انٹرویو

روایت مدِ نظر تھاونہ بغیر ہیکہ نہ انفرادیت حٲصل سپدِتھ: نذیر آزاد


نذیر آزاد تہ نیب

نیب: یمن نظمن منز چھہ وزن تہِ پابندی سان ورتاونہ آمت تہ قافیہ تہِ۔ آزاد ٲستھ چھیہ نا تۅہہ آزاد نظمہِ سٍتۍ برابری؟
نذیر آزاد: آزاد تخلص آسنک چھہ نہ یہ مطلب زِ بہ گوس پریتھ کُنہِ پابندی نشہِ آزاد۔ مثال دمہ بہ زِ نادم تخلص تھاونہ سٍتۍ چھہ نہ دیناناتھ صٲبنہِ خاطرہ ضروری زِ سہ گژھِہ بتہ کھٮنس پیٹھ تہِ نادم تہ شعر وننس پیٹھ تہِ ، دنیاہک لۅہ لنگر چلاونس پیٹھ تہِ۔ یا رنجورتخلص تھاونہ سٍتۍ چھہ نہ شوپینہ کس عبدالستارس یہ ضروری زِ سہ روزِ پریتھ وزِ دٕیان۔ بہ چھس پابند نظمہ تہِ پسند کران تہ آزاد نظمہ تہِ چھیم ٹاچھِہ مگر شرط چھہ یہ زِ نظمہِ منز آسہِ شعریت۔ مثلاً فیض احمد فیضنۍ نظم "یاد” چھیہ بظاہر آزاد نظم مگر شعریت کہِ لحاظہ چھیہ واریاہن ترقی پسند شاعرن ہنزن مقفی تہ مرصع نظمن سرس۔ وزن تہ قافیہ نشہِ چھس نہ بہ منکر مگر وزن تہ قافیہ یوتے چھہِ نہ شاعری۔

نیب: یمن نظمن منز چھیہ کوتر جورۍ اکثر یوان۔ یہ کتھ کُن چھہ اشارہ؟
نذیر آزاد: میانٮن نظمن منز چھیہ نہ کوتر جوری یوت بطورِ علامت ورتاونہ آمژ۔ یمن منز چھیہ لٔر، شکار، رازہ وغیرہ ہیوۍ استعارہ علامتہ استعمال آمژہ کرنہ۔ منیب الرحمٰن ہوِس بالغ نظر نقادس نشہِ چھیہ میہ توقع زِ سہ کرِ یمن استعارن ہندۍ بیوٚن بیوٚن معنی متنہ کِس بنیادس پیٹھ برآمد۔ کوتر جورۍ چھیہ نہ کانہہ پریژھ زِ انسان گژھِہ حیران۔ اتھ ہیکن واریاہ معنی نیرِتھ۔

نیب: اکثر نظمہ چھیہ مویوسی پیٹھہ شروع گژھتھ اکس خۅش خیالس پیٹھ اند واتان۔ یہ چھا ایسکیپ کِنہ رجایت پسندی؟
نذیر آزاد: قنوطیت، رجایت، یقین، غیر یقینیت۔ اسۍ ہیکو نہ شعر کُنہِ مخصوس خانس منز تھٲوِتھ۔ بہ دمہ زہ مثالہ: غالب چھہ ونان ؂
سر پر ہجوم دردِ غریبی سے ڈالئے
وہ ایک مشتِ خاک کہ صحرا کہیں جسے
اتھ منز چھا صحرا وسعت کٮن معنین منز استعمال سپدمت کنہ تنگی ہندس معنیس منز۔ میون خیال چھہ غالب سند صحرا چھہ مشت خاکس برابر۔ گویا کہ وسعت تہ تنگی چھیہ اکھ اکس منز مدغم۔ یتھے کنۍ چھہ فیض سند شعر ؂
صبا نے پھر درِ زنداں پہ آکے دستک دی
سحر قریب ہے دل سے کہو نہ گھبرائیے
اگر اسۍ مانو زِمثلاً رات آیہ ژھۅکان تہ ٲخرس پیٹھ کوٚر صبحکۍ واون جیلہ کِس دروازس ٹھک ٹھک تہ اشارہ اوس زِ صبح چھہ نزدیک۔ تیلہ چھہ یہ وۅمیدک شعر۔ وۅنۍ اگر اسۍ "پھر” بمعنی بییہ اکہ لٹہِ مانو تیلہ چھہ معنہ یہ زِ صبحکۍ واون کوٚر بییہ اکہ لٹہِ ٹھک ٹھک یعنی امۍ چھ امہ برونہہ تہِ یتھ فریب دیتمت۔ تیلہ چھہ یہ غیر یقینیتک شعر بنان۔ بنیادی طور چھیہ کتھ یہ زِ اسۍ ہیکو نہ کلہم پٲٹھۍ پُریقین ٲستھ تہ نہ ہیکو کُلہم بے یقین ٲستھ۔ اسۍ چھہِ یقینس تہ بے یقینی، مایوسی تہ رجایت ہشن کیفیتن منز ہینہ آمتۍ۔ میانہ نظمہ تہِ چھیہ امی صورتِ حالچ عکاسی کران۔

نیب: سیاہ نظمہِ ہنز شروعات چھیہ تھزرہ سان سپدان، مگر اند چھیہ اکس بظاہر ظریفانہ بندس پیٹھ واتان۔ اتھ متعلق کٔرو کتھ۔
نذیر آزاد: میانہ خیالہ چھیہ نظم طنزس پیٹھ اند واتان تہ یہ چھیہ نہ ظریفانہ۔ ییلہ اردو شاعر "ریل کی سیٹی” بطورِ علامت استعمال ہیکن کرِتھ اسہِ چھا ٹھاکھ زِ اسۍ ہیکو نہ "بجلی گژھنۍ” تہ نتیجتاً سیاہی پھٲلنۍ استعارہ رنگۍ استعمال کٔرتھ؟ بہ چھس اتھ سلسلس منز کامل صٲبس نشہ متاثر۔

نیب: کاشرِ نظمہِ ہند تناظر مدنظر تھٲوتھ کٔرتو پننہِ نظم نگاری پیٹھ کتھ۔
نذیر آزاد: کٲشرس منز چھیہ واریاہ کامیاب نظمہ لیکھنہ آمژہ۔ مثالے کٲمل صٲبنۍ نظم "قصیدہ” یا "تاے نامہ” چھیہ تِتھۍ شاعرن تخلیق کرِمژہ یمس نہ صرف عروضس پیٹھ گہرہ نظر چھیہ بلکہ چھُس پننہِ روایتک احساس۔ تتھۍ شاعر یم پننہِ کمزوریہ زٲنتھ نظمہ لیکھن زِ اتھ صنفس منز چھیہ آزٲدی چھہِ نہ یمہِ کتھہِ نشہِ وٲقف زِ روایت مدِ نظر تھاونہ بغیر ہیکہ نہ انفرادیت حٲصل سپدِتھ۔ میانہِ نظم نگاری ہند مدعا چھہ یہ زِ میٲنۍ نظم گژھِہ روایتس تہ ینہ وٲلس زمانس درمیان اکھ رابطہ بننۍ تہ یہ گژھِہ اکھ مکمل لسانی اکایی تہ بھرپور استعارہ آسنۍ۔ بہ کتھ حدس تام چھس کامیاب سہ ہیکہِ ژیہ ہیو نقاد ؤِتھ۔

نیب: یہ چھہ پوٚز زِ یمن ہند بینٮر چھہ نہ بہترین تخلیقن منز ممکن، تاہم تہندِ خیالہ چھا تجربہ اہم کنہ فن؟
نذیر آزاد: مرزا غالب سند شعر چھہ
اسد اٹھنا قیامت قامتوں کا وقت آرائش
لباس نظم میں بالیدن مضون عالی ہے
یہ چھیہ شعریت۔ یتھ منز مضمون عالی آسہِ، بییہِ آسہِ بہترین کرافٹ۔ اگر اکوے چیز آسہِ، سہ چھہ آسان ناکام ۔ یہ گژھہِ اکھ مکمل لسانی اکایی بنن۔ متضاد تہ موافق لفظو سٍتۍ گژھہِ مکمل لسانی اکایی بنن۔ لفظ اکھ اکۍ سندِ خاطرہ ہموار کرنۍ، اکھ مکمل خیال یُس بذات خۅد اکھ بھرپور استعارہ آسہِ۔

نیب: سوال جوابک مقصد چھہ زِتخلیق کارس میلہِ پننس کُنہِ تخلیقس متعلق، پننس فنس متعلق یا پننس ادبی نظریس متعلق یمن سوالن ہندِ بہانہ کتھ کرنک موقعہ ۔ سوال چھہِ نہ فن پارن متعلق پسندیدگی یا غیر پسندیدگی ظاہر کران۔ سوال چھہِ نہ اعتراض یا حمایت کہ غرضہ کرنہ یوان۔ سوال چھہِ نہ تنقیص۔ سوال چھہِ نہ تحسین۔ سوال چھہِ زٲنتھ مٲنتھ علمی گۅبیرہ روٚس کرنہ یوان تاکہ تنقیدی جارگن ورٲے ییہ براہ راست کتھ کرنہ۔ سوالن ہند مقصد چھہ تخلیق کارس کتھ کرنہ خاطرہ زیر دنۍ۔ نذیر آزاد سندۍ جواب چھہِ امہ لحاظہ سیٹھا اہمیت تھاوان۔

زمرے:انٹرویو