تنقید

انور وار انور سند اکھ وژن


تجزیہ: مظفر عازم

[انور وارنہِ شعرہ سۅمبرن "یک رنگ” منزہ اقتباس]

لٲجتھس داوہ وٲجتھس مۅلو وۅلو/ وۅلہ یاون ژورہ ونیو حال
زٲجتھس تاوہ کوہ شیہلو وۅلو/ وۅلہ تن توٚندورہ ونیو حال
سۅرگہ پھوٚجس ہا یمبرزلو /برگہ چھٔژ چھس یٔژ متوال
ورگہ درشن دِتہ اکہ ژھلو وۅلو /وۅلہ کالہ بومبورہ ونیو حال
چانہِ آو آوہ ہی زن پھۅلو /کرانہِ درامژ چھس ہیمال
لانہِ لیکھتھ کیا گوکھ ازلو /وۅلو وۅلہ لٲنۍ قصورہ ونیو حال
وُہہ ونۍ چھم تن منقلو /مُہہ نارے یارہ مو زال
دٕہ درامو ھو کے جلو وۅلو /وۅلہ متہِ منصورہ ونیو حال
سوزہ دردہ کہِ بہ جگر تلہ /روز و شب چھم چون خیال
روزہ کوتا کال بر تلو /وۅلو وۅلہ سازہ سنطورہ ونیو حال
تار زلف یام ترٲوتھ یلو /مارِ سیہ ہو ووٚلہم نال
کارِ خم ژام گردنہِ گُلو /وۅلو وۅلہ ہٹہ ہوٚنزورہ ونیو حال
بمہ کمانہ لوٚدتھو چلو /رُمہ رُمہ آم تیرِ قتال
گُمہ ہژ چھس وۅنۍ کوٚت پِلو /وۅلو وۅلہ متہ مغرورہ ونیو حال
رہ مسٲفر زُوہ غٲفلو /مہتابس گوم ہلال
شاہ راورِتھ کیا غٲفلو /وۅلو وۅلہ چھۅنہ رکہِ پورہ ونیو حال
دم انورؔ ہیتھ ہیکلو /سمِ قٲتل در دل ژال
ژمہ تے وسہ چھم سۅے /کلو وۅلو وۅلہ عشقہ رنجورہ ونیو حال

تبصرہ، مظفر عازم

اسۍ دِمو اکس نظمہ کہوٹ یۅسہ انور وارنہِ شٲعری منز، اکھتُے کُل کٲشرِ شٲعری منز پھٹۍ پھٹۍ نیران چھیہ۔”ونہ یو حال”۔ موٗلہ تلہ وژنکس فارمس منز ٲستھ چھیہ یہ پننہ انہارہ کارِ وۅگنۍ تکیازِ اتھ چھہ پرتھ بندک ژوریم مصرعہ ہنا زیوٹھ ییمہ سیتۍ اتھ خاص سوز پیدہ گوٚمت چھہ، تہ ہیرِ بوٚن مضمونک یکہ واٹھ چھہ زودار۔ رسمہ موجوب چھہِ گۅڈنکۍ زہ مصرعہ تتھے کنہِ یتھہ کنہِ وژنس منز ووج تہ نیمہ (میمہ) ووج آسان چِھہ۔ (وژُن گٮون وِزِ ہیکن یمہ دۅنوے سۅ کٲم کٔرتھ یۅسہ ووج کران چھہ)۔انورنس یتھ بٲتس منز چھہ ژوریم مصرعہ پریتھ جایہ کلایمکس بنان۔ یہ نظم چھیہ زبٲنۍ حسابہ، نظمہ ہند ہیر بوٚن ربطہ حسابہ، ہشی آواز یا معنی وٲلۍ لفظ ژارنہ کہِ حسابہ، تہ استعارہ ورتاونکہ حسابہ، انورؔ وارنہِ کمالچ اکھ ننۍ مثال۔ اوے چھہِ اسۍ یہ سٔنتھ پران یا بوزان (بہ دپہ ہا گٮوان تہ گنٍگراوان) کتہِ کوٚت واتان۔ (کٲشرٮ۪ن نوٮ۪ن کیو پرانٮ۪ن شٲعرن نشہِ چھیہ یژھہ "ٹۅکہ” نظمہ سٮ۪ٹھا کم﴾۔ ولِو، کینہہ شعر پروکھ یکوٹہ:

لٲجتھس داوہ وٲجتھس مۅلو / وۅلو وۅلہ یاون ژورہ ونہ یو حال
زٲجتھس تاوہ کوہ شیہلو / وۅلو وۅلہ تن توٚندورہ ونہ یو حال

داوہ لاگُن معنی گوٚو ژھل کٔرتھ قوبو کرُن، داوہ لگِتھ کیازِ وسہِ کانہہ مۅلہ، خبر چھیہ نہ، شاید امہ کنۍ زِ” تمۍ” نیونس یاوُن ژورِ۔ کیا تام چھہ معاملہ ییمہ کنۍ ژھلہ لگنہ سیتۍ مۅلہ وسنک تصور آس۔ شٲعر چھہ نہ اسہِ ونان، مگر یمو لفظو سیتۍ چھہ امس کردار سنز حدہ روٚس پریشانی ننۍ درامژ۔ اکھتُے چھیہ یہ وارے ننۍ نیران ییلہ اسۍ بوزان چھہِ "زٲجتھس تاوہ”۔ اگر مۅلہ وسنٕچ پریشٲنی ٲس تیلہ اوس ژھوٚٹ حل، دپہِ ہیس "میہ تلکھنا تھپھ”۔ مگر یہ کردار چھہ نہ تہِ ونان۔ یہ چھہ سوال کران "کوہ شیہلہ؟” تہ پانے جواب دِوان، "وۅلو وۅلہ تن توٚندورہ” یُس وارہ دزنک، وارہ زالنک مارہ موٚت چھہ ہاوان۔امس ژھلہ لٔگۍمتس چھہ یہ ژھلہ گوٚر باسان نار تہِ شییہجار تہِ۔ ادہ اسۍ بشری عشقہ کس خیالس منز آسو یا اسہِ لولک کانہہ بالا تصور آسہِ، یہ شعر کرِ اسہِ آور۔انور وارن ہٲو صرف اکس زالہ لٔگۍ متۍ سنز تصویر۔ نہ چھہ کانہہ "دزان” نہ چھہ تمہِ حسابہ کانہہ "تن توٚندورہ” آسان۔یہ چھہ سہ ذٲژ پھیُر یُس شعر لفظن مرژہ گری کٔرتھ (تصویر بنٲوتھ) کران چھہ۔ یہ چھیہ جان شٲعری ہنز اکھ بٔڈ زان ۔

زالُن، تاو، شیٚہلن تہ توٚ ندور، یم لفظ چھہِ اکی آیہ، ادہ یا اکھ اکس ڈکھہ آسنہ کنۍ، یا اکھ اکس مخالف آسنہ کنۍ، تہ یم چھہِ شعرس منز یکوٹہ سمنہ سیتۍ شٲعری ہند بیاکھ خاص وصف ہاوان۔ یم وصف وچھو اسۍ انور وارنہِ شٲعری منز گُتلۍ؛ حالس چھہِ اسۍ یتھ بٲتس پھیُر دوان:

سۅرگہ پھوٚجِس ہا یمبرزلو / برگہ چھژ چھٮس یٔژ متوال
ورگہ درشن دِتہ اکہ ژھلو / وۅلو وۅلہ کالہ بوٚمبورہ ونہ یو حال

سۅرگہ پھوٚجمژ یمبرزل! نہ چھیہ پزی "سۅرگچ” تہ نہ چھیہ پوش "یمبرزل”؛ مگر یمو لفظو سیتۍ آو امۍ سند لوبہ ون انہار اچھن تل، لوبہ ونۍ تہ متوال یعنی مس، خمارہ ہژ؛ برونٹھے ژھلہ قوبو کرنہ آمژ، تاوہ دزمژ۔ و‎ۅنۍ کیا چھیہ منگان! "ورگہ درشن دِتہ اکہ ژھلو”۔ لولہ مژرچ رنگہ ولۍ تصویر۔ قوبو گژھنچ پریشٲنی تہِ، ورگہ درشنک ہاوس تہِ۔ آلو دِوان کالہ بوٚمبورس۔ یمبر زل تہ بوٚمبر بوزِتھ تٔر اسہِ سۅ کتھ فکرِ یۅسہ نہ شعرس منز و نِتھ ٲس۔ یعنی، لولک یہ الاو گژھہِ نہ زانہہ ژھٮتہ تکیازِ عام پژھ چھیہ بوٚمبر یتھ واپھس منز وارِ ونۍ دِوان چھہ، یمبرزل چھیہ آسان برہ گمژ۔ ازلی لولہ آلون ہند آگر چھہ صرف اکھ بیہ ٲنتھ، پوشہ ون فراق، یہ ژھۅکہِ نہ زانہہ۔ سۅرگ تہ برگ چھہِ پھورہ کنۍ ہوۍ ، چھژ تہ کالہ چھہِ مختلف آسنہ کنۍ اکھ اکس نوٚن کڈان۔ کٲنسہ دِیہ چھژ لفظ امۍ سندِ بے تجربہ (اردو پٲٹھۍ ونو الھڑ﴾ آسنک تہِ تصور، (اکھتُے ما ’سفید پوش‘ آسنک تہِ، یعنی تم یم دنیادٲری کنۍ لوٚتۍ مگر عزتہ کہ حسابہ گوٚبۍ آسان چھہِ)، تہ یم رنگارنگ تصور دِن شعرہ کِس اثرس ہریمانہ پاس، سنٮ۪ر تہ اۅبٮ۪ر گۅبٮ۪ر۔

چانہ آو آوہ ہی زن پھۅلو / کرانہِ درامژ چھٮس ہی مال
لانہ لیٚکھِتھ کیا گوکھ ازلو /وۅلو وۅلہ لٲنۍ قصورہ ونہ یو حال

امس کردار سنز فراق تہ نالہ دِنچ مجبوری چھا کرانہ نیرنُک نتیجہ؟ کرانہ درایا تکیازِ سہ چھہ کالہ بوٚمبور تہ یہ چھیہ چھژ یمبرزل؟ کِنہ امہ کنۍ زِ یہ چھیہ برگہ چھژ (بیہ تجربہ یا سفید پوش یا دوٚنوے)؟ کِنہ امہِ کنۍ زِ یہ چھیہ متوال (یس نشہ پھوٚرمت آسہِ، پانس تانۍ آسٮ۪س نہ)؟ یم رایہ وژھہ میہ، تۅہہ یِن خبر کٲتیا خیال امہِ علاوہ۔ شعر کرِ نہ وضاحت۔ شعرچ کٲم چھیہ اسۍ حٲرتن کٔرِتھ آورۍ تھاونۍ۔وچھِو! ییلہ شٲعر مشٲعرن منز غزل پران چھہ، واریاہ ہشار بوزن وٲلۍ چھہ اوٚڈے شعر بوزتھ شٲعرس قٲفیہ یورے آپراوان۔ پایہ بٔڈ س شٲعرسند اکھ نشانہ چھہ یہ تہِ زِ سہ چھہ بعضےپنن قٲفیہ بوزنٲوتھ بوزن والٮن حٲرتن کران۔ انور وارنۍ امۍ شعری کردارن ییلہ ازلس (شاید قۅدرتہ کس قونونس ) یا قسمتس (لٲنس) سوال کوٚر یہ کیا لیوٚکتھ میہ ڈٮ۪کس، محبوبس دیُتن "لٲنۍ قصورہ” ونِتھ ناد۔ یہ لفظ کٔمس اوس زیوِ پیٹھ؟۔ امۍ کرۍ پرن وٲلۍ حٲرتن؛ (انور وارس چھہ تگان)۔

وُہہ ونۍ چھم تن منقلو / مُہہ نارے یارہ مو زال
دُہ دراموھوہہ کے جلو / وۅلو وۅلہ متہِ منصورہ ونہ یو حال

اکس شعرس منز ٲس "تمِس” تن توٚندورہ؛ و‎ۅنۍ چھ؛ہ "امس” پانس تہِ” تن منقل”۔ امکۍ لفظ: وُہہ ونۍ، منقل، مُہہ نار، زال تہ دُہ؛ یم چھہِ سٲری لفظ معنی حسابہ رلہ ونۍ ۔ آوازِ کنۍ رلہ ونۍ لفظ چھہِ امہِ علاوہ ننی۔ (تریمہِ "دُہ درامو” مصرعچ کتھ کرہ نہ تکیازِ میہ چھہ نہ اطمینان امکۍ لفظ کیا وٲتۍ ٹھیک پٲٹھی میہ نِش)۔اتھ دزہ دزس سیتۍ منصور یاد کرن چھہ منٲسب تکیازِ تمۍ سند بدن آو لولہ کس سفرس منز زالنہ۔(فارسی پٲٹھۍ ونو سانہِ کانگرِ، مننہِ، شستر بخارِ تہ اکھتُے اسبند سوزس تہ منقل، تمہِ حسابہ چھہ یہ اتٮن بڈہ اہم لفظ۔﴿ظۅن چھہ گژھان منہکل لفظس کُن تہِ۔ شعرہ کس”معنیس” چھہ تِمو لفظو، خیالو تہ احساسو سیتۍ تہِ دامن بڈان یم کُنہ تعلقہ شعر پران پران یاد پٮن۔ ﴿یمے سٲری چیز رٔلتھ چھہ شعرس سہ طاقت دِوان یتھ "ڈہِتھ نیُن” چھہِ ونان)۔ امہِ پتہ ووٚنن:

سوزہ دردہ کہ بہ جگر تلو / روزوشب چُھم چونے خیال
روزہ کوتاہ کال بر تلو / وۅلو وۅلہ سازہ سنطورہ ونہ یو حال

سوز تہ ساز چھہِ دُکِہ ویرِ زامتۍ۔ ’تلو ‘تہ ’تلو ‘چھہِ د‎ۅن مصرعن منز کنُے لفظ ٲسِتھ، زہ الگ الگ معنی ہیتھ، یہ چھہ زبان ورتاونُک بیاکھ لوبہ وُن ول۔ روزو شب، معنی کنۍ مختلف لفظ ، یکوٹہ اننۍ چھہ بیاکھ ول۔ محبوبس دِتن "سازہ سنطورہ” ونتھ ناد، یُس سوزک تہ سازک آگُر تہِ چھہ تہ تمچ علامت تہِ۔ تمۍ سندس "دزنس” چھہ علاج صرف ساز ک "وزُن” یا سرود؛ ساز سنطور تہِ چھہ صرف "سُے”۔ یُتھ زلہ وُن تہ زالہ وُن شعر چھہ کٲنسہ تہِ شعر پسندس اکھ ڈٲلۍ ییمہ چہ مثالہ کُنہِ تہِ زبٲنۍ منز وفور چھیہ نہ آسان۔

تارِ زلف ینہ ترٲوِتھ یلو / مارِ سیہ ہو ووٚلہم نال
کارِ خم ژام گردنہِ گُلو / وۅلو وۅلہ ہٹہ ہونزورہ ونہ یو حال

تار (زلف)، مار (سرُپھ)، نال ولُن چھہِ معنی رنگۍ سوٚمۍ۔ کٲر، گردن، گُلو (اگر ہوٚٹ معنی نموس)، تہ ہونزور چھیہ اکھ اکس ڈکھہ۔ وُچھن لایق لفظہ ووٚتر چھہ۔ کارِ خم تہِ ژاو امی سیتۍ تہ ہٹہ ہوٚنزور ونِتھ گوٚو شوب تہِ چھیہ امی سیتۍ۔ ہٹہ ہونزور چھہ سُے یُس لٲنۍ قصور چھہ۔ لولک نیاے چھہ نہ توے زانہہ اندان، تہ محمود گٲمی چھہ توے نالہ ژھٹان:

کرسٲ میون نیاے اندے / مٲرۍ مندے مدنوارو!

انور وارنٮن شٲعرانہ ولن ہند یہ ورتاو ، سروٚن اثر تراونچ امچ تۅژھ وُچھِتھ گژھہِ فکرِ ترُن زِ سہ چھہ اکھ اہم شٲعر۔ ییمہ نظمہِ ہندۍ باقی شعر وُچھتھ چھیہ سٲنۍ یہ پژھ وارہ گنان۔ کتھ ژھوٚٹرٲوتھ ونو زِ بیٚین شعرن منز چھہ یہ مژر تلن وول محبوب بمہ کمانہ چِلہ چاران ﴿کش کڈان﴾، تہ امس چھہ رُمہ رُمہ تیر قتال یوان ییمہ کنۍ یہ تٔمس مغرور ونان چھیہ ﴿شوبٮس نا!)۔ شٲعر چھہ امہِ پتہ پننس حالس کُن نظر تراوان تہ پننس مہتاب پانس ہلال ونتھ پانس پیٹھ عار محسوس کران ۔ (شاید ذکرِ ہند) شہہ ضایع کرنہ کنۍ پانس غٲفل ونان، تہ محبوبس "چھۅنِرہ کہ پورہ” ناوہ آلو دِوان۔ اتٮن چھہ گُمہ ہژ (مجبور عٲجز) لفظس مقابلہ مغرور، مہتابس سیتۍ ہلال، چھۅنِرس سیتۍ پوٗر۔ سمِ قٲتلس سیتۍ رنجور (بیمار) لفظن ہند ورتاو دلچسپ۔ ظۅن ہیکہِ گٔژھتھ زِ اگر وژنہ کٮن گۅڈنکٮن بندن منز محبوب مرد اوس تیلہ کتہِ آو زلف۔ زلف چھہ ہنگہ کِس مستس تہ توہ کنۍ سٲرۍ سے مستس ونان، زنانہِ ہندس تہ، مردہ سندس تہِ؛ توے چھہ زلف لفظ نعتِ شریفن منز تہِ استعمال گوٚمت۔ جامیؒ سندِ اکہ نعتِ شریفک شعر چھہ:

دو چشم نرگسینش را کہ مازاغ البصر خوانند
دو زلف عنبرینش را کہ والیل اذا یغشیٰ

اتھ وژنس ہنا توجہ سان نظر تراونُک مقصد اوس یہ ہاوُن زِ شعرس یم وصف آسنۍ گژھن تم چھہِ اسہِ انور وارنِس اکۍ سے وژنس منز میلان۔ اتٮ۪ن اکھ کتھ چھیہ خاص پٲٹھۍ نظرِ تل تھاونۍ؛ امہِ قسمکۍ ول چھہِ سٲری جان شٲعرِ ورتاوان۔ ییلہ سٲری شٲعر مثلا زلفن رز یا سرُپھ ونان گژھن یم لفظ چھہِ پرانان، شِٹھان، تہ بے مزہ گژھان۔ انگریزۍ پٲٹھۍ چھہ یمن شٹھےمتٮ۪ن لفظن کلیشے ونان تہ ہشار شٲعر (صرف ہشار شٲعر) چھہ یمو نِشہ لوٚب ہیوان۔ ﴿تہِ کٔرِتھ تہِ چھہ نہ یمو نِشہ اند ہیتھ ژلُن سہل یہ زن اسۍ بتھہِ وچھو﴾۔ انور وار چھہ اتٮن تہِ مرد ننان۔ یتھ وژنس منز یم ناو دِتھ شعری کردارن پننس محبوبس ناد لٲیمتۍ چھہِ، اکھ وُچھۍ تم اسہِ پریتھ بندس منز باقی مصرعن سیتۍ سِپہ بٮ۪ہان۔ بییہ چھہِ تمو منزہ واریاہ نوۍ تہ زودار لفظ تہ ترکیبہ۔ محبوبس ونُن ‘’تن توٚندورہ؛ لٲنۍ قصورہ؛ سازہ سنطورہ؛ ہٹہِ ہوٚنزورہ‘‘؛ امس ونو صاحبِ طرز شٲعر۔

امہ کھۅتہ سرس چھہ یہ زِ امہ وژنک شعری کردار چھہ فراقس منز نالہ ژھٹان پننۍ احساس تتھہ کنہ باوان زِ بوزن وٲلۍ چھہِ امۍ سندٮن احساسن منز امۍ سندِ کھۅتہ ولنہ یوان (اگر تِمن تہِ کُنہ رنگہ عشقچ چھہۍ لجمژ آسہ)۔ مگر توتہِ چھہ یہ کردار وژنہ کہ بندہ پتھ بندہ پننس محبوبس ونان، اگر ژہ درشن دِکھ تہ: "ونہ یو حال”۔اسۍ چھہِ حٲرتن گژھان یوت و نتھ یُس حال امس ونہ نے رودمت چھہ، اما سہ کیا آسہ۔ فنکۍ وۅستہ ونن یم لفظ چھہِ مستزاد، مگر دل چھہ دپان مستزاد گیوو ہریمانہ، مگر یم چھا ہریمانہ، یمے چھہِ اکھتُےمعنی کنۍ سٲرۍسے بٲتس رنگ دِنہ وول انگ۔ ونہ یوحال!

زمرے:تنقید

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s