انٹرویو

کلہم زبان چھیہ نہ ادبہ سیتۍ زندہ روزان۔ یہ چھہ اکھ مغالتہ: منیب الرحمن


منیب الرحمنس سیتۍ اکھ فیس بک کتھ باتھ (بشکریہ: انٹرویو فورم)

شاہد دلنوی: پننہ تخلیقی زندگی ہندس بارس منز ونی تو تفصیلہ سان؟
منیب الرحمن: میانہِ تخلیقی زندگی ہند بیول پیوو فتح کدل کس سانہِ مکانہ کس دیوان منز ، میانین سکول دوہن منزے ییلہ شاعر ، ادیب کامل صابس نش یوان ٲسۍ۔ میانۍ کٲم ٲس یم حضرات ہیور دیوان خانس تام کھالنۍ تہ پتہ چاے یا تریش چاونۍ۔ اتہِ بیہنس اوسس نہ بہران۔ اتھۍ ینس گژھنس دوران تہ دروازس پیٹھ چپنہ فیتُن لاگنس کڈنس منز عمدا وقت لاگنس دوران یہ کیژھا یہنز کتھ باتھ بوزان اوسس، سے بنیوو میانہ ادبی دلچسپی ہند بیول۔تمہ پتہ یم کتابہ گرِ دستیاب آسہ تم تہِ آیہ بکار۔ سکول سے دوران ہیژ میہ شاعری کرنۍ۔ سکول میگزین کور میہ تیار 1973 منز۔ کاشرۍ پاٹھۍ تہِ دراس سیکشن۔ امہ برونہہ اوس نہ اتھ کاشر سیکشن درامت۔ کالجس اژان اژان ٲس میہ اکھ موٹ کاپی پننہ شاعری سیتۍ برمژ، یۅس میہ تتہِ پننس اردو ٹیچر محمد حیاتس صٲبس پرنہ خاطرہ دژ، تمی کٔر نہ وایس، میہ تہِ منجمس نہ زانہہ۔ کالج میگزینس تہِ کرۍ میہ تریشونے زبانن ترین ورین دوران سیکشن ایڈٹ۔ کالچ کین دوہن رود واریاہن نوجوان ادیبن سیتۍ ووتھن بیہن، ریڈیو، ٹیلی وجن، اکیڈمی ین گژھن، کافی ہاوس۔ امی ساری ماحولن اونس بہ ادبس کن۔ امہ علاوہ کامل صابنۍ پننۍ پیشین گویی یۅس تمو پریتھ اولادس متعلق کرمژ چھیہ (یا ونو سانۍ خصوصیات یم تمو بیان کرۍ متۍ چھہ):
منیب ہے کانہہ “گیون لہرا” چھہ سۅمبراں
دپاں زن چھیکھ بہ لۅلہِ منز لولہ ناوتھ

شہناز رشید: اردو ادبہ کہ پتہ کیاز ژھۅکیہ کاشرِ ادبچ ترقی پسند تحریک، زیوان زیوانے۔ ییلہ زن ییتکۍ سماجی تہ سیاسی حالات اتھ تحریکہ فکر عطا کرنہ خاطرہ موزون ٲسۍ؟
منیب الرحمن: ترقی پسندی ٲس پورہ دنیاہس منز، یورپس منز تہِ، مگر کینژنے جاین بننیہ یہ اکھ تحریک۔ ہندوستانس منز آیہ یہ سیاسی طور بکار۔ آزادی خاطرہ لوکھ بیدار کرنس منز۔ تحریک بٔنتھ روز یہ اتہِ 20 یا 25 وری، تمہ پتہ رود صرف سوچ یُس تمن شاعرن تہ ادیبن ہنزِ زندگی ہند حصہ بنیومت اوس تہ اکثر ترقی پسند رودۍ تا حیات اتھ سوچس تل لیکھان۔ امہ تحریکہ سیتۍ میول ارود ادبس نقصان کھوتہ زیادہ فایدہ۔ جدیدیو دوپ نقصان ووت، حالانکہ تہِ چھہ نہ صحیح۔ کشیرِ منز تہِ دتۍ امۍ تحریکہ 10 یا 20 وری تہ کاشر ادب زندہ کرنس منز چھہ امیک اکھ بوڈ رول۔ ییتہِ تہِ ٲسۍ حالات سیاسی طور تمہ ساعتہ امہ تحریکہ خاطرہ سازگار، مگر یۅس سیاسی تبدیلی اسہِ جلدے آیہ، تمہ سیتۍ مۅکلیہ تحریک تہِ۔ حالانکہ کینہہ ادیب یمن سماجی برابری تہ انصاف کس پہلووس سیتۍ واریاہس حدس تام ذہنی برابری ٲس، تم رودۍ ترقی پسند سوچ پانس سیتۍ پکناوان، جدید بٔنتھ تہِ۔ کامل چھن اسۍ جدید مانان مگر تہندس ادبس منز چھہ سماجی پہلو غالب۔

علی شیدا: توہہِ چھا باسان زِ کشیرِ منز أسِتھ ہیکہِ ہیو توہۍ کٲشرِ زبٲنۍ ہنز زیادہ خدمت کٔرتھ…؟
منیب الرحمن: کشیرِ منز ٲستھ ہیکہ ہا نہ شاید نیب کڈتھ یا اگر کڈتھ ہیکہ ہا تیلہ ہیکہ ہا بہتر پاٹھۍ دوستن نش واتنٲوتھ۔ رسالہ کڈنکۍ ژھرٹھ ٲسۍ میہ ہمیشہ۔ سکول تہ کالج میگزینن منز دلچسپی ننہ پتہ، رودس بہ سرینگر ٹایمز، آفتاب تہ آیئنہ اخبارن مختصر پاٹھۍ ادبی سیکشن ایڈٹ کران۔ ارود رسالہ “لا” کوڈ کالج کین دوہنے۔ رفیق رازس سیتۍ رٔلتھ کوڈ کاشر رسالہ “قاف” تہِ۔ مگر اکھ کتھ ونہ زبانۍ خدمت کرنہ بدلہ آسہِ ہے میہ پانس خدمت کرمژ۔ میہ آسہ ہن اکھ زہ شعری مجموعہ چھاپ کرۍ متۍ۔

مظفر عازم: عربو ییلہ عروض تہ بحور مقرر کرۍ، تمن ما آسہ ہن موسیقی ہنزہ، تہ عرب لہجہ چہ روایژ نظرِ تل یم تمن سیتۍ خاص آسہن۔ فارسی تہ اردو والیو کٔر کم کاسہ تبدیلی تتھ، کٲشرس منز عروض ورتاونس ما چھہ پرانہ شاعری امہ آیہ وارہ سننچ ضرورت؟
منیب الرحمن: فارسی عروض یِنہ برونہہ چھہ، کاشریو شاعرو ہیجلۍ وزن ورتوومت۔ یہ ہیجلۍ عروض اوس وژنس سیتۍ نتھۍ گومت، لہذا رود یہ تتھۍ تام محدود۔ غزل ینس سیتۍ آو فارسی عروض، مگر شاعرن ٲس ہیجلۍ عروضچ ہٲل، لہذا رود تمیک اثر تہ برقرار۔ چونکہ فارسی عروضکۍ واریاہ وزن چھِہ بنیادی طور ہیجلۍ وزنے، لہذا اوس تمن یہ عروض تہِ نزدیکھے باسان۔ دویم کتھ چھیہ یہ زِ یمو شاعرو اون فارسی پیٹھہ یہ عروض، یتھہ پاٹھۍ فارسی یس منز یہ عروض ورتاونہ یوان اوس، سہ چھہ تمہ ورتاورہ نش مختلف یُس ارودس منز رایج چھہ۔ اسۍ چھہ پننین کاشرین شاعرن ہندس عروضی ورتاوس اردو عروض کہ ورتاوہ چہ نظرِ وچھان۔ اسۍ چھہِ نہ فارسی عروض کہ تمہ ورتاوہ نش واقف یُس فارسی یس منز رایج اوس۔ کاشریو شاعرو ونۍ لو لو غزل یم بالکل ہیجلۍ وزنہ مطابق وننہ چھہِ آمتۍ۔ سانین شاعرن ہند کلام اگر اردو عروض مطابق پھٹان تہِ چھہ، غیر موزون چھہ نہ، تکیاز سہ چھہ اکہ عروض مطابق پھٹتھ تہِ بییہ عروض مطابق موزون۔ فارسی عروض چہ کینہہ لیہہ چھیہ نہ سانہِ خاطرہ موزون، زبردستی یا کرتب بازی ہاونۍ گیہ الگ کتھ، مگر زبانۍ ہندس مزازس سیتۍ تہِ گژھہِ نا واٹھ کھیون۔ تہنز کتھ چھیہ صحیح نوِ سرہ چھہ سوچ کرُن، مگر سہ سوچ نہ یس راہی صابن پننہِ کتابہِ منز کورمت چھہ۔ خلیلس چھیہ نہ نکتہ چینی کرنۍ ضروری۔ پنن مذہب صحیح ماننہ خاطرہ چھیہ نہ بیۍ سندس مذہبس زچہ ژٹنچ ضرورت۔ تہنزِ کتابہ اون اتھ مسلس کھر۔ ِ

علی شیدا: راہی کامل نادم یا عازم سندِ شعری دورہ پتہ کۅس بدلونۍ نہج چھیہ توہہِ نظرِ گژھان کٲشرِ شٲعری منز….؟
منیب الرحمن: کانہہ بدلونۍ نہج چھیہ نہ میہ نظرِ گژھان۔ کینہہ آوازہ چھیہ متاثر کن یمن منز رفیق راز، گلشن مجید تہ شفیع شوق شامل چھہِ۔ شہناز تہِ چھہ اکھ آواز یۅس شاعری پننس ماحولس سیتۍ واٹھ دنچ کوشش کران چھیہ۔ یہ ہیوک نہ گلشن یا شوق کٔرتھ۔ راز سنز اولین شاعری ٲس اتھ طرفس کن پکان مگر سہ آو جلدے اردو کس اثرس تل۔

نثار اعظم: توہہ کوروہ کینہہ کال برونہہ اعلان ز نیب ییہ نہ مزید چھاپنہ….بند کرنکۍ وجوہات ؟
منیب الرحمن: نیب بند کرنکۍ وجہ چھہِ واریاہ۔ آوریر ہیوتن زیادہ گژھن۔ دویم یہ زِ بتھہِ پکناونس چھہ نہ کانہہ انتظام۔ کژتام نفر چھہِ یم دلچسپی ہاوان چھہِ، تہندِ خاطرہ ہیکون آنلاین شایع کٔرتھ۔ نیب بحیثیت رسالہ گژھہِ بند، مگر بحیثیت تحریک روزِ جاری۔ بہ چھس فی الحال کامل صابنین کتابن پیٹھ کٲم کران۔ وقت چھہ نہ میلان۔ تمہ پتہ چھم خیال کاشر شاعری انٹرنیٹس پیٹھ دستیاب کرنۍ۔ منزۍ منزۍ اگر کانہہ شمارہ نیبک تہِ دراو تہ جان۔

نثار اعظم: ٹوٹکہ ٹوٹکہ زندگی تحت یم واقعات کامل صابن قلمبند کرمتۍ چھہِ، تم جمع کٔرتھ کرۍ وا تُہۍ کامل صابن آٹو بیا گرافی چھاپ ؟
منیب الرحمن: ٹوٹکہ ٹوٹکہ زندگی چھیہ نہ آٹو بیاگرافی بلکہ کینہہ یاداشت ہتھ زہ ہتھ صفحہ۔ سۅ کتاب تہِ چھپاون جلدے۔

علی شیدا: شوق..فہیم..گلشن مجید..م ح ظفر..راز .. بیترہ منزمہ دورکۍ شٲعر کتھ حدس تام ہیکۍ پننۍ ادبی چھاپ تراونس منز کامیاب روزتھ؟
منیب الرحمن: فہیم سند کارنامہ چھہ “واد”۔ منفی سوچک ٲستھ تہِ کور امۍ رسالن اکھ ادبی ماحول بیدار۔ ظفر، گلشن ہیکۍ نہ پننۍ صلاحیت پورہ پاٹھۍ کارس لٲگتھ۔ شوق رود واریاہس حدس تام کامیاب۔ راز چھہ کنے شاعر یمۍ پننۍ پورہ صلاحیت کامہ لٲج تہ ساورے کھوتہ زیادہ کامیاب رود۔ امہ دورچہ ادبی کوششہ روزہ چھکرتھ۔ یوت تام نہ اکھ شاعر ژورِ پانژِ وہرۍ پنن کلام یا افسانہ سۅمبرن پیش کرِ، تمۍ سندِ ادبک جایزہ ہیون یا تمیک اندازہ کرن چھہ مشکل۔ اتھ دورس منز چھپییہ نہ کانہہ خاص کتاب یۅس کانسہِ ہنزِ کامیابی برونہہ کن انہِ ہے۔

علی شیدا: کٲشر شاعری کتیتھ چھیہ ازکل؟ توہۍ چھوا مطمئن؟اگر نہ، کیازِ؟
منیب الرحمن: ییژ شاعری میہ تام وٲژ تمہِ تلہ چھہ ننان مایوسی ہنز کتھ چھیہ نہ کینہہ۔ بہ چھس مطمین زِ کاروان چھہ برونہہ کن پکان۔ البتہ چھیہ میہ زیادہ پہن زود گویی تہ برژر چہ کوششہ نظرِ گژھان تم گژھن کم گژھنہِ۔ اکھ علاقہ یور کن زیادہ توجہ دُین چھہ، سہ گوو نظم۔ اسہِ پزن نظمہ وننہ۔ غزل چھہ بنا بنایا۔ نظم تہِ تژھ یتھ narrative ونو۔ یہ گژھہِ نہ غزلکۍ پاٹھۍ discursive آسنۍ تکیازِ سانین شاعرن چھہ پنن سوچ قایم کٔرتھ تتھ ترقی دنۍ ہیوچھن۔ اسۍ چھہِ ژورمہ مصرعہ پتے ژھۅکان۔ اسۍ چھہِ نہ پننس سوچس زیادہ تکلیف دوان۔ امی چھہِ نہ لوکھ افسانہ تہِ وونۍ لیکھان۔ اگر لیوکھکھ، سہ تہِ اکھ مختصر چاٹھ یا کتھ یتھ منز نہ کانہہ characterization پییہ کرنۍ ، کانہہ پلاٹ پییہ بناون، مکالمس پیٹھ پییہ نہ کانہہ کٲم کرنۍ۔ ناول نہ لیکھنک تہِ چھہ یۅہے وجہ۔ یہ کتھ چھیہ نہ زِ اسہِ کیا چھہِ نہ پرن والۍ ۔ اسہِ کر ٲسۍ پرن والۍ۔ اسۍ چھہ 1950 پیٹھہ اکھ اکۍ سندی خاطرہ لیکھان بلکہ میہ باسان تنہ پیٹھہ گوو پرن والین منز ہریر مگر لیکھن والین ہند شوق تہ خاص کر محنت ژھۅ کیہ۔

شاہد دلنوی: نثر کیو نظمہِ کہ حوالہ یُس ادب از کل تخلیق سپدان چُھہ، زبان زِندہ تھاونک چھا تتھ اندر دم خم ؟
منیب الرحمن: کلہم زبان چھیہ نہ ادبہ سیتۍ زندہ روزان۔ یہ چھہ اکھ مغالتہ۔ خبر کاشرۍ ما آسن دپان کانہہ فکر چھیہ نہ اسہِ چھہِ ادیب زبان برونہہ پکناوان۔ ادب چھہ زبانۍ ہند اکھ مخصوص ورتاو تہ ادیب چھہِ بے شک زبانۍ ہندس اتھ ورتاوس برونہہ پکناوان۔ مگر اگر زبانۍ ہند عام ورتاو (یُس زبانۍ ہندِ بقا خاطرہ زیادہ اہم چھہ) برونہہ پکہِ نہ، یہ خاص ورتاو تہِ ژھۅکہِ پانے۔ سنسکرت زبان ژھۅکیہ تمہِ ساعتہ ییلہ امیک ادب انتہایی تھزرس پیٹھ اوس، ارودس تہِ گژھہِ یی۔

علی شیدا: جدید شٲعری تہ عوامس درمیان یُس اکھ دوریر پیدہ چھہ گومت سُہ کم کرُن چھا ضروری؟اگر چھہ تیلہ کیا زن پزِ کرُن؟
منیب الرحمن: جدید شاعری تہ عوامس ما آسہِ ژھین لوگمت، مگر شاعری تہ عوامس چھہ نہ کشیرِ منز ونہِ کانہہ ژھین۔ مہجور اوس عوامس منز مقبول، نادم اوس عوامس منز مقبول، کامل اوس عوامس منز مقبول، عازم صاب تہِ چھہِ عوامس منز مقبول، رفیق راز چھہ عوامس منز مقبول، شہناز چھہ عوامس منز مقبول۔ البتہ سپزہ کاشرس شعبس منز انگریزن ہنزِ دیکھا دیکھی منز کاشرِ شاعری ہنز سطح ہرراونہ خاطرہ “علمی شاعری” ہنزہ کوششہ کرنہ، یعنی شاعری ہنگہ تہ منگہ مشکل بناونک سنز کرنہ تاکہ سہ شعبہ بنہِ ہے شاعری ہند مۅقدم۔

شاہد دلنوی: یتھ تیز رفتار ٹیکنالوجی ہندس دورس منز ییلہ زن پرتھ کانہہ شخص دویمِس پیٹھ سبقت نِنچ کوشش کران چُھہ تہ ییتہ روز مرہ زندگی ہندۍ انسانس ہتہ بدۍ چیلینج درپیش چھہ، چھا کاشرِ زبانۍ ہندس دامنس تھپھ کٔرتھ زندہ روزن ممکن؟
منیب الرحمن: زبان چھیہ ترسیل۔ یوت تام یہ بکار ییہ توت تام روزِ، یمہ ساعتہ یا بکار ییہِ نہ پانے مرِ۔ یوت تام یہ مرِ توت تام تہ بروس لول، توت تام تہ کروس قدر۔ یمہ خیالہ ما ژھنون ترٲوتھ زِ ٲخرس چھہ امس مرُن۔

خالد منظور: کشیرِ منز چھہِ اکۍ سے لفظس مختلف علاقن منز مختلف تلفظ۔ امہ سیتۍ تہِ چھہ شعرک وزن کنہِ وزِ متاثر گژھان۔ یہ صورت حال کتھہ کنۍ گژھہِ ختم؟
منیب الرحمن: سیٹھا جان سوال۔ یہ فیصلہ چھہ کرُن زِ تلفظ چھا اہم کنہ وزن چھہ اہم۔ میانہِ خیالہ گژھہِ لفظ پننہِ تلفظ حسابہ ورتاون۔ تاہم ونہ بہ اکھ کتھ زِ پریتھ زبانۍ چھیہ اکھ صورت سۅ آسان یتھ تمہِ زبانۍ ہنز ادبی صورت ونو۔ عام طور چھہ سنجیدہ ادب تتھۍ صورتس منز لیکھنہ یوان، مگر علاقایی رنگہ تہِ ہیکو زبان لیکھتھ ۔

نذیر آزاد: کاشرِ زبانۍ ترقی دنہ خاطرہ چھیہ سانہِ واریاہ تنظیمہ سرگرم۔ یہنزہ کوششہ سپزہ واریاہس حدس تام کامیاب تہِ۔ تۅہہ چھا باسان زِ اتھ روران گیہ تخلیقی تہ تنقیدی سرگرمی پس پشت؟
منیب الرحمن: تنظیمہ آسہِ 1940 تہ 1950 ہس دوران تہِ تہ تمہ ساعتہ تہِ ٲس سیاست سرس۔ تنظیمہ گیہ جان کتھ مگر ادبی تنظیم چھیہ نہ ادبس کانہہ سۅچھ کران۔ یہ چھہ اکھ الگ شوق، زیادہ تر نوجوانن ہند شوق، لہذا کرۍ تن تم پپن شوق پورہ، اسہِ کیا، وۅنۍ گوو یم چھہِ ادب لیکھنہ بجایہ پننۍ انرجی میٹنگن کن لاگان۔ امہ سیتۍ واتہِ یہنزِ ادبی زندگی نقصان۔ یمن تنظمین ہند فایدہ روزِ تیلہ ییلہ یم عوامی سطحس پیٹھ کاشرِ ادبہ بجایہ کاشرِ زبانۍ ہنزِ خواندگی کن توجہ کرن۔ تمن میٹنگن منز گژھن نہ مشاعرہ آسنۍ۔ اسۍ چھہِ یم زہ چیز رل کران۔ امی چھیہ نہ عوامس منز زبانۍ ہنز دلچسپی ہررٲوتھ ہیکان۔

شاہد دلنوی: سون تشخص کِتھہ کنی روزہ قایم تہ عوامس اندر کاشریتک شعور بیدار کرنہ خاطرہ کیا چُھہ ادیبن ہند رول ؟
منیب الرحمن: سون تشخص خص اگر تی چھس ونان
پھیرن زٹ کانگر کہالت تٲے تٲے
سانہِ تشخصکۍ یم پانژوے چیز چھہِ قایم، فکر چھیہ نہ کینہہ۔ زندگی گژھہِ نارمل پاٹھۍ گزارنۍ، یم جان اثرات آسن تم گژھن قبول کرنۍ۔ باقی یم کٲشریت تہ کاشریتک شعور وغیرہ چھیہ سیاسی نعرہ بازی۔ یم شوبن سیاست کارن، بییہ ٹینگ صابس ہوس نفرس۔ ادیبن گژھہِ صرف امیک احساس آسن، اتھ اصلاح کرُن، یہ شعور بیدار کرُن چھیہ نہ ادیبن ہنز کٲم۔ یہ چھیہ سیاست دانن تہ مفاد پرستن ہنز کٲم۔

نثار اعظم: کاشرِ شاعری ہندِ مستقبلہ کہ حوالہ چھہِ اکثر نقاد، تبصرہ نگار منفی خدشن ہندۍ شکار۔توہہ کیا چُھہ باسان کاشر شاعری چھا دوہ کھوتہ دوہ زوالچ شکار سپدان؟ توہہ کتھ حدس تام چھیہ یک رنگی ، تہ رپِٹِشن کاشرِ شاعری ہندِ زوالکۍ وجہ باسان۔ میہ ہوِین نوین تہ کم تجربہ کار شاعرن کیاہ چُھ تُہُند مشورہ ؟ شہناز رشید صاب، رفیق رازصاب تہ یمہ دورکین باقی کامیاب کاشرین شاعرن ہند آسنہ باوجود کیاز چھ نقاد مایوسی ہند شکار ؟ غالب راے چھیہ زِ کاشرس ادبی منظر نامس سام ہینہ پتہ چُھ یہ باس لگان زِ یتہ چھھیہ تنقید بُتھۍ وُچِھتھ کرنہ یوان ،مصلحتن چھیہ کام ہینہ یوان، اگر تی، تہ تیلہ کیاہ سدباب چُھہ، اتھ مسلس؟
منیب الرحمن: تہنز کتھ چھیہ صحیح، کاشر نقاد چھہ مصلحت، دشمنی تہ دوستی مدنظر تنقید لیکھان۔ باقی زبانن منز تہِ مگر اسہِ چھیہ یہ ٹرینڈ بنیمژ۔ یُس نام نہاد نقاد کاملس پیٹھ لیکھان چھہ، سہ دپان راہی یس پیٹھ لیکھہ نہ کینہہ، یُس نقاد چھہ، سہ چھہ شاعر تہِ۔ تمس چھہ پنن تہِ claim۔ راہی صابن لیوکھ غزل سیمنارس منز مضمون کاشرِ غزلکۍ پڑاو، تتھ منز گژھہِ وچھن کیا سیاست چھین ورتاومژ۔ کتھہ پاٹھۍ چھِن غزلکۍ شاعر تقسیم کرۍ متۍ۔ مظفر عازم صاب واتۍ امریکہ، لہذا دوپکھ امۍ سند ناو ہینہ سیتۍ ییہ نہ کانہہ فایدہ۔ غزلہ کس پڑاوس منز چھہ شاد رمضان سند تام ناو ہینہ آمت، عازم صابن چھہ نہ کنہِ جایہ ناو۔ حالانکہ غزل لیکھن والین شاعرن ہند چھہ نہ تیوت بوڈ تعداد۔ یُس مسلہ کاشرس ادبس ونکین چھہ، تتھ پیٹھ چھہ نہ کانہہ لیکھان۔ سون ادیب (شاعر، افسانہ نگار) چھہ نہ محنت کران۔ امہ خاطرہ چھہ ضروری زِ کاشرین شاعرن تہ افسانہ نگارن دیہ اکاڈمی ترجمچ کٲم، ادب ترجمہ کرنک یُس محنتہ سان لیکھنہ آسہِ آمت۔ یمچ محنت ترجمس منز نظرِ ییہ تہ سانین ادیبن تہِ پریرت کرِ۔ کمۍ تام پرژھ میہ سوالس منز اکاڈمی ہند رول کیا چھہ، میہ گوو جواب دین مشتھ۔ میہ باسان اکاڈمی یوت تام نہ اکھ دور اندیش سیکریٹری نصیب سپدِِ توت تام تمیک آسن نہ آسن چھیہ ہشی کتھا۔ نتہ چھیہ یہ بس نوکری تہ افسری تام مۅژان بییہ نہ کینہہ۔

رود سوال تکرارک repetition ۔ غزلس منز چھیہ تکرارچ واریاہ گنجایش، امہ فارمچ نوعیتے چھیہ یژھے۔ قافیہ کنۍ، امہ فارمہ ہندیو مخصوص تجربو (مضمونو) کنۍ چھہ تکرار اتھ منز یوان۔ تمہ علاوہ چھہ پریتھ شاعر پننین کینژن بنیادی تہ مرکزی استعارن تہ علامتن یا پسندیدہ لفظن ہند تہِ مکرر استعمال کران۔ یم سٲری چیز تہ امہ پتہ اکۍ سے وقتس منز اک قسمہ کین حالاتن منز زندہ آسنہ کنۍ تہِ ہیکہِ تکرار پیدہ گژھتھ، مگر شاعر سنز کوشش گژھہِ روزنۍ سہ کرِ اتھ تکرارس منز تہِ کانہہ نویر یا کانہہ خاص پہلو پیدہ۔ نظم ہندس فارمس منز چھہ تکرار چ کمے پہن گنجایش۔ تکرار سیتۍ چھہ نہ شاعری زوال یوان بلکہ چھیہ شاعری اکھ بند تلاو بنان۔ میون مشورہ چھہ غزل آسہ یا نظم شاعرن پزن نوۍ صورت حال، نوۍ معنی دریافت کرنچ کوشش کرنۍ۔ شعر ؤنتھ رد کرنک عمل چھہ ضروری۔ یہ چھہ نہ ضروری یُس تہِ شعر وٹھن پیٹھ کھوت، سہ کیا آسہِ رژھرُن لایق۔ پننس کلامس گژھہِ بے دردی سان تنقیدی جایزہ ہیون تہ رد کرنک عملس گژھہِ نہ کھوژن۔

نذیر آزاد: نثری نطمہِ متعلق کیا چھیہ تہنز راے؟
منیب الرحمن: نثری نطم ییلہ لیکھنہ ییہ اتی کرو تتھ پیٹھ کتھ۔ کُس چھہ لیکھان؟

شاہد دلنوی: تہۍ آسیُوہ گۅڈہ گوڈہ مِزاحیہ شاعری کران – از تہِ چھیہ تہندس کلامس منز امہ چہ پروہ تہ پرنگہ نظرِ گژھان- قریباً ووہ پٔنژہ وری برونہہ پور میہ کاشرس شیرازس منز تہند اکھ غزل – اکھ شعر کرہ پیش
قد چُھس تہ وانگنس سومب
یڈ چھس تہ آنگنس سومب
وغیرہ وغیرہ
منیب الرحمن: یوت تام نہ میہ نش کینہہ لیکھن کیت آسہِ مزاحیہ لیکھن چھہ میہ بہتر باسان بلکہ چھس بہ باقی شاعرن تہِ یۅہے درس دوان۔ گوڈے لیوکھمت دوبارہ لیکھنہ کھوتہ چھہ بہتر مشق جاری تھاونہ خاطرہ مزاحیہ لیکھن۔ مزاح چھہ زندگی ہند اکھ اہم جز۔ کامل صابن ٲس اکھ سۅمبرن ترتیب دژمژ، “اسن ترایہ” تتھ منز اوس تیتھ مزاحیہ ادب شامل یُس سنجیدہ ادبس سیتۍ تھاون لایق اوس۔ میہ چھیہ کینہہ سنجیدہ نظمہ تہِ لیچھمژہ یم نیبس منز چھپیہ، مگر میون نظم لیکھنک انداز چھہ ہنا مختلف۔ نیبس منز شامل میانہِ نظمہ مثلہ شعر، تریہ یار، نظم در نظم، گُر تہ کل تہ ُگُر، شام ، مشقہِ ہند خالی اند، اکھ نظم پانژھ خیال، بیترِ چھیہ سنجیدہ نظمہ۔ غزل سنجیدہ پاٹھۍ لیکھنس چھیم نہ اتھ وتھ یوان۔

میر مسرور: واریاہ کالہ پیٹھہ چھہ میانس ذہنس منز یہ سوال کھٹکان زِ کاشرس ادبس منز چھا ونیس تام تیتھ کانہہ فن پارہ (نظم کیو نثر) لیکھنہ آمت یُس دنیا کس بہلہ پایہ ادبس منز تحریر چھہ سپدمت یا اسۍ ہیکوا پننہ ادبک کانہہ نمونہ دنیا کین عظیم فن پارن لرِ لور تھٲوتھ، مثلا شیکسپیر سند ہیملٹ، کنگ لیر یا سفوکلیس سند اوڈیپس یا شاعری منز ملٹن ننۍ شاعری، ورڈسورتھ سنز شاعری یا افسانس منز چیخوف سندۍ عظیم افسانہ؟

منیب الرحمن: میر مسروو سند سوال آو ژیرۍ پہن۔ چونکہ یہ چھہ اہم سوال، اتھ جواب دین چھہ ضروری، مگر امہ کس جوابس منز دمہ بہ بنمین کتھن پیٹھ غور کرنچ دعوت:
یمن زبانن ہنز کتھ تۅہہ کرمژ چھیہ تمن منز چھیہ زبان پرنچ تہ پرناونچ تہ سیاسی، علمی، اقتصادی، پریتھ سطحس پیٹھ امہ کہ ورتاوک اکھ مستقل تہ مستحکم تواریخ۔ چاہے سۅ پتہ انگریزی چھیہ یا اردو۔ کاشر زبان ٲس نہ سنسکرت دورس تام ادبی اظہارن منز مجرا سے۔ مسامسا آیہ اتھ منز ادبی اظہارہ رنگۍ کینہہ سرگرمی فارسی دورس منز۔ لل دید تہِ چھیہ امی فارسی دورچ پیداوار۔ امہ وقتہ آو شعری اظہارن منز فنس کن توجہ کرنہ۔ مگر امہ زبانۍ ہند یہ ورتاو رود سیٹھا محدود۔ پننس ادبس پیٹھ غور کرنک گۅڈنیک موقعہ چھہ کاشرین ترقی پسند دورس منز میلان۔ ادبی اظہارہ رنگۍ یۅس زبان ونہِ کھوکھشہ پکان آسہ، تتھ ما ہیکو امہ رنگۍ ترقی یافتہ زبانن سیتۍ مقابلہ کٔرتھ۔ کاشر زبان چھیہ محکومن ہنز زبان، یمن زبانن ہند ناو توہہ ہیوت تم زبانہ آسہ/چھیہ حاکمن ہنزہ زبانہ۔

بجر کتھہ پاٹھۍ چھہ میننہ تولنہ یوان۔ یہ تہِ چھہ ہیچھنہ ہیچھناونہ یوان تہ کانہہ فن پارہ یا شاعر کوتاہ بوڈ چھہ یا عظیم چھہ یہ تہِ چھہ نقادن تہ تدریسی نظام کہ ذریعہ ذہن نشین کرنہ یوان۔ اسۍ چھہِ کینژھا فارسی، اردو تہ واریاہ مغربی تعلیمہِ ہندۍ پروردہ (میہ چھہ نہ اتھ متعلق کانہہ منفی یا ناپسند رویہ)۔ تتھ روایتس منز یمن فن پارن یا شاعرن اسہِ سکولن منز پرناوۍ پرناوۍ عظیم وننہ آو، تمن ورٲے چھہ نہ اسہِ اندۍ پکھۍ کانہہ عظیم باسان۔ اسہ چھیہ پتاہ زِ شیکسپر یا تسندۍ ڈراما چھہِ عظیم تکیازِ اسہ چھیہ کتھ بار بار وننہ آمژ تہ پرناونہ آمژ۔ تہ یہ تہِ ہیچھناونہ آمت زِ شیکسپیر تہ تسندۍ ڈراما کتھہ پاٹھۍ چھہِ عظیم۔ جرمنی منز کمس چھیہ خبر زِ غالب چھہ کانہہ شاعر، عظمت تھاوۍ تو الگے۔ تمہِ پتہ غالبس منز کُس فن پارہ چھہ یُس عظیم چھہ۔ سٲنۍ روایت چھیہ نہ بڈۍ یا ایمبیشس فن پارہ لیکھنچ روایت۔ سانہِ روایژ منز چھیہ کلہم شاعری نظرِ تل تھاونۍ ضروری۔ غالب تہِ چھہ بوڈ ییلہ اسہِ تم معیار قبول کرۍ یمو کنۍ غالب تہ تسنز شاعری بٔڈ بنییہ۔ غالبس سپدۍ انگریزی پاٹھۍ پتمین پنژاہن ورین منز شیہ ستھ ترجمہ تہ ادہ ہیوت کینژو شاعرو (پرن والیو نہ) غالب سند ناو زانن۔ میر تقی میر زاننک چھہ نہ کانہہ سوالے۔ کینژو پنڈتو کٔر لل دید تہِ پروجیکٹ کرنچ کوشش، تہ تسند تہِ ہیوت کینژو انگریزی شاعرو ناو، شیخ العامس کس زانہِ؟ نتہ کیا چھیہ یمن دۅن فرق؟ گویا عظیم تہ عظمتکۍ پیمانہ تہِ چھہِ تنقیدی، تدریسی نظام آپراوان۔ غالب چھا بوڈ شاعر کنہ احمد فراز چھہ بوڈ شاعر، اکس عام انسانس کیا چھیہ خبر یوت تام نہ سہ ہیچھناونہ ییہ زِ اسۍ کتھ ونو عظمت۔ عظمت تہِ چھہ اکھ مفروضہ یُس اکھ سماج طے کران چھہ۔ یہ فیصلہ کرنس منز اوس نہ یا چھہ نہ سٲنس دورس منز سانہِ سماجک کانہہ دخل۔
اگر اسۍ پننۍ لکہ شاعری کلہم پاٹھۍ عالمی سطحس پیٹھ پیش کرو، اتھ کیازِ میلہِ نہ مقام، مگر پیش کرنہ خاطرہ چھہ شرط یہ شاعری ییہ جمع کرنہ۔ یہ ییہ مطالعس منز اننہ۔ امیک تنقیدی محاکمہ سپدِ۔ عالمی سطحس پیٹھ یِن تم مطالعہ پیش کرنہ۔ پرنہ تہ پرناونہ۔ ییتہ آیہ نہ چینچ قدیم شاعری (زبردست شاعری) کنہِ کھاتس منز تھاونہ، کاشرس کُس پرژھہِ؟
لہذا گژھہِ نہ یہ مسلہ آُسن زِ اسہِ چھا کانہہ فن پارہ عالمی فن پارن برونہہ کنہِ تھاونس لایق پیدہ کورمت بلکہ یہ زِ اسہِ یوس شاعری پیدہ کرمژ چھیہ، سۅ کتھہ پاٹھۍ مۅلوون۔

 

 

زمرے:انٹرویو