تنقید

گلشن مجیدن "افسانہ ": اکھ جایزہ


گلزار احمد ڈار

کشیرِ چھیہ پتہ وتہ پیٹھہ دۅلابن منز گرفتار روزمژ۔ زانہہ میول نہ لوکن سۅکھہ سانچہ روزنک موقعہ۔ یم رودۍ مختلف پریشانیہ اندرۍ اندری ژاپان۔ ادیب تہ لکھارۍ تہِ رودۍ نہ امہ نِشہ بٔچتھ۔ اختر محی الدین، امین کامل، علی محمد لون، ہری کرشن کول، بشیر اختر، گلشن مجید، فاروق مسعودی، ہردے کول بھارتی، شنکر رینہ، بیترِ افسانہ نگار رودۍ یمہ پریشانی تہ حادثات اکھ اکس سیتۍ اسان اسان علامتن تہ استعارن منز تتھہ پاٹھۍ باوان زنتہ یمن کہنے تکلیف چھنہ وچھن پیومت۔

گلشن مجید چھہ افسانہ صنفہِ منز پنن منفرد تہ معیاری اندازِ بیان ہیتھ برونہہ کُن یوان ۔سہ چھہ جدید افسانہ نگارن منز واحد افسانہ نگار یُس زیادہ علامت ورتاوان چھہ۔ بقول محفوظہ جان «گلشن مجید چھہ موجودہ دورس اندر علامتی افسانک بہترین تخلیق کار۔ اہندین افسانن اندر چھیہ سرنۍ، تہہ دار تہ داخلی مگر ورگہ باوتھ، یۅسہ اتھ رنگ بستہ تہ سرساوۍ بناونس منز اہم رول ادا چھیہ کران۔»

«افسانہ» چھہ گلشن سند سہ تخلیق یتھ منز امۍ کردار ذہنی آوریرکۍ شکار چھہِ ہاوۍ متۍ۔ یہ چھہ یمن ہندۍ دسۍ انسانی فطرت ہاونچ کوشش طنزیہ اندازس منز کران۔ ژھۅٹین جملن منز زبانۍ ہند ورتاو تمہِ اندازہ کران زِ پرن وٲلس چھہ اسن تہِ یوان تہ سونچنہ باپتھ مجبور تہِ کران ۔اتھ افسانس منز چھہ طنز تتھہ پاٹھۍ کرنہ آمت زِ سیۆد پاٹھۍ چھہ نہ فکری تران یہ چھا سیاستس پیٹھ طنز کِنہ عام معاشرس پیٹھ۔

افسانہ چھہ لال چوکس منز شروع تہِ گژھان تہ اتۍ اند تہِ واتان۔ مجہ چھہ پننہ ماجہ سیتۍ لال چوکہ منزۍ پکان۔ اورہ چھہ کس تام جلوسہ واتن وول، یمہ کِنۍ اتہِ لوکن ہنز سخ ژیلہ ژیل ٲس۔ لوکہ ہجومس منز چھہ کس تام نفرس بوٹہ کھۅر پیوان تہ سہ چھہ لوکن ہندِ دکہ دکہ سیتۍ خبر کور کُن لگان۔ اتھ بوٹہ کھۅرس کُن چھیہ مجس نظر پیوان تہ سہ چھہ ماجہ کُن آلو (اشارہ) دوان۔ مجہ تہ مجنۍ موج چھہِ پتہ اتھۍ بوٹہ کھۅرس پتہ پتہ روزان یۆت تام شام چھہ واتان مگر بوٹہ کھۅر چھہ نہ یمن توتہِ اتھس منز یوان۔ تتھ اوس یاتہ ہون نتہ خاکروب پانس سیتۍ نِوان۔

اگرچہ یہ افسانہ واریاہ برونہہ لیکھنہ آمت چھہ مگر امیک مرکزی خیال چھہ ازکۍ تم سٲری حالات، واقعات، تشدد، غریبی، لالچ، پریشانی بیترِ ہاوان، یم کُنہِ گرس، محلس، گامس یا سماجس منز سپدان چھہِ۔ یۆدوے کاشرۍ اقتصادی لحاظہ پسماندہ ٲسۍ (چھہِ)، تم چھہِ توتہ تمن جلسن تہ پروگرامن منز تہِ برابر حصہ نوان یم چاہے سیاسی ٲسۍ تن یا غیر سیاسی۔ تم چھہِ پریتھ واقعس تہ مسلس تماشہ بنٲوتھ ٹسنہ تہ ٹیپھ ژٹان تہ پنن مزہ تلان:

«مجن لۆم ماجہ لونچہ۔ ‹موجی بوٹ ہے›۔ موج ٲس خبر کتہِ۔ مجن دژ پۆت نظر تہ وچھن بوٹہ کھۅر ہونس ٲسس منز۔ ‹موجی ہون ہے›۔ چون مول پیۆو میہ سخ دروگ۔ موج ٲس پننین دۅلابن تہ لۆمنس نرِ۔ ‹موجی میہ ہے لج سخ تریش›  تمہ وۆنس نہ کہنۍ ‹اگر بہ سہ بوٹ تلہ ہا ۔۔۔› بوٹ پییا عقلہِ، ییتہ کتہِ گے نلکہ پیدہ۔ ‹ناے اگر بہ سہ بوٹ تلہ ہن› امی بوٹہ کھۅر سیتۍ والے نس۔ ژہ کُس بوٹ بوٹ چھکھ میہ  ونان ۔۔۔»

گلشنن چھہ اتھ افسانس منز کردارن علامتی رنگ دیتمت۔ مجہ تہ تمۍ سنز موج چھیہ پریتھ گرچ بے حیس، پسماندگی تہ ذہنی آوریرچ علامت۔ بوٹہ کھۅر چھہ کھۅرن ہنز حفاظتچ تہ شوب ہرراونچ علامت زاننہ یوان۔ گلشنن چھہِ یم سماجس سیتۍ تتھہ پاٹھۍ جوڈۍ متۍ زِ پرن وٲلس چھہِ یم واقعات پننسے پانس منز باسان۔ یم واقعات اتھ منز ہاونہ چھہِ آمتۍ، تم چھہِ تقریبا پریتھ تتھ گرس منز سپدان ییتہ جہالت، غریبی تہ پسماندگی آسہِ۔ یعنی مجنۍ موج چھیہ وتہِ پیٹھ بوٹہ کھۅر تلنے ونان زِ اگر مجنۍ مالۍ از تہِ بکواس لوگ یۅہے بوٹہ کھۅر برس ٲسس۔ ‹اگر از تہِ محلہ وزنوون› جملہ سیتۍ چھیہ بیاکھ کتھ ننۍ نیران زِ اتھ گرس منز چھہ دۅہے پھاٹون واد اوسمت۔ گۆو زِ یتھ گرس منز دۅہے دند وزن آسہِ، سہ چھہ ازکس تیز رفتار زمانس منز سیٹھہے وسۍ پایہ تہ ذہنی اعتبارہ پس پایہ زاننہ یوان۔

انسان ییلہ وتہِ پیٹھ کانہہ چیز یا بدل کینہہ وچھان یا لبان چھہ، تمۍ سندین خیالاتن، احساساتن تہ جذباتن چھیہ وتش لگان۔ سہ چھہ گۅڈہ اندرۍ اندرۍ خبر کیاہ کیاہ سونچان۔ حالانکہ امس چھہ آسان سہ وُنہِ حاصل کرنے یمیک یہ طمع چھہ کران۔ یہ افسانہ چھہ امہ کتھہِ ہنز تہِ دلالت کران زِ کتھہ پاٹھۍ چھیہ مجنۍ موج تہِ بوٹہ کھۅر حاصل کرنے مختلف کامین سیتۍ وابستہ کران۔

«ماجہ باسیو بوٹہ کھۅر اتھہ منزہ ژلون۔ ‹یمۍ وانگنن ہے گۅڈے سیۆد سیۆد ہایوم بہ آسہا گرہ وٲژمژ۔ مجن مول آسیم وولیومت۔ یۆہے بوٹہ کھۅر برس ٲسس اگر از تہِ محلہ وزنوون۔› تہ امہ برونہہ زِ پلسہ وول یا کانہہ ہِلہِ پننہ جایہ، مجہ ژۆل شی کٔرتھ اپور۔ بوٹہ کھۅر اوس پھٔتس پیٹھہ کنہِ۔ مجن ترٲو ماجہ کُن نظر۔ ماجہ ہوونس پھۅلونہِ ہۅنجہ اتی روز۔ پار بدلاونس کیت گۆو عبلۍ شیخ وۅستہ مگر ژیر چھہ صحیح لاگان ۔»

گلشنن چھہ افسانس منز شروع پیٹھے مزاحیہ انداز اختیار کۆرمت، یمہ سیتۍ یہ پرن خۅش تہِ چھہ کران تہ دلچسپی تہِ چھیہ برقرار روزان۔ سہ چھہ ژھۅٹین ژھۅٹین جملن منز واریاہ کینہہ ونان۔

«کاشرۍ چھہِ زندہ دل۔ تم چھہِ پریتھ مسلس ٹیپ ژٹان۔ مجنس کھوورس پھیکس پیٹھ بہت چینی فرشتن لیوکھ ‹کاشرین چھہ اجتماعی شع ورکم۔ سیاسی لحاظہ ہیکہِ یمن کانہہ تہِ بازۍ گر تماشہ مٲنرٲوتھ۔› »

یہ افسانہ چھہ واریاہ دلچسپ۔ اتھ یُس چیز دلچسپ بناوان چھہ، سہ چھہ گلشن نہِ قلمک ورتاو۔ سہ چھہ تقریبا پریتھ اقتباسس منز مزاح پیدہ کرنہ خاطرہ بیۆن بیۆن محاورہ تہ کہاوژ ورتاوان۔ مثلا «چون مول پیۆو میہ سخ درۆگ» ، «بوٹ پێیا عقلہ ییتہ کتہِ گیہ نلکہ پیدہ» ، «وۅسہ درۅس» ، «ژلہ لار»، «کاہ کاہ پل اچھہ» ، «ویچھہ تہ نچہ کریکہ»، «کھوندۍلدس چھہِ کھوندی کھوندۍ»، «سبز تہ سۅرخ نعرہ» بیترِ ۔ مختصرا ونو زِ گلشنن چھیہ افسانس منز مختصر جملن ہندِ دسۍ سماجکۍ واقعات تہ دۅہ دِشکۍ حادثات وۅتلانچ کوشش کرمژ۔ تمۍ چھہِ تم مسایل تلۍمتۍ یم ہمیشہ انسانی معاشرس درپیش رودۍ۔ اسۍ ونو یُتے زِ یہ چھہ معنی بۆرت افسانہ۔ یہ چھہ اسہ زمینی سطحس پیٹھ ہیچھناوان تہِ تہ سونچنہ باپتھ آمادہ تہِ کران۔

______
گلزار احمد ڈار چھہِ  علی گڑھ مسلم یونیورسٹی ہندس ماڈرن انڈین لنگویجز ڈپارٹمنٹس منز ریسرچ سکالر۔

زمرے:تنقید

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s