تنقید

وجودیت: اکھ مختصر تعارف


عادل محی الدین

وجودیت چھہ جدید فلسفک اکھ انگ یمیک خمیر زوال کِس عہدس منز تیار سپد۔ تاہم چھہِ امکۍ بیٲلۍ پھٔلۍ پاسکل (Pascal) تہ سینٹ آگسٹاینس (St. Augestine) نشہِ تہِ میلان۔ سیتی چھہ امیک سلسلہ نسب دویمین تمام فلسفیانہ نظریہن تہ نہجن ہندۍ پٲٹھۍ سقراطس سیتۍ رلان۔ وۅں گۆو کینہہ دانشور تہ مفکر چھہِ 700 قبل مسیح روزن وٲلس أکس چینی مفکر لاوزے (Lao-Tsze) یُس فلسفہ وجودیتک گۅڈنیک علمبردار مانان ییمۍ "TAO” یا "Nature” فطرت اصطلاح ویژھناونس دوران امہِ نقطہ نظریہک اظہار کۆرمت اوس۔ امہِ علاوہ چھہِ ہندوستان کِس ویدانت فلسفس منز تہِ وجودی فلسفکۍ عنصر نظرِ گژھان۔ تاہم کۆر جدید دورس منز کُنوہمہِ صدی ۂندس ٲخرس منز سورین کرکے کارڈن (Soren Kierkegaard) امہِ نظریہک ضابطہ بند آغاز۔ ڈنمارک کس أمس فلسفی یس چھہِ جدید دورک سقراط تہِ وننہ آمت۔ کرکے گارڈ اوس فکری طور معتقد مذہبی وجودی (Religious existentialist) تہ أمۍ سندِ نظریہکۍ اثرات سپدۍ عالمگیر ثابت۔ تاہم چھہِ أمۍ سندین معتقدن زہ دٔرۍ۔ یمن منز چھہِ ہیڈگر تہ سارتر مقلدن ہندس تتھ دٔرس یا گروپس منز شامل یہنز فکر ملحدانہ چھیہ۔ تہ دویمس دٔرس منز چھہِ کارل جیسپر (Karl Jaspers) تہ جبرل مارسل (Gabriel Marcel) غیر مقلدانہ نظریہکۍ قایل۔ یہ چھیہ الگ کتھ زِ وجودی فلسفین ہند تعداد چھہ واریاہ زیادہ البتہ چھہِ کرکے گارڈ، ہیڈگر، سارتر، جسپر تہ مارسل فلسفہ وجودیتکۍ اہم ستون ماننہ یوان۔ وۅں گۆو یمن فلسفین متعلق چھیہ اہم کتھ یہ زِ یم ہیکۍ نہ وجودیت کِس کُنہِ منظم یا مرتب نظریہس منز ہم آہنگی پیدہ کٔرتھ۔ تاہم چھہ منفی رجحانن تہ میلانن منز اشتراک تہ ہم آہنگی۔ یم سٲری مفکر چھہِ مثبت خیالن تہ نظریہن مقابل کینژن مخصوص، طے شدہ تہ غالب فلسفیانہ مذہبی، اخلاقی، سمٲجی تہ ادبی رجحانن تہ میلانن خلاف یکت کٔرتھ۔ ڈاکٹر ابرار رحمانی چھہ لیکھان:

’’وجودیت کا بنیادی عنصر موت کا شدید احساس ہے۔ کرکے گارڈ کے دور میں یہ مذہبی گروہوں، طبقوں، پارٹیوں اور ریاستوں کے دایرہ اختیار اور دباؤ کے بڑھ جانے کے سبب سے فرد کی آزادی فکرو عمل کو زبردست خطرہ لاحق ہونے کے نتیجے میں پیدا ہوا اور ساتر اور کامیوں کے عہد میں دو عالمی جنگوں کے نتیجے میں جس کی نمو ہوئی‘‘۔

وجودیت کہ تعلقہ چھہ چونکہ مختلف مفکرن ہنزہ بیۆن بیۆن رایہ یمو مطابق انسانی وجود کہ اتفاقی تہ حادثاتی اہمیژ (co-incidence & accidental) ہندۍ تصورن وجودی فلسفس بنیاد فراہم کٔر۔ تہ اتھ سیتۍ سیتۍ کۆر دۅیو عالمی جنگو پتہ پید سپدن وٲلۍ انتشارن، پریشانی، کشمکشن، بیزاری، کُنرن تہ جرمکۍ احساسن اتھ اکھ نۆو زُو زیتہ عطا۔ یہ نظریہ چھہ زندگی ہنزِ بے معنویژ واقف تہ یہ چھہ بھرپور اندازس منز تہ امکان کین حدن تام زندگی بامعنہ تہ معیاری بناونہ چہ کوششہ منز آوُر، یہ فلسفہ چھہ فرد پسند تکیازِ امیک زور چھہ یتھ کتھہِ پیٹھ زِ وجود (existance) چھیہ بے نظیر تہ بے مثال۔ اتھ چھہ نہ ہرگز یہ مطلب زِ وجودی فلسفہ چھہ خۅد غرضی ہند ٲینہ دار بلکہ چھہ یہ نظریہ انسان دوست تہ انسانی ہمدردی ہندِ جذبہ منز وُزان۔ کرکے گاڈ چھہ ڈیکاٹ سندس I think therefore I am برعکس I am therefore I think اصولک قایل۔ کرکے گارڈ سندۍ کِنۍ چھہ انسان سندین تمام مسلن تہ مصیبتن، کربن تہ انتشارن ہند بنیادی وجہ اجتماعیت تہ یتھہ پٲٹھۍ چھێن انفرادیژ (Individualism) ہند تصور پننہِ فکری استدلالہ سیتۍ لافانی بناونچ کامیاب کوشش کٔرمژ۔ سہ چھہ انسانیژ ہندِ بقا باپت ذاتک صفاتس سیتۍ ہم آہنگ آسنک پاسدار۔ امی چھہ ونان:

’’جو بے خدا ہے وہ لاشخص ہے اور جس کی کوئی شخصیت نہیں، وہ محروم ہے‘‘۔

کرکے گارڈ چھہ جدید انسان سنز ذاتس سیتۍ وابستگی، داخلیت پسندی، خارجی دنیا نشہِ تٔمۍ سنز بے زاری، فراریت تہ دۅیمین مریضانہ سونچن خارجی ماحولس سیتۍ دۅستانہ رٔویہ پانناونہ کِس رٔویس سماج دشمن مانان ییلہ زن اتھ برعکس نوێن تہ جدید شاعرن تہ ادیبن ہندێن فن پارن منز یمے ذہنی رویہ غالب تہِ تہ حاوی تہِ چھہِ، یتێن چھہ یہ ونُن تہِ ضروری زِ وجودیت چھیہ نہ خارجی وۅپرٲز (external alienation) مانان بلکہ چھہ سارتر سندۍ کِنۍ انسان سند پرتھ کانہہ فیصلہ ذاتی مفاد بجایہ کلہم انسانی مفادک تہ انسانی پاپرجایی ہند ضامن آسان۔ یتھے پٲٹھۍ چھیہ نہ وجودیت فرد سنز خۅد آگہی تامے محدود بلکہ چھہِ امِکۍ حد عالمِ انسانیت کێن خدشن، خطرن، مسایلن تام پھٔہلتھ۔ سیتی چھیہ وجودیت یتھ مفروضس تہِ نکاران زِ انسان چھہ خارجی دنیا نشہِ بے زار تہ لاپرواہ سپدِتھ بے حرکت تہ ساکن۔ وجودی فلسفہ چھہ نہ تجریدی فلسفہ تہ ساینسی خیالاتن یا نقطہ نظریہ کِنۍ وجودچہ تفسیر تہ تشریح پیٹھ پژھ تھاونہ کِس فلسفس ناو بلکہ موضوعیت تہ داخلیتس پیٹھ یقین کرنک فلسفہ۔ اتہِ چھیہ معروضی تہ تجریدی طریقہ کارس برعکس داخلی بصیرت تہ بصارتس ترجیح۔ یم زندگی ہندێن مسلن سیتۍ مقابلہ کرنہ خاطرہ انسانس حوصلہ چھہِ بخشان۔ دۅیمێن لفظن منز ونو زِ وجودیت چھہ سہ فلسفیانہ رجحان یُس جوہرس (essence) مقابلہ وجودس (existence) تہ بالخصوص انسانی وجودس تہ امہ کِس انفرادی، بے مثال تہ لاثانی آسنس تسلیم کران چھہ۔ مطلب یہ زِ وجود چھہ جوہرس برونہہ تہ چھہ انفرادی تہ لاثانی ٲنہ یتھ پانس خیال تہ تصور کێو حدو نێبر کڈنچ صلاحیت چھیہ۔ وجودیتس ہیکہِ نہ ساینس تہ فلسفہ تجزیہ کٔرتھ تہ نہ ہیکہِ اتھ تام یمن بنیٲذن پیٹھ واتنیار ٲسِتھ۔ یہ چھہ انسانی آزادی ہند علمبردار تہ یہے آزادی چھیہ أمس پننین عملن (Actions) ہندس نتیٖجس منز وۅتلن والێن غمن تہ عذابن، کشمکش، جدوجہد تہ أندرۍ جنگہ باپت پانس ذمہ دار ٹھہراونس پیٹھ آمادہ کران تہ کاینات چہِ بے ثباتی تہ بے معنویژ منز تہِ پنُن پان ارتقا پذیر آسنک جرات تہ ہمت بخشان سیتۍ چھس وجود چہ حقیقژ تہ مٲہیژ ہند احساس تہِ دوان۔

وجودیت سپز زوال کِس عہدس منز مقبول ییلہ مذہب رسم تہ رواجس تام محدوس سپد تہ ییلہ قدرن ہنزِ زوال پذیری ہندس پس منظرس منز انسان انتشارک شکار سپد۔ نتیجہ دراو یہ زِ انسانس سپد بدس عذابس تہ کربس تہ مرنہ کس خوفس سیتۍ تصادم ییمہ کِنۍ سہ وجودی بحرانن (existential crises) منز ہێنہ آو۔ اتھ آولنِس منز ہێنہ ینہ سببہ باسیو انسانس زِ تصوراتی مابعد الطبیعاتی، مذہب یا مذہبی روٲیژ یا فلسفیانہ باریک بیٖنی چھیہ نہ أمۍ سندێن مسلن ہند تدورک کرنس منز مددگار ثابت سپدنکۍ اہل۔ ییمہِ کِنۍ سہ زندگی تہ وجودچہ معنویت ژھارنہ باپت جدوجہد کران چھہ۔ یوجین آنسکو چھہ اتھ صورتحالس کُن اشارہ کران لیکھان:

"Neither Theology nor philosophy has enabled me to understand why I exist nor they have convinced me that we are obliged to make anything of our existence or that we should or can give it a meaning.”

پزر چھہ یہ زِ وجودیت چھہ موجودہ تہذیبی بحران تہ انتشارک نتیجہ۔ مغربس منز کۆر کرکے گارڈن (کُنوہمہِ صدی منز) یہ خطرہ شدتہ سان محسوس زِ تٔمۍ سند ملک ڈنمارک چھہ بییہِ اکہِ لٹہِ وقتکہ تسلسل کہِ رشتہ نشہِ دوریومت یتھ تٔمۍ تمہِ دورک عالمگیر تہذیبی المیہ ناو دیت، تکیازِ امہِ دورچ سیاسی زندگی ٲس ہوس، خۅدغرضی مریضانہ انانیت، انتہا پسندی تہ دویمێن منفی روین ہنز گڈھ بنے مژ۔ یۅہے ذہنی انتشار بنیوو چھیکرس دۅن عالمی جنگن ہند باعث، یمو معصوم انسانن ہند قتلِ عام کٔرتھ انسان سنزن حیوانی خصلژن ہند بھرپور اظہار کۆر تہ انسانی زندگی وۆتھ مۅل ییمہِ کِنۍ انسان کیمین کریٖلن نزدیک ووت۔ دہشت تہ خوف و حرصکۍ ماحولن کۆر پریتھ طرفہ عدمِ تحفظ پیدہ۔ عدمِ تحفظک خطرہ آو نہ صرف مقامی بلکہ عالمی سۅتھرس پیٹھ محسوس کرنہ، شاعرن، ادیٖبن، فلسفی ین، معتقدن، غیر معتقدن، غرض پریتھ أکس سرن وٲلس تہ سونچن وٲلس جدید انسانس سپد امہِ نفسیاتی خلاہک (vacuum) ادراک۔ نتیجہ دراو یہ زِ انسانی وجود (Existence) بنیوو انسانی سونچک تہ فکرِ ہند مرکزی نکتہ۔

_______
عادل محی الدین چھہِ کشمیر یونیورسٹی ہندس کاشرس ڈپارٹمنٹس منز ریسرچ سکالر

1 reply »

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s