تبصرہ

کاشرِ ادبک داستان ۔۔ اند


شفیع شوق، ناجی منور

کٲشرِ ادبک داستان چھِہ اسۍ یمہِ آزردہ کرونہِ بیانہ سیتۍ اند کران زِ کٲشر ادب چھہ وۅنۍ ٲخری شہہ ہیوان. امیک موجودہ حال وچھِتھ چھہ باسان زِ ادبچ تخلیقی عمل چھیہ ژھۅکیمژ تہ ادب بنیوو وۅنۍ آثارِ قدیم۔ امیک اکھ ٹاکارہ اشارہ چھہ یہ زِ تقریبا پنژاہ وُہر کم کانہہ تیتھ شاعر یا افسانہ نگار چھہ نہ نظری گژھان یس منز کانہہ جایز تخلیقی کل تہ صلاحیت آسہِ ہے، تہ پنژاہن ورین ہند ژھٮ۪ن چھہ نہایت حوصلہ شکن۔ وُنہِ تہِ اگر کُنہِ کانہہ تازہ تہ قابلِ توجہ ادب پارہ لیکھنہ یوان چھہ، سہ چھہ پرانِنے یعنی پنژاہ ؤری ہیوٚر وٲنسہِ ہندین ادیبن تہ شاعرنے ہند آسان، تہ تم چھِہ وۅنۍ اکہِ اکہِ رخصت ہیوان۔

زیادہ زیادہ کتابہ، تم تہِ خوبصورت طباعت ہیتھ، چھیہ کالہ پگاہ چھپان مگر صرف انعامی مقابلن منز شامل سپدنہ باپت، نہ زِ تجربہ یا ہیت رنگۍ کانہہ ندرت ظاہر کرنہ باپتھ۔ انعام حاصل کرُن گوٚو جان، مگر ادبس منز “انعامی ادبچ روِش” چھیہ نہایت خطرناک۔ نوۍ نوۍ انعام چھہِ قایم سپدان، مگر لیکھن وٲلۍ چھِہ پرٲنۍ سے پھیُر پھیُر دِنس کُن راغب، نتہ چھہِ بازرچ منگ وچھِتھ لیکھان۔ نوِرہ چہ تماشہ گری ہندِ شوقہ چھِہ وۅنۍ عجیب عجیب تہ اسنس لایق موضوعن پیٹھ کٲشرِ کتابہ چھپان،مثلا کٲنسہِ قدیم شاعر سندس کلامس منز جدید نیوکلیٲیی یا بیو ٹیکنالجی ہندعلم، کینہہ چھہِ پرانٮ۪ن بزرگ تہ صوفی شاعرن ہندس کلامس ” متن شیرنچ” بے شرم کوشش کران کتابہ لیکھان تہ یپٲرۍ چھہِ سٲنۍ کینہہ ”محقق” پرانٮین قلمی نسخن یا کتابن ہند تجزیٲتی تہ تقابلی مطالعہ کرنہ بجایہ پٹوٲرۍ اندازہ فضول موضوعن پیٹھ مضمون لیکھان: کٲشرِ شاعری منز یا کٲشرِس لُکہ ادبس منز زنانہ، مرد، گرہ، گرویٹھ، پلو پوشاک، گہنہ، مرُن زیوٚن بیترِ۔ یہ چھہ نہ تحقیق بلکہ محض “پیشہِ کرُن” تکیازِ اتھ چھہ باو۔ تاجرتچ یہ نہج چھیہ ادبہ باپت زہر۔

امہ افسوسناک حالک بنیادی وجہ چھہ یہ زِ کٲشر پرُن لیکھُن بنیوو وۅنۍ محض معاش: کٲشرس منز جل جل ایم اے، ایم فِل تہ پی ایچ ڈی کرِتھ نیُن تہ نوکری کرنۍ تہ بس؛ امہ پتہ نہ کہِنۍ۔ سہ زمانہ گوٚو ییلہ ادیب تہ شاعر عالمی سطحہ کٮین شاعرن تہ ادیبن ہند سنجیدہ مطالعہ کرِتھ لیکھان ٲسۍ۔ وۅنۍ چھہِ سٲنۍ پیشہ کرن وٲلۍ شاعر تہ ادیب بے مندچھ پٲٹھۍ ونان: ”اسہِ کیاہ بیین زبانن ہندس ادبس سیتۍ!” تمن کُس تارِ فکرِ زِ توٚت تام ہیکہِ نہ کُنہِ تہِ زبانہِ منز کانہہ نوٚو تخلیقی تجربہ سپدِتھ یوٚت تام نہ باقی زبانن ہندِ قدیم تہ عصری ادبُک مطالعہ آسہِ۔ کٲشر کٲشر کرُن چھہ مبارکس لایق تکیازِ یہ چھہ روزگارک معاملہ، مگر نظم، غزل، افسانہ، ناول یا ڈراما لیکھُن چھہ وسیع تہ غیر تجارتی سنجیدہ مطالعہ منگان۔ کٲشرین ادیبن تہ شاعرن چھہ مشرقی ادبُک علم آسنس سیتۍ سیتۍ انگریزۍ ادبُک مطالعہ نہایت ضروری۔ فارسی، عربی، سنسکرت زبانن ہندِ ادبُک علم آسنس سیتۍ سیتۍ چھہ انگریزۍ زبان تہ ادبک مطالعہ ناگزیر، تکیازِ انگریزۍ زبانے چھیہ وۅنۍ باقی زبانن ہند ادب زاننک وسیلہ۔ دۅہہ پتہ دۅہہ ییہِ لسٲنی سیاستس منز تیزی تہ بڈۍ بڈۍ انعام، اعزاز، ادارہ، عہدہ، کُرسیہِ، تہ پروجیکٹ روزن قایم سپدان، مگر یہ سورُے کینہہ آسہِ روزگارہ باپت۔ روزوُن تہ پوشِوُن ادب تخلیق کرُن ییہِ فٲترٲزی ماننہ۔

کاش، سون یہ دوٚپ اپُز نیرُن!
کٲشرِ ادبک داستان چھِہ اسۍ یمہِ آزردہ کرونہِ بیانہ سیتۍ اند کران زِ کٲشر ادب چھہ وۅنۍ ٲخری شہہ ہیوان. امیک موجودہ حال وچھِتھ چھہ باسان زِ ادبچ تخلیقی عمل چھیہ ژھۅکیمژ تہ ادب بنیوو وۅنۍ آثارِ قدیم۔ امیک اکھ ٹاکارہ اشارہ چھہ یہ زِ تقریبا پنژاہ وُہر کم کانہہ تیتھ شاعر یا افسانہ نگار چھہ نہ نظری گژھان یس منز کانہہ جایز تخلیقی کل تہ صلاحیت آسہِ ہے، تہ پنژاہن ورین ہند ژھٮ۪ن چھہ نہایت حوصلہ شکن۔ وُنہِ تہِ اگر کُنہِ کانہہ تازہ تہ قابلِ توجہ ادب پارہ لیکھنہ یوان چھہ، سہ چھہ پرانِنے یعنی پنژاہ ؤری ہیوٚر وٲنسہِ ہندین ادیبن تہ شاعرنے ہند آسان، تہ تم چھِہ وۅنۍ اکہِ اکہِ رخصت ہیوان۔

زیادہ زیادہ کتابہ، تم تہِ خوبصورت طباعت ہیتھ، چھیہ کالہ پگاہ چھپان مگر صرف انعامی مقابلن منز شامل سپدنہ باپت، نہ زِ تجربہ یا ہیت رنگۍ کانہہ ندرت ظاہر کرنہ باپتھ۔ انعام حاصل کرُن گوٚو جان، مگر ادبس منز “انعامی ادبچ روِش” چھیہ نہایت خطرناک۔ نوۍ نوۍ انعام چھہِ قایم سپدان، مگر لیکھن وٲلۍ چھِہ پرٲنۍ سے پھیُر پھیُر دِنس کُن راغب، نتہ چھہِ بازرچ منگ وچھِتھ لیکھان۔ نوِرہ چہ تماشہ گری ہندِ شوقہ چھِہ وۅنۍ عجیب عجیب تہ اسنس لایق موضوعن پیٹھ کٲشرِ کتابہ چھپان،مثلا کٲنسہِ قدیم شاعر سندس کلامس منز جدید نیوکلیٲیی یا بیو ٹیکنالجی ہندعلم، کینہہ چھہِ پرانٮ۪ن بزرگ تہ صوفی شاعرن ہندس کلامس ” متن شیرنچ” بے شرم کوشش کران کتابہ لیکھان تہ یپٲرۍ چھہِ سٲنۍ کینہہ ”محقق” پرانٮین قلمی نسخن یا کتابن ہند تجزیٲتی تہ تقابلی مطالعہ کرنہ بجایہ پٹوٲرۍ اندازہ فضول موضوعن پیٹھ مضمون لیکھان: کٲشرِ شاعری منز یا کٲشرِس لُکہ ادبس منز زنانہ، مرد، گرہ، گرویٹھ، پلو پوشاک، گہنہ، مرُن زیوٚن بیترِ۔ یہ چھہ نہ تحقیق بلکہ محض “پیشہِ کرُن” تکیازِ اتھ چھہ باو۔ تاجرتچ یہ نہج چھیہ ادبہ باپت زہر۔

امہ افسوسناک حالک بنیادی وجہ چھہ یہ زِ کٲشر پرُن لیکھُن بنیوو وۅنۍ محض معاش: کٲشرس منز جل جل ایم اے، ایم فِل تہ پی ایچ ڈی کرِتھ نیُن تہ نوکری کرنۍ تہ بس؛ امہ پتہ نہ کہِنۍ۔ سہ زمانہ گوٚو ییلہ ادیب تہ شاعر عالمی سطحہ کٮین شاعرن تہ ادیبن ہند سنجیدہ مطالعہ کرِتھ لیکھان ٲسۍ۔ وۅنۍ چھہِ سٲنۍ پیشہ کرن وٲلۍ شاعر تہ ادیب بے مندچھ پٲٹھۍ ونان: ”اسہِ کیاہ بیین زبانن ہندس ادبس سیتۍ!” تمن کُس تارِ فکرِ زِ توٚت تام ہیکہِ نہ کُنہِ تہِ زبانہِ منز کانہہ نوٚو تخلیقی تجربہ سپدِتھ یوٚت تام نہ باقی زبانن ہندِ قدیم تہ عصری ادبُک مطالعہ آسہِ۔ کٲشر کٲشر کرُن چھہ مبارکس لایق تکیازِ یہ چھہ روزگارک معاملہ، مگر نظم، غزل، افسانہ، ناول یا ڈراما لیکھُن چھہ وسیع تہ غیر تجارتی سنجیدہ مطالعہ منگان۔ کٲشرین ادیبن تہ شاعرن چھہ مشرقی ادبُک علم آسنس سیتۍ سیتۍ انگریزۍ ادبُک مطالعہ نہایت ضروری۔ فارسی، عربی، سنسکرت زبانن ہندِ ادبُک علم آسنس سیتۍ سیتۍ چھہ انگریزۍ زبان تہ ادبک مطالعہ ناگزیر، تکیازِ انگریزۍ زبانے چھیہ وۅنۍ باقی زبانن ہند ادب زاننک وسیلہ۔ دۅہہ پتہ دۅہہ ییہِ لسٲنی سیاستس منز تیزی تہ بڈۍ بڈۍ انعام، اعزاز، ادارہ، عہدہ، کُرسیہِ، تہ پروجیکٹ روزن قایم سپدان، مگر یہ سورُے کینہہ آسہِ روزگارہ باپت۔ روزوُن تہ پوشِوُن ادب تخلیق کرُن ییہِ فٲترٲزی ماننہ۔

کاش، سون یہ دوٚپ اپُز نیرُن!

زمرے:تبصرہ

Tagged as:

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s