو نشہِ مبّرا تہ امہ نوینہ اصطلاح سازی سیتۍ گٔیہ مالا مال۔ پننہ شاعری ہندس ابتدایی دورس منز کانسہ، بٔڈس تہ مایہ ناز شاعرس سیتۍ پان رلاون چھہ نہ کانہہ سقم ماننہ یوان بلکہ چھہ یتھ معاملہ پریتھ اکس شاعرس سیتۍ گۅڈہ گۅڈہ سپدان۔ بقولِ پروفیسر مجروح رشید:
’’ یہ صورتحال چھہ پریتھ تس شاعرس سیتۍ گۅڈہ گۅڈہ یوان یس کانسہِ بییس شاعرس
سیتۍ پان ہشراونچ کوشش کرِ تہ امہِ پتے چھہ سہ وق واتان ییلہ سہ شاعر پننۍ
انفرادیتھ تہ اسلوب اختیار چھہ ہیکان کرتھ ‘‘۔ ؂۳

عبدالاحد آزادس تہِ چھہ گۅڈہ روایتک چھہہ لوگمت یتھ متعلق پروفیسر حامدی کاشمیری ییمہ آیہ رقمطراز چھہِ:

’’ آزادن تہِ کٔر روایتی اندازس منز شاعری شروع ۔۔۔ اتھ شاعری منز چھہ سہ اکھ عاشق درینٹھۍ یوان یس ہجرکۍ صدم أندرمہ یژھہِ تہ پژھہِ رۆس محمود گامی سندِ وقتہ پیٹھہ ورتاوس آمتۍ فارسی لفظن تہ ترکیبن منز باوان چھہِ۔ مثلا
الفتک ہٲوتھ اشارہ دلقرارہ دلبرو
جود کۆرتھم جادۍ گارہ دلقرارہ دلبرو ‘‘ ؂۴

مگر امہِ پتے کٔر آزادن فطری طور پننۍ اکھ الگ وتھ اختیار ییمہ سیتۍ سہ باقی ین شاعرن نشہ بیۆن تہ بدون نیران چھہ۔ دراصل اوس آزادس وقتہ چہ تبدیلی ہند واریاہ احترام تمۍ سند مانن اوس زِ وقتس سیتۍ سیتۍ چھہ ادب تہِ بدلان روزان۔ سہ اوس ییمہ چیزک قایل زِ ’’ انسانی زندگی ہند ذہن تہ خارجی روپ چھہ بدلان روزان‘‘۔ چونکہ ادب چھہ انسانی زندگی ہند ترجمان اسلے ییلہ وقتس سیتۍ سیتۍ انسانی زندگی ہندۍ خدو خال تہ اوند پوک تبدیل گٔیہ امہ سیتۍ چھیہ ادبس منز تہِ تبدیلی یوان۔ گۆو ادب باونک وسیلہ یعنی زبانۍ ہند تغّیر چھہ لامحال بنان۔ آزاد اوس اتھۍ فکرِ پیٹھ وزِ وزِ زور دوان۔ تس اوس وۅنۍ پرانین لفظن منز خیال آرایی کرنۍ سادگی تہ سستی باسان۔

پران آزاد چھہ یم ترانہ ہیچھتھ تہ زانتھ وچھتھ زمانہ
نہ گل نہ بلبل نہ مے نہ مطرب یہ شاعرن نشہِ تہِ شاعری چھا

بقولِ پروفیسر حامدی کاشمیری:
’’ یہ کتھ چھیہ وننس لایق زِ آزادن دیت کاشرِ شاعری لہجک نویر، یہ نویر چھہ نہ وۅپر باسان تکیازِ آزاد چھہ نہ نقلہ گۆر یا وۅزمس مال خور۔ تمۍ سند نویر چھہ نوِ زمانک پیداوار۔ تہ یہ نویر چھہ روایتکۍ عناصر پانس منز شروپراوتھ پننہِ آسنک باس دوان‘‘ ۔ ؂۵

یس پرانہِ شاعری منز لول اوس باونہ یوان بقولِ آزاد چھہ نہ تتھ منز تژھ شدتھ تہ گرمی یس انسانس پننین زنگن پیٹھ کھڑا گژھنہ خاطرہ جسارت دی ہے ییمچ وقتچ اشد ضرورت ٲس۔ سہ چھہ تمن فرسودہ خیالن پیٹھ ٹسنہ کران یم برونہہ پکنہ بجایہ  انسانس پتھ چھہِ نوان۔

پرون گومت چھا نوان رنگ تہ مولہ مایہ سیتۍ
درد چمن چھا پھولان ہردچہ گگرایہ سیتۍ
تازہ کر یاونس غازِ اولت یا خضاب
انقلاب ان انقلاب انقلاب ان انقلاب
قصہ تہ افسانہ پرانۍ پنجرہ تہ زولانہ میانۍ
زہر بٔرتھ شہمار درینٹھۍ یوان نند بانۍ
پۅشہِ تھرین کیا بکار سازہ گرین ہند ٹھباب
انقلاب ان انقلاب انقلاب ان انقلاب

شاعر چھہ نہ پریتھ ساتہ پننۍ کتھ وننہ خاطرہ نوۍ نوۍ لفظ گران بلکہ چھہ سہ اکثر و بیشتر پرانین لفظن پنن تخلیقی اتھہ ڈالتھ نین معنی ین ہندس قالبس منز ترٲوتھ تتھہ پاٹھۍ مستعمل کران یتھہ تم تمۍ سندِ منشہِ مطابق خیالن ٹھوس شکل دِن۔ وۅنۍ اگرنے شاعرس یتھۍ لفظ تہِ وقتس پیٹھ ساتھ دِن تمۍ ساتہ چھیہ نہ تس نؤ زبان تھرنس چارے لگان تکیازِ پننہِ وۅندہ باوژ خاطرہ کرِ نہ کانہہ شاعر ہرگز تہِ تژھ زبان استعمال ییمہ سیتۍ تمۍ سندۍ طاقتور خیالات تہ تجربات ٲمی روزن۔ توے وۆن آزادن ؂

خیالن ہنز بلندی چھا ویپان کمزور لفظن منز
چھہِ ژۆنبمہ متۍ لال ناداناہ برانآمین پنن اندر

عبدالاحد آزادس اوس کاشرِ قومک تہ زبانۍ ہند ژک۔ تمۍ سگنٲو کاشر زبان پننہِ تخلیقی صلاحیژ سیتۍ۔ تس ٲس کشیرِ ہندس پتھ کالس پیٹھ تہِ سنۍ نظر یتھ منز بجہ بجہ ہستی پیدہ گمژہ چھیہ۔ آزاد چھہ پتھ کالس تہ پیش کالس مقابلہ کٔرتھ اکہ طرفہ تمن شخصیژن یاد کران یمو ییتھۍ زمینہِ پیٹھ زنم لٔبتھ اکھ تھۆد مقام پرومت چھہ دویمہِ طرفہ چھہ پانس اندۍ پکۍ استبدادی حالات وچھتھ احتجاج کران ۔
اولاد بڈشہس ہیو رۆچھمت چھہ ییمۍ کۅچھے منز
بۅچھہِ سیتۍ مران وتن پیٹھ تہندے عیال آسیا
کلہن غنی تہ صرفی سیراب کرۍ ییمۍ آبن
سے آب سانہِ باپت زہرِ ہلال آسیا

بقولِ ڈاکٹر محفوظہ جان :
’’آزادن اکثر کلام چھ وطنہ کس کلہم پتھ کالس اکہ نتہ بییہِ طریقہ پیش کران
تہ امہ کہ بجرک راس گژھن تہ راون بار بار تہ پھرۍ پھرۍ احساس دوان
تہ زمانہ چن تبدیلی ین سیتۍ امچ ناہمواری ژیتس پاوان ‘‘۔ ؂۶

ییتھۍ ہوۍ حالات بیان کٔرتھ چھہ آزاد سماجک عکس تہِ ہاوان تہ اتھ سیتۍ سیتۍ چھہ لسانی سطحس پیٹھ نوۍ نوۍ محاورہ گٔرتھ زبان تہِ مالا مالا کران۔

ہا بندہ ژیہ شوبی نہ غلامی تہ گدایی
سر پایہ داری فند تہ فریب چھا یہ خدایی
سون ماز وازہ وانن سالن ضیافژن کیت
معصوم خانہ مالین سانین یہ حال آسیا
تنے انسانیت ٲس کُنہِ وۅنۍ رود نہ کینہہ باقی
گۅڈنۍ ٲس وارہ گامژ خرچ پرٲنس گریٹ وارس منز

آزادس چھہ پنین ہمعصرن منز اکھ بۆڈ امتیاز یہ زِ ییتہِ تمۍ سندین ہمعصرن ہنزِ شاعری منز مقامیت لبنہ یوان چھیہ تتہِ، چھہ آزادن نعرہ کل عالمہ کین انسانی حقوقن ہندس حقس منز نار ریہہِ ہندۍ پاٹھۍ جونٹہ ماران۔ سہ اوس پریتھ ساتہ کلہم انسان سنز آزادی ژھاران۔ تمۍ کٔر نہ کُنہِ مخصوص مذہبچ یا فرقچ طرفداری، توے آو تس واریاہ لٹہِ لادین آسنک الزام تہِ دنہ۔ تسندِ لولک آلو اوس کل انسان سندِ خاطرہ اکے، چاہیے سہ ہیوند، مسلمان یا سکھ اوس۔ پریم ناتھ بزاز چھہ لیکھان:

’’ آزاد انسانیت کا علمبردار ہے اس کی راے میں انسانی زندگی کا مقصدِ
اعلیٰ صرف یہ ہے کہ انسان انسان بننا سیکھ جایے۔ وہ کسی خاص دین
دھرم یا مذہب کا قایل نہیں ہو ‘‘۔ ؂۷

تس اوس فرقہ واری تہ انسانی اقدارن ہندِ پامال گژھنک سیٹھہے افسوس ییمچ باوتھ تمۍ سندس کلامس منز جایہ جایہ میلان چھیہ۔

انسان چیوان تریشہِ کنہِ انسان سندے خون
انسانیت نو روز کُنہِ انسان کلن منز
محبت بٲگراون کیتھ کریونکھ قۅدرتن پیدا
ژیہ لوگتھ دین و ایمانس کرُن باپارہ انسانو
یم یکسانہ کہ ہالہِ پادانے
کس پنن کس چھہ بیگانے میون
یُتھ میہ نشہِ ہیوند تیتھ مسلمانے
گوش تھاو بوز افسانے میون
دیندار ژیہ چھے دین پنن چھم میہ پنن دین
ایمان خدا چون انسان مدعا میون

عبدالاحد آزادس متعلق ہیکہِ یہ اکھ سوال تہِ ؤتھتھ زِ تس کیا مجبوری پییہِ نۆو شعرہ محاورہ بناونچ ییلہ زن تس پانس برونہہ ہتہ واد وری ین ہند اکھ بۆڈ سر چشمہ میسر اوس۔ یا ونو تم کم وجوہات ٲسۍ یمو کنۍ آزادنس شاعرانہ مزاجس منز تژھ تبدیلی آیہ ییمہ سیتۍ سہ روایتس مولے پھیرتھ گۆو؟ امہ سوالک جواب چھہ یہ زِ وہمہ صدی منز یم سیاسی تہ سماجی حالات پاد سپدۍ آزاد اوس تمن پیٹھ سنجیدگی سان غور کران تہ بحثیتِ عالمی انسانیتک علمبردار باسیاو تس اتھ استبدادی صورتحالس زاین دُین اکھ شاعرانہ تہ انسانی فرض۔ فن کار سنز کٲم تہِ چھیہ یہے آسان زِ سہ کرِ پننۍ محسوسات تہ تجربات پزین تہ خالص لفظن منز تتھہ پاٹھۍ پیش یتھہ تمہِ سماجچ اکھ پٔز تصویر وۅتلہِ۔ اتھۍ پیٹھ اوس آزاد تہِ تاکید کران۔ سہ اوس تمن شاعرن پیٹھ افسوس کران یم پنن اوند پوک منسٲوتھ پننس محبوب سندس حسنس اندۍ اندۍ نژتھ آمین خیالن پنہ پنہ آسن کران۔

ہاے کنیر ضایع کۆر پرانۍ مدرۍ فلسفن
زندہ مرے مۅردہ بیٹھۍ ؤلتھ زن کفن
تس درد غزل خوانس صد حیف ہزار افسوس
یس خام خیالن پتھ آرام دلک راوے

یہ کتھ آیہ امہ برونہہ تہِ وننہ زِ آزادس ٲس یہ وتھ برصغیر چہ ترقی پسند تحریکہِ نشہِ میجمژ ییمک مدعا یی اوس زِ ادب گژھہِ انسانی زندگی ہنز لاچاری، مظلومی، بے بسی، تہ سماجی نابرابری ہنز پورہ عکاسی کرن۔ آزادس اوس پانس تہِ سماجی تفاوتھ ؤچھتھ ذہنی توس وۅتھان۔ سہ اوس پننس وطن دارس کن مخاطب سپدتھ تس غلامی ہندِ طوقِ لعنت نیبر کٔڈتھ شاہ پٲز سندۍ پاٹھۍ پرواز کرنہ خاطرہ جسارت دوان۔ ییتھۍ خیالات تہ تصورات بیان کرنہ خاطرہ پییہ آزادس یا تہ نٔو زبان گرنۍ نتہ پرانہِ نے لفظن نٔوۍ جامہ ولنۍ تکیازِ تس اوس پورہ یقین زِ شاعری ہندِ ذریعہ ہیکن لوکن ہندۍ مۅردہ دل زندہ گژھتھ تہ متحرک سپدتھ۔ پروفیسر شفیع شوق چھہ رقمطراز:
’’شاعر کو یقین ہے کہ الفاظ کا ہتھیار اور سلیقہ اس دنیا کی نجات دے سکتا
ہے۔ کیونکہ شاعری آزاد کی نظر میں براہ راست ظلم اور جبر سے دبے
لوگو ں کے دلوں تک پہنچ کر ایک اندرونی انقلاب پیدا کر سکتی ہے۔‘‘ ؂۸

ییتہِ آزادس برونہہ پمپوش، پوش پھۅلن، باغن ہرد لگن، زلفِ خم، سورگچ حور وغیرہ ہوۍ محاور تہ ترکیبہ میلان چھیہ تتہ چھہ آزاد یم مشرٲوتھ یمن کُنہِ کُنہِ جایہ نۆو معنہِ دتھ کنڈۍ تہ خار، غم تہ شادۍ، برم تہ فریب، قرآن تہ گیتا، قلاین تہ بلاین، دین و ایمان، کفرکۍ ترانہ، اوتار تہ پیغمبر، سہہ تہ شال، تقدیر غلامی، مانزِ نم، وغیرہ ہوۍ محاورہ تہ ترکیبہ تُھرتھ پنن الگ تہ منفرد اسلوب بناوان۔

دۅگنیار چھہ ییلہ مطلب پوزایہ نمازِ ہند
سوزس بہ یہ بخشایش بییہِ تورۍ لٔدتھ ڈالۍ
کینہہ پران کفرکۍ ترانہ کینہہ چھہِ دینکۍ دم دوان
چانۍ لولن رۆچھ یمو داغو نشہِ دامانہ میون
اولاد بڈشاہس ہیو رۆچھمت چھہ ییمۍ کۅچھے منز
بۅچھہِ سیتۍ مران وتن پیٹھ تہندے عیال آسیا
پرون فسانہ کفر تہ دین پیدہ ژہ کر کنیر یقین
زان زمانہ گُر تہ زین پان ژہ اتھ سوار کر

یم شعر پٔرتھ چھیہ یہ کتھ واضح گژھان زِ آزاد صابنۍ زبان چھیہ پرانہِ زبانۍ نشہِ مکمل پاٹھۍ وکھرہ تہ سہ چھہ پننہِ امہ نوینہ محاورہ تہ اصطلاح سازی ہندِ لحاظہ کاشرس ادبس منز ہمیشہ داد دیُن لایق۔

حوالہ:
۱: پروفیسر رحمان راہی، کاشر شیرازہ ( عبدالاحد آزاد نمبر)،جموں و کشمیر اکیڈیمی آف آرٹ کلچر اینڈ لنگویجز، سرینگر،۰۰۵-۲۰۰۴ ؁، ص۱۷ ۔
۲: پروفیسر مجروح رشید، عصری کاشر شاعری، بک میڈیا ڈلگیٹ، سرینگر، ۱۹۹۵ ؁  ، ص ۴۴
۳: ایضاً، ص ۳۲۔
۴:پروفیسر حامدی کاشمیری، جدید کاشر شاعری، کاشر ڈپارٹمنٹ، کشمیر یونیورسٹی، سرینگر، ۱۹۸۲ ؁ ص ۳۶۔
۵: ایضاً،ص ۴۲۔
۶: ڈاکٹر محفو ظہ جان، کاشر شیرازہ (عبدالاحد آزاد نمبر)،جموں و کشمیر اکیڈیمی آف آرٹ کلچر اینڈ لنگیجز، سرینگر، ۵-۲۰۰۴ ؁  ، ص ۲۳۹۔
۷: پریم ناتھ بزاز، شاعر انسانیت، حالی پبلشنگ ہاوس، دہلی، ۱۹۵۲ ؁  ص ۲۱۔
۸: پروفیسر شفیع شوق، اردو شیرازہ ( عبدالاحد آزاد نمبر)، جموں و کشمیر اکیڈیمی آف آرٹ کلچر اینڈ لنگویجز، سرینگر، ۲۰۰۲ ؁  ،ص ۶۸-۲۶۷۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s