تنقید

دیناناتھ نادم–اکھ نمایندہ شعری آواز


سجاد ظہور شاہ

یہ چھہ پریتھ کُنہِ زبانۍ ہندس ادبس منز وچھنہ آمت زِ پریتھ زبانۍ ہند بۆڈ شاعر بنن چھہ تیلی ممکن ییلہ تتھ زبانۍ منز تمہِ برونہہ اکہ زیٹھہِ دورچ روایت موجود آسہِ تہ تٔمس برونہہ کینہہ جان شاعر پیدہ سپدۍ متۍ آسن۔ لل دید تہ شیخ العالمس ہوۍ قداور شاعر سپدۍ کاشرس ادبس تیلی نصیب ییلہ تمن برونہہ شاعری ہندِ باپتھ وتھ ہموار سپزمژ ٲس۔ شاعر چھہ تہِ وچھان، سونچان تہ ژینان یہ نہ اکھ عام شخص وچھتھ، ژینتھ تہ سونچتھ ہیکہِ۔ پریتھ زبانۍ ہندس ادیبس تہ شاعرس چھہ تمہِ دورچین تحریکن تہ فلسفن ہند اثر پیوان، ییمہ دورک سہ پیداوار آسہِ۔ کاشرِ شاعری ہنز اگر کتھ کرو لل دیدِ پیٹھہ ازۍ کہ دورہ کِس شاعرس تام چھہِ شاعرن بیۆن بیۆن اثر رودۍ متۍ۔ دراصل چھہ سے جان شاعر یوان ماننہ یس پننہِ دورچین سماجی، سیاسی تہ اقتصادی بیتر موضوعن ہنز باوتھ کرِ۔ دنیاہچہ پریتھ کُنہِ زبانۍ ہندین ادبی صنفن خاصکر شاعری کُن نظر ترٲوتھ چھہ ننان زِ پریتھ کانہہ دور بدلنس سیتۍ چھہِ شاعری ہندۍ موضوع تہ ہیّت بدلان رودۍمتۍ۔ کاشرِ شاعری ہنز روایت تہِ چھیہ یتھے کنۍ پھانپھلیمژ۔

ترقی پسند تحریکہِ پتہ کاشرِ شاعری ہندس موضوعس تہ مزازس منز یۅسہ تبدیلی آیہ تمہِ کِس پۆت منظرس چھہ حساس شاعر دیناناتھ نادم سند نۆو تہ سرتازہ شعرہ لہجہ تہِ کارفرما۔ چناچہ نادم اوس ترقی پسند تحریکہِ ہند پیداوار تہ سہ رود امہ دورچ بدحالی تہ بد نظامی اکس حساس شاعر سندۍ پاٹھۍ وچھان تہ پننین جذبن ہنز باوتھ شاعری منز کران۔ یۆدوے نادمن ترقی پسند ترایہ چہ نظمہ تہِ لیچھہ مثالے موج کشیر، میہ چھم آش پگہچ، زون کھژ ژۆٹ ہش بیتر، مگر سہ ہیۆک نہ یمن نظمن منز سہ مقام تہ تھزر پرٲوتھ یس پتہ تمۍ ۱۹۶۰ پتہ لیچھمژن نظمن ہندِ دسۍ پروو۔ اتھ متعلق چھ حامدی کشمیری رقمطراز”

’’نادم چھہ نہ لٲگتھ ژۆپرتھ ترقی پسند۔ تمۍ ٲس سۅ دلہ اتھ نظریہس دلس منز جاے کرمژ۔ مگر یہ چھیہ حقیقت زِ اتھ نظریہس تل یمہ نظمہ نادمن لیچھمژہ چھیہ تمن منز چھیہ واریاہ فنی لحاظہ بے ڈول باسان۔ اختصارس کام ہینہ بجایہ چھہ یمن منز پھیلاو۔‘‘ (حامدی کشمیری: جدید کاشر شاعری)

نادم تہِ رود گۅڈہ گۅڈہ مہجورنۍ تہ آزادنۍ پاٹھۍ اردوہس منزے پنن قلم آزماوان مگر سیتی پیوس ظۅن زِ اردوہس منز لیکھن چھہ نہ میانہِ خاطرہ مناسب۔ سہ چھہ ۱۹۴۸ منز کاشرس منز گۅڈنیک تجربہ نۅمو شعرو سیتۍ کران۔

زگتھ زننی بھوانی ماج پننی
دمے میٹھۍ پادنے ماتا سمستے
ہلم بٔرۍ بٔرۍ چھہِ مۅکھتکۍ واوہ مالن
تھوان پھرۍ پھرۍ چھہِ یم چانین گلالن

اتھ گۅڈہ تجربہ کِس بارس منز چھہ نادم پانہ یتھہ کنۍ ونان:

’’یم شعر چھہِ تمہِ گۅڈنچہ نظمہِ منز ہ یۅسہ میہ ۱۹۴۸ منز لیچھییہ۔ اتھ چھہ سنسکرت آمیز کاشر مگر یم چھہِ کینہہ شعر۔ اتھ اوس ٲخرس پیٹھ ماتر بھگت تخلص ورتاونہ آمت۔ امہ کنۍ زِ بہ اوسس تمن دۅہن اردو شاعری کران کاشر لیکھنس مندچھان مگر میہ تۆر تمہِ وقتہ فکرِ زِ میانۍ اردو شاعری دیہ نہ کُنہِ واٹھ‘‘۔ (نادم : شہلۍ کلۍ، گۅڈہ کتھ)
کاشرس منز لیکھنس مندچھن وٲلس اہم شاعرسنزِ آوازِ تُل تیُتھ گریزیمۍ پریتھ کاشرس ادیب سند ظۅن پانس کُن پھیُر ۔ چونکہ یہ اوس سہ دور ییلہ ترقی پسندی ہند اثر سۅتن اوسن ہیۆتمت تہ اکہ نوِ دورک آغاز سپدمت اوس۔ عالمی سطحس پیٹھ اوس جدیدیتکۍ رجحانن زنم لۆبمت۔ امہ رجحانک آغاز تہِ سپد یورپس منز۔ نتیجہ دراو ز دنیاہکیو ادیبو تہ شاعرو کٔرۍ نوین موضوعن ہندۍ تجربہ تہ تمن چیزن ہنز باوتھ کرٔکھ پننہ شاعری منز یمن وہمہ صدی ہندِ تیز رفتار ساینس تہ ٹیکنولوجی سیتۍ ددارہ ووتمت اوس۔ رشتہ گے ختم، انسان بنیوو میشنری ہند غۅلام تہ ذہنی پریشانی ہند گۆو شکار انسانی قدرن ووت ددارہ۔ یہ سورے صورتحال رود شاعر وچھان تہ ژینان تہ پننہ شاعری منز یمن چیزن ہنز باوتھ کران۔ یہ صورتحال تہ روومت حسن ژیون کاشریو شاعرو تہ۔ تعلیمی دور آسنہ سببہ سپد یمن پننہ زبانۍ علاوہ باقی زبانن ہندِ ادبک تہِ مطالعہ ییمہ سیتۍ یہندس مزازس منز اہم تبدیلی آیہ ۔ امہ تبدیلی ہند ثبوت دیت دینا ناتھ نادمن تہِ۔ چونکہ أمس اوس انگریز ادبک جان مطالعہ امہ سببہ گۆو یہ اتھ نٔوس تجربس منز پورہ پاٹھۍ کامیاب تہ لیچھن گۅڈنچ علامتی نظم ’’نابد تہ ٹیٹھ وین‘‘یہ تہِ چھیہ حقیقت زِ ییلہ تہِ کاشر نوِ دورچہ نظمہِ ہنز کتھ وۅتھان چھیہ نادم سنز نابد تہ تیٹھ وین چھیہ یکدم ذہنس منز یوان۔ نظمہِ منز چھہ پریتھ رنگہ موضوعی کیو ہیتی لحاظہ نویر۔ اوتام چہ سارسے کاشرِ شاعری ژھٲنڈ دتھ چھیہ شاید یہ گۅڈنچ کاشر نظم یتھ منز جنسی جذبچ اہمیت ویژھناونہ آمژ چھیہ، یُس پزنہ پاٹھۍ کاشر شاعری ہندس موضوعس منز نویر اوس۔

نیلس پردس وژھ تھتھرایا
کلپترا ما سالس درامژ
گلدانس منز دۅن ٹورین پیٹھ
دۅن سرفن ہند آکاراہ ہیو

محمد یوسف ٹینگ چھ اتھ نظمہِ متعلق نۅمن لفظن ہند اظہار کران:
’’کاشرس ادبس منز چھیہ نہ رحمان دارنہِ شیش رنگ علاوہ امہ تھزرچ تہ نوعتچ کانہہ نظم درینٹھۍ یوان۔ بوزوے تہ شیش رنگ تہ نابد تہ ٹھٹھ ونس منز چھہ اکھ تیتھ باطنی واٹھ تہ رمزی ہشر زِ یم چھیہ اکے گۅڈکۍ زہ پیوند باسان‘‘۔ (نادم :شہلۍ کلۍ ،گۅڈہ کتھ )

نادم سنز کاٹھۍ داروازہ پیٹھہ گرہ تام نظمہِ منز چھہ جدیدیت کین رجحانن ہند عکس پورہ پاٹھۍ نمایاں۔ مجروح رشید چھہ نظمہِ متعلق ونان:

’’کاٹھۍ داروازہ پیٹھہ گرہ تام نظمہِ منز چھہ جنسک تنزرتہ مروجہ سماجس منز پھانھپلیمتہِ شعورک عکس برونہہ کُن یوان۔ فرایڈ نہِ نقطہ نظرِ کنۍ اگر نظمہِ سام ہیمو تیلہ چھیہ یہ کتھ ٹاکارہ پاٹھۍ ننان زِ نظمہِ منز وۅتلن وول معصوم شر کتھہ پاٹھۍ چھہ پننۍ احساس باوتھ پننۍ پرزنتھ ژھاران۔ نظمہِ ہند اکھ تاویل ہیکِہ یہ ٲستھ زِ شرۍ سند شبیہہ چھہ ژکہِ فرایڈ سندِ تصور اڈک(Id)علامتی اظہار تہ ماجہ ہند پیکر چھہ (Ego)ہچ علامت بنان‘‘۔(مجروح رشید:عصری کاشر شاعری)

امہ علاوہ لیچھہ نادمن جدیدیت کس اثرس تل بییہ تہِ واریاہ نظمہ مثالے حارۍثات،ذلرۍ زاج بیتر ۔ نادمن کٔرۍ امہ علاوہ تتھۍ کینہہ تجربہ یمن ہند نہ امہ برونہہ کاشرِ شاعری منز نیب نشانے اوس۔ انگریز ادبچ مشہور شعرہ صنف سانیٹ تہِ سپز کاشرس منز اہندی دٔسۍ متعارف۔ آزاد نظمہِ ہند دٔسلابہ تہِ چھہ کاشرس منز نادمے کران۔شاد رمضان چھہ اتھ متعلق لیکھان :

’’ دینا ناتھ نادم چھہ شاید گوڈنیک کاشر شاعر ییمۍ اردو آزاد نظم وچھتھ کاشرس منز آزاد نظمہِ ہند تجربہ کۆر‘‘ (شاد رمضان: اتھ ظلماتس لعل کیا چھہِ تے)
نادمن کۆر نہ صرف موضوعی لحاظہ کاشرس منز تجربہ بلکہ ہیتی اعتبار تہِ ۔ سہ گۆو یمن نوین تجربن منز بحر تہ وزن قایم تھونس منز پورہ پاٹھۍ کامیاب۔ شاد رمضان چھ اتھ متعلق ونان ز :

’’ہیتی اعتبار کرۍ دینا ناتھ نادمن نظمہِ منز مختلف تجربہ یم عروضی لحاظہ وزنچ پابندی برقرار تھوتھ نیم آزاد ٲسۍ تہ امی نیم آزاد نظمہِ ہند ارتقا چھیہ جدید دورچ آزاد نظم تہ نثری نظم۔‘‘ (شاد رمضان: اتھ ظلماتس لعل کیا چھہِ تے)

نادم رود نہ صرف نظمن منزے یوت پننین جذبن ہنز باوتھ کران بلکہ آزموو تمۍ غزل صنفہِ اندر تہ پنن قلم۔

ژیہ تھوُتھ نظر ہند مس پیالہ پننے پننین تامتھ
میہ تام نے واتہِ ہے میانس امارس تام واتن گۆس
خونن ژھٲر پانے زیٹھ وتھ مستی رچھس شوقن
ہوس تنبلیوو دپان ؤلۍ ؤلۍ خمارس تام واتن گۆس

دلس چھۅکن آم انگ کاتیاہ جگر ژٔٹتھ پھٔلۍ میہ رنگ کاتیاہ
ژہ گژھتہ لۆت لۆت قرارہ میانے بہار انتن شمار کرِہے

سونتہ سلی کتھ پوشن ژھانڈو
گامتۍ آسن سالس کُن

یمو سیتۍ چھہ پرن وٲلس یہ احساس گژھان زِ نادم چھہ نہ صرف نظمن ہندے یوت بۆڈ شاعربلکہ چھس غزل لیکھنک تہِ صلاحیت یس زن شاعر سند شعری وَل پریزناونک اکھ اہم نشانہ چھہ۔

دیناناتھ نادمس چھہ یہ امتیاز تہِ حاصل زِ سہ چھہ نعت ہش مقدس صنف ورتاوان۔حالانکہ بظاہر اوس نادم ترقی پسند آلوک ترجمان ییتہ پژھن تہ عقیدن کمے پہم اہمیت چھیہ اماپۆز امہ باوجود چھیہ یہ کتھ اہم زِ تس چھہ رحمت العالمین لقب پراون وٲلس پیغمبر حضرت محمد مصطفیﷺ سندس رحمتس تہ عظمتس پیٹھ تہِ پژھ أسمژ یمیک نتیجہ تم نعت چھہِ یم أمۍ زندہ دل شاعرن تخلیق کرۍمتۍچھہِ۔

پکان یہ ویتھ ییلہ اسہ کنۍ نَوان چھیہ سأنۍ کٔشیر
پٔزس پٔزس چھہ گژھان میل بنان چھہ میون ضمیر
سَگو امۍ میہ تہِ دل پھانپھلوو چون ضمیر
سیٹھاہ وسیع چھہ امیک سریہہ تہ مایہ ہۆت تاثیر
تہ لٲر جاہ و جلالس چھہِ سانۍ نان تہ شیر
دعا سلام الہٰی ثواب خیر قبول
کٔشیر سانہِ ریشت ٹوٹھ فخر حب رسولﷺ

دیناناتھ نادم سنزِ شاعری ہند بیاکھ پاس چھہ یہ تہِ زِ تمۍ چھیہ کینہہ مرثی تہِ لیکھۍ متۍ یمہِ سیتۍ تسندِ تاریخ اسلامک مطالعہ تہ تاجدار کربلا امام حسینؑ ہن سیتۍ والہانہ محبت کہ اظہارک ثبوت میلان چھہ۔امہ سیتۍ چھہ نادم سنز ذاتی تہ شاعرانہ شخصیت بییہ ہن رنگ ژھٹان تہ باسان زِ تس چھہ نہ تعصبک انکھ لٲگتھ اوسمت :

اتہِ چھیہ نہ گرند کاتیاہ سیتۍ پکن،اتہ چھہ نہ غم کوتاہ زیوٹھ سفر
اتھ خونس ونہ کیاہ خون ونا،ایمان چھہ پریزلان لعل گوہر
اتھ وتہِ پیٹھ پۆک شۆد سادہ جنون پزرچ وتھ ہیتھ بے وایہ حسینؑ
اتھ وتہِ وُنہِ مولا رٲچھ کٔرتھ اتھ شایہ چھہِ مۅکلن پاے حسینؑ

سجاد ظہور احمد چھہِ کشیمر یونیورسٹی ہندس کاشرس ڈپارٹمنس منز ریسرچ کران۔

زمرے:تنقید

1 reply »

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s