تنقید

آزادس برونہہ شاعری ہنزہ روایژ


میر طفیل محمد

عبدالاحد آزاد چھہ وہمہ صدی ہندِ گۅڈنکہِ نصفک شاعر تہ تس برونہہ چھہ کاشرِ ادبک تواریخ الہ پلہ شین صدی ین ہندس زمانس پیٹھ محیط۔ اتھ طویل وقتس منز پرتھییہِ موضوعی لحاظہ ویٹھۍ پوٹھۍ پاٹھۍ تریہ شعرہ روایژ۔ سِری شعرہ روایت، صوفی شعرہ روایت تہ ارضی لولہ شعرہ روایت۔

کاشرِ ادبہ کہ تواریخک دسلابہ چھہ سِری شعرہ روایژ سیتۍ سپدمت، یۅس ژۅداہمہ صدی منز شروع سپدتھ اتھۍ صدی منز لل دیدِ ہندِ دسۍ عروجس وٲژ۔ ژۅداہمہ صدی پتہ تہِ روز یہ روایت برونہہ پکان، مگر یہ ٲس نہ غالب روایت۔ ہیتی طور ہے وچھو اتھ مدتس دوران رودۍ واکھ، شروک، مثنوی تہ وژن نما نظمہ ہشہِ صنفہ شعرہ تجربن ہند باوژ وسیلہ۔ لل دیدِ ہنزِ شاعری منز یُس فنی تھزر چھہ تمہِ تلہ چھہ باسان زِ یہ شعرہ روایت چھیہ نہ اکہ دورک آغاز بلکہ اکہ زیٹھہِ دورک اند۔ لل دیدِ ہنزِ شاعری ہنز خصوصیت چھیہ تخیلچ کشادگی، تشبیہن تہ استعارن ہند ورتاو، جذباتن ہنز گہرایی تہ لفظہ ورتاوک مخصوص طریقہ کار۔ اتھ کلامس منز چھہِ تِم رموزِ اسرار موجود یمن ہنز وۅمید تھدِ پایہ کِس صوفی سنتس نشی ہیکہِ سپدتھ۔ ہرگاہ موضوعی اعتبارہ کاشرِ شاعری ہنز کتھ کرو ، اسۍ ہیکو وثوقہ سان ؤنتھ زِ کاشر شاعری چھیہ موضوعی اعتبارہ تریو اہم دورو منزۍ گذریمژ۔ تصوف، لول، تہ سیاست۔

حض شیخن کٔر کاشرس منز «شروک» شعرہ ذٲژ ہنز روایت متعارف۔ ہیتی لحاظہ چھیہ نہ واکھ تہ شروکِس درمیان کانہہ فرق۔ لغاتی طور ییتہِ واکھ سنسکرت لفظ واکیہ ہچ تبدیل شدہ صورت چھیہ تہ یمیک معنی ژھۆٹ مۆٹ کتھ چھہ، شروک چھہ اتھ برعکس سنسکرت لفظ شلوکچ تبدیل شدہ صورت ماننہ آمژ یمیک لغاتی معنی پاکیزہ کلام چھہ۔ شیخ العالم سندۍ موضوع چھہِ مختلف رنگکۍ۔ امہ موضوعی رنگا رنگی علاوہ ہرگاہ وچھو کلام شیخ چھہ تژھن روایژن ہند آگر یمو تس پتہ صدی وادن ہندِ خاطرہ کاشرِ شاعری ہنز ارتقایی وتھ سرہ کھرہ کٔر۔ منز کالس دوران یم شعرہ روایژ وۅتلییہِ، تمن ہند پیٹھے بانہ مول چھہِ اسۍ کلام شیخس منزے وچھان۔ مثلاً محمودگامی ین یتھ مثنوی پننہِ قلمہ سیتۍ پوچھر دیت تمہِ صنفہِ ہند اولین نمونہ چھہِ اسۍ شیخ العالمس نش وچھان۔ اتھ ضمنس منز چھیہ تسنزِ «صدوسی مسلہ» تخلیقہِ اکھ تواریخی اہمیت۔ امہِ تخلیقہِ سیتۍ چھیہ کاشرِ زبانۍ منز مذہبی مثنوی ہنزِ روایژ ہند ابتدا سپدمت۔ کاشرِ ادبچ غالب صنف چھیہ وژن یُس منز کالہ چہِ شاعری منز مروج سپد۔ مگر وژنچ روایت تہِ چھیہ شیخ العالم سندِ دسۍ قایم سپزمژ۔ «بارخدایا پاپ نوار» تہ «یُس کرِ گۅنگل سے کرِ کراو» چھیہ امہ چہ رٔژہ مثالہ۔ کاشرِ شاعری منز چھیہ مذہبی شاعری ہنز اکھ نمایاں روایت یتھ منز نعت ہِش موضوعی صنف شامل چھیہ۔ وچھو ہے تہ موضوعی صنفن ہند اولین نقش چھہِ اسہِ حضرت شیخ سنزی شاعری منز میلان۔

ییمہِ ساتہ کاشرِ شاعری ہند دادۍ معاملہ چھرا حسن اوس، شاعر ٲسۍ تتھ سراپا چونہِ جٔرِتھ کھۅنہِ للنٲوتھ تہ عاشق بٔنتھ لۅلمتہ لاے کران تہ تسنزن ژھاین تہ گراین وچھۍ وچھۍ تس پیٹھ جان فدایی کران، بامے سہ حسن ماورایی اوس یا غیر ماورایی۔ غیرماورایی حسنس پتھ جان فدایی ہند ابتدا کۆر حبہ خوتونہِ، یمہِ پننہِ شاعری منز تصورِ عشقچ اتھ معنیس منز باوتھ کٔر تہ یمس نش محبت اکھ حساس موضوع بٔنتھ جاے پراوان چھہ۔ ا مہ محبتک تعلق چھہ دنیاوی خوشی تہ جسمانی مسرتس سیتی۔ تسنزِ شاعری ہنز خصوصیت تہِ چھیہ یی زِ اتھ منز چھہِ عشق و محبتکۍ فطری جذباتھ باوتھ لبان تہ امیک اظہار تہِ چھہ شاعر سندس فوری ماحولس سیتی ہم آہنگ۔ حبہ خوتون چھیہ اکھ روایت شکن تہ روایت ساز شاعر۔ابتدایی دورچہِ شاعری منز ییتہ واکھ تہ شروک ہشہِ صنفہ مروج آسہ تتہِ بنٲو تمہِ وژن مقبول عام صنف۔ پننیو وژنو ہندِ ذریعہ کٔڈ تمۍ کاشر شاعری ماورایی دنیا منزہ نیبر تہ سۅ انِن زمان و مکان کین حدودن منز تہ بنٲون انسانی دل چہ دبرایہ ہنز باوژ وسیلہ۔ سۅ چھیہ امہ برونہم روایت پھٹرٲوتھ تہ تتھ نش انحراف کٔرتھ اکھ نٔو شعرہ روایت قایم کران۔ یم تجربہ ٲسۍ اکہِ پاسہ انسانہ سندس ذاتی تجربس نکھہ مگر بییہِ پاسہ ٲسۍ سٹیھاہ دور۔ یہ چھیہ اکھ ٹاکارہ حقیقت زِ شاعری ہیکہِ نہ انسان سندین ذاتی تجربن ہنز باوتھ کرنہ ورٲے محض کینژن صوفیانہ تصورن ہنزِ بنیاذ پیٹھ قایم تہ دایم روزِتھ۔کاشرِ شعرہ ادبہ چہِ ویتھہِ منز یکسویی پیدہ گژھنہ برونہے انۍ حبہ خوتونہِ شاعری انسانہ سندس ذاتی تجربس نکھہ تہ اکس زندہ انسان سندین جذباتن، احساسن، ارمانن تہ خواہِشن ہنزِ باوژ ہند وسیلہ بنٲون۔

امہ علاوہ لۆب اتھ دورس منز صاحب کول سندِ دسۍ ہندو عقیدتی شاعری ہنزِ روایژ تہِ زاین۔ تمۍ لیۆکھ اتھ دورس منز کرشنہ اوتار ژریت۔ تسنز یہ روایت پکنٲو تس پتہ پرکاش رام تہ کنوہمہ صدی منز پرمانندن برونہہ تہ کرشنہ رازدانن واتنٲو یہے روایت عروجس۔ خاص پاٹھۍ آیہ ہندو عقیتی شاعری لیلا فارمس منز کرنہ۔

محمود گامی ( زا سنہ 1865) سندس وقتس تام پچ کاشر شاعری امی ترا یہ۔ اۆتام اوس کشیرِ پیٹھ فارسی زبانۍ ہند راج جان پاٹھۍ قایم سپدمت۔ مغلن ہندس دورس منز اوس کشیرِ ایرانِ صغیر وننہ یوان۔ مغلو پتہ آیہ پٹھان حکومت۔ یہ دور یۆدوے سیاسی غیر یقینی ہند دور اوس اما پۆز پٹھان دربارن منز اوس کاشر گۅنماتھ فارسی زبانۍ منز ادب تخلیق کران۔ غنی تہ صرفی ہوۍ بہلہِ پایہ گۅنماتو اوس کشیرِ ہنزِ فارسی شاعری منز پنن دبدبہ قایم کۆرمت۔ فارسی بولن تہ لیکھن اوس امہ وقتہ مہذب آسنچ نشانی تکیازِ یہ ٲس حکمرانن ہنز زبان۔ فارسی زبانۍ چلے جاو لگنہ کہ برکتہ ووت اتھ دورس منز کاشرِ زبانۍ تہِ فیض۔ محمودن بۆڈ دیت چھہ زِ تمۍ کٔر کاشرِ شاعری منز مثنوی ہنز روایت متعارف۔ مثنوی چھیہ کاشرس منز پہہ صنف یۅس فارسی شاعری ہندی زیرِ اثر کاشرس منز آیہ۔

صوفی شاعرن ہندِ دسۍ آیہ وژن نگاری سیتی سیتی ہیتی رنگہ کینہہ نوۍ تجربہ تہِ کرنہ یمہِ سیتی نظم صنفہِ تہِ وۅتھہ بو لۆگ۔ نظمہِ ہند آکار یۆدوے شیخ العالم سندِ «گۅنگل نامہ» پیٹھے نظرِ گژھان چھہ، اماپۆز نظمہِ ہند ٹیکنیکی ورتاو تہ امہ چہِ پھیر ہاو خصوصیت وچھتھ آیہ کاشر روایتی نظم صوفی شاعرن ہندِ ذریعہ بارسس۔ اتھ دورس منز آیہ واریاہ نظمہ برونہہ کُن۔ مثلاً محمود گامی سنز «تمثیلِ آدم»، سۅچھہ کرال سنز «دپیومس تہ دۆپنم»، شمس فقیرن «شنیا گژھتھے» تہ احمد بٹہ وارۍ سنز «نَے» بیترِ چھیہ تم صوفی نظمہ یم موضوعی تہ ہیتی رنگہ نظمہِ ہنزِ کہوچہِ پیٹھ کامیابی سان وترِتھ ہیکان چھیہ۔ یمن نظمن ہند مقصد چھہ تمہِ حسنک عکس وۅتلاون یمیک اصل جوہر حیرتھ چھہ تہ یُس بیانہ نیبر چھہ۔ کینہہ نظمہ چھیہ تژھہ تہِ یم شاعر سندِ ذاتک فریاد بننہ بدلہ آدمۍ وجودک فریاد بنیمژہ چھیہ۔ امی ہانکلہِ ہند بیاکھ کۆر چھہ رحمان ڈار سنز نظم «شیش رنگ»۔ یہ نظم چھیہ بدس کالس تام لیکھنہ آمژن نظمن منز یمہِ موجب سرس تکیازِ امِچ ہیتژ ہند قالب چھہِ نہ اسۍ امہِ روایژ ہندس بییہ کانسہِ شاعرس نش وچھان۔ «شیش رنگ» نظم چھیہ شین بندن پیٹھ مشتمل۔ یتھ منز رحمان ڈار سِری ہجرہ وصلک کریشن اکِس بے پھروک لولہ مژِ ہندین اندیشن تہ وسوسن ہندس پیرایس منز اظہار بخشان چھہ۔ صوفی روایژ ہند بۆڈ دیت چھہ یی زِ امہِ سیتۍ سپد کاشرِ زبانۍ ہندِ شعرک محور کشادہ تہ سیتی سپد اتھ فکری اۆبیر گۆبیر تہِ عطا۔

امہ شاعری ہندِ وساطتہ شرپییہِ کاشرِ شاعری منز نوۍ نوۍ استعارہ، علامژ، تلمیح تہ تشبیہی لفظ یمہِ سیتۍ کاشرِ زبانۍ ہندس باوژ بلس توانایی عطا سپز۔ امہِ روایژ کٔڈ کاشر شاعری سیدِ سیۆد جزبل باوژ ہندِ محدود دایرہ منزہ نیبر تہ اتھ منز اۆنن تخیلی تھزر تہ ورگہ باوژ ہند رنگ۔ صوفی روایتس تحت کمہِ رنگہ سپد کاشرِ زبانۍ ہند باوژ بل مستحکم امیک اندازہ ہیکہِ امہ دورچو دۅیو صوفی نظمو سیتۍ سپدتھ۔ یمن منز چھیہ اکھ سۅچھ کرالنۍ «دپیومس تہ دۆپنم» تہ دۆیم شمس فقیرنۍ «شنیاہ گژھ تھے»۔ صوفی شاعری ہنزِ روایژ یۆدوے اکہ طرفہ کاشرِ شاعری باوژ بل تہ باوژ بِتر بخش تہ بحثیت اکھ تحریک کاشرِ ادبہ کِس منز کالس منز بارسس آیہ مگر اتھ روز پننہِ کینہہ خامیہِ تہِ ۔اتھ شاعری منز آو زیادہ پہن سازتِس پیٹھ زور دِنہ۔

کنوہمہ صدی یۆدوے صوفی شاعری ہند سۅنہرۍ دور رودمت چھہ اماپۆز یہ روایت روز وہمہِ صدی تام تہِ قایم تہ ازتام تہِ چھیہ سانہِ شاعری منز کانہہ نتہ کانہہ صوفی آواز کنن گژھان۔ ہیت لحاظہ چھہِ امہِ دورک سانہِ زبانۍ بیاکھ اکھ گُلہِ میوٹھ تہ یہ چھہ غزل۔ غزل تہِ چھیہ کاشرس فارسی زبانۍ ہند دیت۔ امکۍ تجربہ یۆدوے امہ دورکیو محمود گامی سندیو زِٹھیو یا کانسیو ہم کالو مثلاً فاخر تہ سعداللہ بیترِ شاعرو کرۍ مگر امیک سہرہ تہِ چھہ محمود سے گنڈنہ آمت۔ یہ چھہ روسل میرے یمۍ کاشر غزل عروجس پیٹھ واتنوو تہ اتھ منز غزلہ چہِ تمام خصوصیژ پیدہ کرِ۔ میر سندس غزلس منز چھہ تغزل تہِ تہ تخیل تہِ۔ موسقیت، رمزیت تہ ابہام ہشہِ خصوصیژ چھیہ تمۍ سندین غزلن ہند خاصہ۔ تمۍ سنزِ پیکر تراشی چھہ پنن اکھ خاص رومانی انداز۔

رسول میرنۍ عظمت چھیہ یتھ کتھہِ منز زِ تمۍ کٔڈ کاشرِ شاعری تصوف کیو چھمبو چھاریو تہ روایتی اظہار کیو شٹھنیارو منزہ نیبر تہ یہ لٲجِن رومان کین شاداب مرگن کُن۔ سہ اوس خالص حسنک شاعر۔ کاشرِ شعرہ روایژ ہند پاس کٔرتھ چھہ سہ بعضے زنانہِ ہند کردار اختیار کٔرتھ باوتھ کران تہ بعضے روایژ نِش انحراف کٔرتھ مرد سنزِ زبانۍ عشقک اظہار کران۔

غلام احد مہجورن دیت ہیتی طور ترین صنفن سگ۔ روایتی وژن، وژن نما نظمہ تہ غزل۔ اتھ سیتۍ سیتۍ انِن اتھ منز موضوعی کشادگی تہِ۔ ژھۆٹۍ پاٹھۍ ونو زِ مہجورن اہم رول تہ روایت سازی چھیہ یتھ کتھہِ منز زِ تمۍ انۍ کاشر شاعری ازانۍ تہ اسمانۍ دنیا پیٹھہ بۅن وٲلتھ تہ اتھ منز وۅپدٲون پننہِ میژِ ہنز خۅشبو۔ دۆیم چھہ یہ تہِ پۆز زِ اگرچہ وہمہِ صدی تام چہ شاعری منز موضوعی تبدیلیہ تہِ آیہ مگر موضوع اوس صرف عشق تہ اتھ چھہِ کاشرۍ شاعر مختلف رنگن منز پننہِ پننہِ آیہ پیش کران۔ کینہہ سری رنگس منز، کینہہ صوفی رنگس منز تہ کینہہ مجازی رنگس منز۔ یہ کتھ چھیہ عیاں زِ وہمہِ صدی تامک کاشر شعرہ ادب اوس ساینس تہ تیکنیکی وۅسہِ درۅسہِ نِش دور۔ دۆیِم یہ تہِ زِ یہ اوس درس دنیاہس منز وِزِ وِزِ وۅتھن واجنین سماجی تہ سیاسی تحریکن نشہِ لۆب۔ تریم یہ اوس پننہِ اندۍ پکھۍ چہ زندگی تہ دنیا نشہِ تہِ اکثر اچھ ؤٹتھ تہ پننس بیرونس پِس پشت ترٲوتھ اندرون کِس آسمانس پیٹھے پننین تخیلی پکھن پیٹھ پرواز کرناوان۔ یہ سورے فکر و فن گۆو داخلیتک پردہ ژٔٹتھ تمہ ساتہ خارجیتس کُن گامزن یمہِ ساتہ شاعر تخیلی تہ تصوری دنیا منزہ نیبر نیرتھ تہ پننہِ اندۍ پکھۍ چہ زندگی ہنزن سنگلاخ حقیقژن سیتۍ قدم رلٲوتھ اتھ ژرژنہِ لگۍ۔ پرانین مروجہ روایژن خلاف گوڈنیک یہ بدلاو سپد وہمہِ صدی دوران۔ یتھ منز نہ صرف مہجورن اکھ اہم رول ادا کور بلکہ چھ اتھ منز عبدالاحد آزاد سنزن تخلیقی کاوشن ہند دیت تہِ شامل۔

_______
میر طفیل محمد چھہِ علی گڑھ مسلم یونیورسٹی منز ماڈرن انڈین لنگویجز ڈپارٹمنٹس منز ریسرچ سکالر۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s