تنقید

زیرو برج تہ تصورِ زمان و مکاں


اکھ مختصر جایزہ

شبیر احمد گنایی

زیرو برج چھیہ امین کاملنۍ اکھ اہم نظم یۅسہ زندگی ہندین فلسفیانہ نکتن تہ تصورِ زمان و مکانس متعلق اکس اہم بحثس دس تلان چھیہ۔ شاعر چھہ زیرو برج بحیثیت اکھ علامت ورتٲوتھ اکس تِتھس سوالس تہ تصورس زاین بخشان یُس زندگی ہنزن پیچیدگی ین تہ انسان سندین یمن ازلی تہ اولین سوالن زنم دوان چھہ زِ انسان کُس چھہ، تس کۆت چھہ گژھن، تسنز حقیقت کیاہ چھیہ تہ دنیاوی موجوداتن سیتۍ کیاہ چھہ اسند تعلق؟ یمن سوالن ہند جواب زاننہ باپتھ چھہ سہ پانس اندۍ پکھۍ وجودن سٔنِتھ تہ زمان و مکاں کِس یتھ چوکاٹھس منز زندگی ہنز حقیقت زاننۍ تہ کھرہ کرنۍ یژھان۔ یمن وجودن ہنز قدر و قیمت زاننہ پتہ چھہ سہ صوفی تہ سری شاعرن ہندۍ پاٹھۍ پننہِ وجودچ بقا فنا یا وحدتس منزے لبان۔ وجودچہِ ہم آہنگی ہند یہ مبہم سوال چھہ پریتھ حساس شاعر سندۍ پاٹھۍ امین کاملس تہِ ذہنس کھۅلو تلان تہ سہ تہِ چھہ پننہِ علمی بِترِ مطابق اتھ نسبت غور و فکر کران۔ تس چھیہ پژھ تہ اوہ مۅکھہ چھہ نہ پانس اندۍ پکھۍ ماحولہ نِشہ بے دخل سپدان بلکہ چھہ حتی المقدور زندگی زونچ کوشش کران۔ زندگی خۅش تہ خۅشحال بناونہ باپتھ چھہ لولک دامن تہِ رٹان مگر تس چھیہ یمہ لولہ قدرہ تہ انسانی رشتہ تہِ زمان کِس رفتارس سیتۍ کمزور گژھان باسان، اوے چھہ پنن پتھ کال یاد پٲوِتھ ونان:

تس یارِ مشن گارس وُنکین
کینہہ آسیا میون تہِ خواب یوان
ییتہِ ہے چھہ یِوُن سونتس اندر
میوہ رۆس ورِ تامت گب نیران

یہ زمینی لول تہِ چھس وقتس نسبت ناپایدار باسان تکیازِ کاینات کِس اتھ ماہیتس سیتۍ وابستگی تہ مناسبت تھاون والۍ تم وجود تہِ چھِس برونہہ کنہِ یمن زمانک رفتار نقشن ہندۍ پاٹھۍ چھژراوان چھہ ،یمنے نقشن ہیو چھس پنن پان تہِ لبنہ یوان یتھ زندگی ہند تاپھ (زمان ومکاں) مدہ والان چھہ۔ سہ چھہ یتھ نکتس کُن تہِ اشارہ کران زِ انسانس پزِ نہ مرکبِ زمان بنُن۔ امہ سیتۍ چھیہ تسنز سۅ شناخت تہ انفرادیت مجروح سپدان یۅسہ نیابتِ الہٰی باپتھ تس ضرورت چھیہ یتھ علامہ اقبال سندین لفطن منز شعور ذات ،خودی یا خۅد شناسی تہِ ونو۔ یہ مقام پراونہ باپتھ چھس مٲدی مرکباتو نشہِ دور تہِ روزن تہ مٲدی حظ تہ لطایفن تہِ لو کرنۍ، اکہ اندہ مارۍ مۆند مٲدی دنیا تہ دویمہِ اندہ روحانی تھزر پراونچ کل ،یہ چھہ سیٹھاہے کروٹھ مرحلہ۔ توے چھہ ونان:

کُس زالہِ یہ سمسارک کُل یتھ
پریتھ لنجہِ چھُہ ژہۍ ژہۍ دۅد نیران

مگر سہ چھہ نہ بے پژھی ہند شکار، تس چھیہ یہ پژھ زِ وجود چھہ نہ ناموجود گژھان بلکہ چھہ زمان ومکانکۍ حد ژٔٹِتھ تتھ ابدی دنیاہس کُن سفر کران ییتہِ نہ زمان و مکا نک یہ قید تس محصور کٔرِتھ ہیکہِ، مگر دنیاوی شاہراہِ ہندسس راہی یس ہیکہِ زندگی ہندین یمن نقشن یہ تاپھ تہ شہل متاثر کرِٔتھ۔ وجود کین یمن نقشن ہندۍ رنگ چھتنہ پتہ تہِ چھہ نقشہ (وجود) برابر روزان۔ یُس چیٖز چھۅنان چھہ سہ گۆو ظاہری رنگ یتھ نہ وجودس نسبت کانہہ مۅلے چھیہ۔اتھ نکتس چھہِ فلسفی ییمہِ طریقہ وضاحت کران زِ انسان سند ظاہر چھہ ’عرض‘ یہ عرض (شاید مطلب ظاہری وجود، منیب)  چھہ جوہرس تابع تہ پابند۔ جوہر  ورٲے ہیکہِ نہ عرضک تصورے کرنہ یِتھ ییلہ زن جوہر قایم الذات چھہ۔ نقشہ چھہ جوہر تہ اتھ نقشس یُس رنگ رٔنگِتھ چھہ (دنیاوی زندگی) سہ چھہ عرض یُس ناپایدار چھہ۔ یمن مختلف چیٖزن ہنزِ ناپایداری سیتۍ سیتۍ چھس دنیاوی لول تہِ بے پژھ باسان۔ سہ چھہ تمہ لولچ تمنا کران یمہِ دسۍ اتھ انسانی وجودس مزید قوت تہ پرواز میلہِ۔ یہ چھہ سہ لول کانچھان یتھ نہ سلسلۂ روز و شب تہ حادثاتِ زمان و مکاں کانہہ اثر ہیکہِ کٔرِتھ۔ یہ لول چھہ اتھ انسانی وجودس سۅ عظمت بخشان ییمہِ دسۍ یہ کار کُشا تہ کار ساز بٔنِتھ پریتھ چیزس یتھ سہ تھُرِ لازوال بنٲوِتھ موت تس پیٹھ حرام کران۔ بظاہر بے زبان تہ بے زو موجودات تہِ چھہِ امس کیاہ تام گوش گزار کرُن یژھان۔ امہ باپتھ گژھن تس گوشِ شنوا تہ چشمِ بینا آسنۍ تاکہ کایناتک زرہ زرہ باویس پنن وۅندہ تہ کریس حیات کین اسرارن واقف۔ اوے چھہ مولانا رومی ونان:

گر ترا از غیب چشمِ باز شد
با تو ذراتِ جہاں ہمراز شد

تہ امین کامل تہِ چھہ ونان:

خاموش فضا بے تار وزاں
پرتھ چیز سۅرس سیتۍ سۅر ملوان
دل میون تہِ کیاہ تام گنگراوان

شاعر سند یہ تصور چھہ تتھ ذاتِ مطلقس کُن اشارہ یمۍ سندِ حمکے زمان و مکاں بنان چھہ ییتہِ نہ زیوُن تہ مرُن چھہ بلکہ چھہ پریتھ چیزس حیات ابدی عطا سپدان۔

زیرو برج ؤنِتھ چھہ شاعر انسان سندس بے انتہا آسنس کُن اشارہ کران۔ یہ بے انتہا تہ لامحدود آسن سپدِ تیلی واضح ییلہ انسان پنن وجود پرزہ نٲوِتھ امہ بے انتہایی ہند راز زانہِ ادہ بنہِ لازوال۔

یہ چھہ زیرو برج
زیرو چھہ عجایب نقطہ مہ پرژھ
اتہِ گرند وۅپدان اتہِ گرند راوان

امین کامل سند یہ تصور چھہ صاحب فکر شاعر ن م راشد سندس یتھ غور طلب نکتس کُن ظن پاوان یُس سہ لا = انسان شعرہ سومبرنہِ ہندس عنوانس متعلق اکہ سوالہ کِس جوابس منز ونان چھہ:  "میں اپنے تیسرے مجموعے کا نام لا = انسان رکھنا چاہتا ہوں، شاید آپ کو یہ نام کسی قدر الجبرایی سا معلوم ہو لیکن میری مراد یہ ہے کہ زندگی کی مساوات میں انسان ایک گمشدہ ہندسہ ہے جس کی قیمت ہمیں معلوم نہیں، اور شعر ہو یا فن گویا سب اس قیمت کو دریافت کرنے کی کوشش ہیں۔”

راشد سند یہ فکر انگیز نکتہ زاننہ پتہ چھہِ کامل نہِ نظمہِ ہندۍ معنوی انسلاکات زاننس منز مزید وسعت پیدہ سپدان تہ تسند یہ ونُن:

سہ تہِ واتہِ دۅہا ییلہ ژھایہِ ژھیون
یم رنگہ رنگہ سٲری نقش مٹن
یکسان پرگاشک نقطہ بٔنِتھ
سمسارچہِ ویتھہِ ہنگامہ بدون
پریتھ انسان بنہِ اکھ زیرو برج

چھہ ییمہِ زندگی ہندِ دۅہ راتھ کہِ تصورہ منزہ آزاد سپدنس کُن اشارہ، ییلہ پریتھ سہ انسانی وجود یُس خۅد شناسی ہند شعور پھانپھلٲوتھ پننس وجودس لازوال بناوِ تہ گژھہِ موت ہشہِ حقیقژ نِشہ ہمیشہ باپتھ بے خوف تہ آزاد۔

___
شبیر احمد گنایی چھہ بڈگام روزان۔ یمو چھہ حال حالے کشیمر یونیورسٹی ہندس کاشرس ڈپارٹمنٹس منز پی ایچ ڈی ملکمل کۆرمت۔

زیرو برج نظم پریون ییتنس:
https://aminkamil.blog/2016/07/09/امین-کامل-نظمہ/

زمرے:تنقید

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s