تنقید

شعری، تنقیدی استفادہ


منیب الرحمن

غزلیہ شاعری منز چھہ بییہ زبانۍ ہندٮن شعرن ہند ترجمہ یا مضمون ورتاون عام۔نظمن منز تہ ہیکہ یہ سپدتھ۔ رحمن راہی چھہ جدید فارسی شاعرن ہنزو نظمو منزہ سید سیوٚد لفظ، ترکیبہ تہ فقرہ تلتھ پننین نظمن منز ورتاوان تہ یتھہ پاٹھۍ پننہِ نظمہِ قوت بخشان ۔ مثالہ پاٹھۍ راہی سنز نظم ‘صدا’ چھیہ فارسی شاعرن ہندۍ کینہہ حوالہ ہیتھ ۔ اکھ حوالہ یُس زیادہ نون چھہ نہ، چھہ سہراب سپہری ۔سہراب سپہری چھہ اکس نظمہ منز ونان:

قصہ نیستم کہ بگوئی
نغمہ نیستم کہ بخوانی
صدا نیستم کہ بشنوی
یا چیزی چنان کہ ببینی
یا چیزی چنان کہ بدانی

یعنی سہ چھہ ونان بہ چھس نہ تیتھ کانہہ چیز یس ژہ وچھتھ، زٲنتھ، ورتٲوتھ ہیککھ۔
راہی چھہ اتھ ژھوٚٹ ترجمہ کران:

ژہ یُس چھکھ تہ سہ
سہراب چھہ ونان: مرا فریاد کن
راہی چھہ ترجمہ کران: میون فریاد بوز
سہراب چھہ ونان: من با تو می سخن گویم

راہی چھہ ترجمہ کران: ژیہ چھسے ونان

سہراب چھہ ونان:
درخت با جنگل
علف با صحرا
ستارہ با کہکشاں
بسان ابر کہ با توفان
بسان باران کہ با دریا
بسان پرندہ کہ با بہار

راہی چھہ ترجمہ کران:

سوٚدرس اوبرہ رنگ
آفتابس لوہ ٹیوٚک
بترٲژ نیجہ کیوٚم
واوس ہندِ پوشک فونوس

راہی سند اکھ ماخذ چھہ شمس الرحمن فاروقی رودمت۔ فاروقی ین لیوٚکھ اکھ مضمون "شعر، غیر شعر اور نثر” ۔ تمۍ یُس بحث اتھ مضمونس منز تل، راہی ین کور سے بحث "شعرت تہ تمکۍ ترکیبی اجزا” مضمونس منز پیش۔ راہی ین لیوٚکھ اکھ مضمون "ادبی علامت تہ علامتیت”۔ امہ مضمونک اکھ حصہ تہِ چھہ فاروقی سندِ "علامت کی پہچان” مضمونہ پیٹھہ آمت۔ کینہہ مثالہ:

فاروقی: تخلیقی زبان چار چیزوں سے عبارت ہے: تشبیہہ، پیکر، استعارہ اور علامت۔
راہی: زبانۍ ہندس تخلیقی ورتاوس منز چھہِ یسلہ پاٹھۍ ژور چیز نمایاں پاٹھۍ نظرِ گژھان: تشبیہہ، شبیہہ، استعارہ تہ علامت۔

فاروقی: پیکر کی تعریف میں اردو کے نقادوں نے اکثر ٹھوکر کھائی ہے۔
راہی: یمن اصطلاحن تعریف تہ وۅکھنے ویژھن کران تہ یمن ہنزہ مثالہ دوان چھیہ اکثر کاشریو لکھاریو کھرۍناو انۍ مژ۔

فاروقی: اس کی مزید وضاحت کے لئے اس تشبییہ کو لیجئے: زید شیر کی طرح بہادر ہے۔
راہی: نیتون گۅڈہ تشبیہہ۔ مثلا: سُلہ چھہ بہادر زنتہ سہہ۔

فاروقی: مثبت کا نشان (+) جو کہ ایک ریاضیاتی علامت ہے۔
راہی: ریاضی منز ورتاونہ ینہ والۍ + (جمع) تہ x (ضرب) ہوۍ نشانہ۔

فاروقی: پیکر کے بنیادی پانچ اقسام تشبیہہ کی ضمن میں مبصرات، مشمومات، مذوقات اور ملموسات کے نام سے مذکور ہیں۔
راہی: جسمانی حیس چھہِ پانژھ تہ تہنز بیداریہ حسابہ چھیہ شبیہہ تہِ مولہ تلہ پانژِ قسمہ چہ: بصری، سمعی، لمسی، مشکن تہ مذوقی۔

فاروقی: "محفلیں برہم کرے ہے” بیک وقت حرکت اور آواز کے تجربے کو راہ دیتا ہے لیکن بصری تجربہ بھی موجود ہے۔
راہی: "کراپھ کٔرتھ دژ دٲرتھ گٹلیو” بیک وقت بصری تہ سمعی تہ تمہِ علاوہ حرکژل۔

فاروقی: علامت اپنے معنی بدلتی نہیں، اور نہ محدود کرتی ہے۔ زندہ علامت میں معنی کا بڑھنا تو ممکن ہے، سمٹنا ممکن نہیں۔
راہی: علامژ ہند مطلوب معنہ چھہ مفہومہ لحاظہ حدو کنۍ پھہلوُن بلکہ لاحد آسان۔

فاروقی: اردو میں علامتی نظموں کا تقریبا قحط ہے اور جو نظمیں ہیں بھی، وہ تنہا علامتوں کا استعمال کرتی ہیں جیسے بلراج کومل کی نظم "سرکس کا گھوڑا”۔
راہی: مبسوط علامژ ہنز کتھ کران پییہ اعتراف کرُن زِ کاشرِ شاعری منز چھیہ امچ واریاہ ویژھے۔ ازکالہ تہِ ہرگاہ اسۍ علامتی منظومہ لیکھنچ کوشش کران چھہِ تم چھہِ زیادہ پہن تنہا علامت ورتونسے تام محدود روزان۔ مثالے راہینۍ نظم "مۅلل شب”۔

زمرے:تنقید

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s