انٹرویو

فنچ فطرت چھیہ بے ساختگی، روانی تہ زاوۍجار تہ معنی: حیات عامر حسینی


حیات عامر حسینی، نیب

نیب:یمن دۅہن اسۍ علی گڈھ پران ٲسۍ ژہ اوسکھ منزۍ منزۍ اردو پاٹھۍ نظما وظما ونان۔ تمنے دۅہن چھپییہ چانۍ اکھ نظم امیزان کی بچیاں شب خونس منز تہِ ۔ تمہِ پتہ تہِ رودکھ ژہ شاعری کران مگر کاشرس کُن ینک کیا وجہ چھہ، نیب دوبارہ شایع گژھنہ علاوہ ؟ چانہِ شاعری ہند کیا چھہ آگُر؟
حیات عامر حسینی: میہ ووت واریاہ کال انگریزی تہ اردو س منز لیکھان مگر زہ ؤری برونہہ کوٚو میہ ہنگہ تہ منگہ کاشر لیکھن شروع۔ اتھ پتہ کنہِ کم عوامل چھہِ، میہ چھیہ نہ پانس پتاہ۔ البتہ ونہ بہ یہ زِ میٲنس لاشعورس تہ شعورس دۅشونی سطحن پیٹھ چھیہ اکھ ارتعاشی کیفیت۔ میانۍ علایم چھہِ عربہ کہ صحرا منزہ وۅتھان تہ باقین تہذیبن تہ کشیرِ ہندس تاریخس یُس شاہ ہمدان سندِ دورہ پیٹھہ شروع گژھان چھہ، منز پننۍ رابطہ ژھانڈان۔ میون مسلہ چھہ انسانہ سنز روحانی شناخت، یۅس تمام تہذیبی رابطن نظرِ منز تھٲوتھ معنی چھہ لبان۔ میانہِ وجودچ تہ فنچ سٲرے تلاش چھیہ رمز کاینات، فخر موجودات، وجہ تخلیق، ختم مرتبت حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم تہ تسندین اہل بیت طاہرینن ہنزن مارۍ منزن تخلیقی ژھاین تہ گراین ہنز تلاش تہ میانہِ خاطرہ چھہ سورے کاینات امۍ سے ذات مقدسس اندۍ اندۍ نژتھ معنی لبان۔ یہ چھہ رۅبہ سند محبوب ، شفیع المذہبین تہ رحمت للعالمین۔ تمام انسانی تہ روحانی تہ وجودی تہ تہذیبی کشمکش، تخلیق و تعمیرک مرکز تہِ چھہ سُے تہ یمن ہنز کہوٹ تہِ چھہ سُے۔ قومن ہند عروج تہ زوال، تہند شناخت، عظمت، غلامی، جبر، فن تہ علم یہ سورے چھس بہ سمجھان اتھۍ کہوچہ کھستھ معنی لبان تہ کشیر تہ کاشرۍ سندین تمام مسلن ہند معنی مطلب تہِ چھس بہ امۍ سے آغس سیتۍ رشتن ہنزِ روشنی منز وچھنچ کوشش کران۔ امہِ سیتۍ گژھہِ نہ میہ مذہبی شدت پسندی ہنز ہانژھ لگنۍ۔ بہ چھس یہ سمجھان زِ فنس منز گژھہِ مذہبیت آسنۍ تیلہ چھہ یہ زیادہ میوٹھ، رسیُل تہ سوٚن، معنی دار تہ تہدار بنان۔ ہاں یہ چھہ ضروری زِ مذہب تہ مذہبیت چھہِ زہ الگ تہ وکھرہ چیز تہ دۅشونۍ ہندۍ معنی تہ اثرات چھہِ بیوٚن بیوٚن۔

نیب: فنس متعلق کیا چھہ چون نظریہ؟
حیات عامر حسینی: فن کیا چھہ؟ یہ چھا داخلی حقیقتن، تمناہن یا نفسیاتی ترکیبن، تقاضن یا احساساتن تہ ضرورتن ہند اظہار؟ اتھ چھا انسانہ سندین مابعد الطبعی بنیاذن تہ قضاین سیتۍ کانہہ تعلق؟ یہ چھا تمۍ سنزن وجودی، مذہبی، سماجی یا تہذیبی یا ما بعد التہذیبی تہ لاشعوری حدن تہ جہژن تہ سنِرن ہند اظہار کِنہ یہ چھہ محض ہنر مندی، کاریگری یا ماہرانہ کوششن ہند نتیجہ یا ناو؟یمو دۅیو رویو منزہ یُس تہِ رویہ اختیار کرون، فنکۍ معنی تہ حد بدلن۔” اگر فن محض کاریگری تہ ہۅنر چھہ تیلہِ ہیکہِ اکھ شخص بہتر کاریگر، وۅستہ، چھان، رنگ ساز، دٔسل بٔنتھ مگر سہ ہیکہِ نہ خواب وچھن وول فن کار عیسی بٔنتھ یُس تاج محل بناوِ”۔ سہ ہیکہِ نظم گر بٔنتھ مگر شاعری ہیکہِ نہ کٔرتھ۔ بٔڈ شاعری چھیہ واریاہ بٔڈ کتھ، سہ ہیکہِ نہ معمولی شاعر تہِ بٔنتھ۔ امراالقیسن، شیکسپیرن، شیخ العالمن، لل دیدِ یا امہِ قبیلہ کیو فن کارو کتہِ اوس عروض تہ شاعری ہندۍ زاوۍ جار ہیچھمتۍ! سیلابس چھیہ نہ وتھ یوان ہاونہ۔ سہ چھہ پانے پننۍ وتھ کڈان یتھہ کنۍ سیلاب پانے بٹھۍ، کنہِ، کھشارہ، سیکھ، کلۍ کٹۍ پانس سیتۍ والان یا اورہ یور چھکراوان یا کُنہِ جایہ سنیر دوان تہ تھزر کھالان چھہ۔ یتھے کنن چھہ اکھ فطری فن کار سنز پننۍ اندرم تیہہ تسندین لفظن، رنگن، سازن، کنین پانے گران تہ تہنز شیرہ پٲر کران۔ فن کارس یہ ونن زِ کیازِ کٔرتھ شاعری یا ژیہ کیازِ لیوٚکھتھ افسانہ یا ناول یا ژیہ کیازِ کٔرتھ مصوری یا سنگ تراشی یا موسیقاری یا ژیہ اگر شاعری کٔرتھ تہ کیازِ بدلٲوتھ زبان، ژیہ کیا زِ لیوٚکھتھ فارسی یا اردو یا کاشر یا انگریزی۔ یہ چھہ اکھ مشکل، پیچیدہ، پریشان کن آسنس سیتۍ اکھ بے معنی سوال تہِ۔ فن کار سندۍ اندرم تقاضہ چھہِ تس پننہِ ورتاوکۍ طریقہ، وتہ تہ اتھ منز استعمال گژھن والۍ چیز ہاوان، شاعری کرنہ وزِ چھہ نہ سہ گۅڈنیتھ لغت یا لفظن ہندۍ ڈیر قطارن منز تھاوان بلکہ چھہِ یم تسندِ روح کہ سنِرہ منزہ ناگہ جوین ہندۍ پاٹھۍ ببکھ کران پانے کھسان تہ چھہِ لفظن ہنز سۅ تارکھ مال بناون یتھ اندری تصویرن ، احساسن، رازن تہ حقیقژن تہ اظہارن ہند اکھ کاینات پروہ چھہ آسان تراوان، گاہ تراوان یا وٲنجہِ دگہِ ہندۍ تہ لاوِ مورِ ہندِ نارکۍ پاٹھۍ سسراے کران۔فن (مثلا شاعری) چھہ ترسیل تہ اظہار۔ ترسیل تہ اظہارک تعلق چھہ نہ معروضن سیتۍ آسان یا معروضن تہ معروضن درمیان آسان بلکہ چھہ امیک تعلق تمن وجودن درمیان آسان یمن احساس، فکر تہ آزادی تہ عملہِ ہندۍ دۅلابہ ؤلتھ چھہِ آسان۔ اگر سٲرے کاینات اکھ زندہ تہ حرکی مظہر چھیہ، تیلہِ گژھہِ اتھ پتہ کنہِ اکھ ناقابل بیان سِری حقیقت آسنۍ، یۅس آفتابہ ز61ژن ہندۍ پاٹھۍ سارۍسے کایناتس روشن چھیہ کران، مگر تم زژہ چھیہ نہ آفتاب آسان۔ توے چھیہ گاشچ توجیہہ ممکن تہِ ناممکن تہِ۔ انسانۍ وجود چھہ اکھ سِر، گاش تہ پریتھ گاشس تہ سِرس چھیہ اکھ دگ آسان یتھ اسۍ اظہارچ دگ ونو۔ شاعر کیازِ چھہِ شاعری کران؟ شاید ہیکہِ نہ سہ اتھ کانہہ جواب دِتھ یُس مطمین کرِ۔ مابعدی یا وجودی قضایا ہیکوکھ بیان کٔرتھ مگر مابعدی یا وجودی دگ بیان کرنۍ چھیہ سیٹھا مشکل بجایہ خۅد چھہِ یم قضایا تہِ ٲخرس تحلیلہ کہ حدہ بیبر روزان۔فنچ فطرت چھیہ بے ساختگی، روانی تہ زاوۍجار تہ معنی۔ فن بوزۍ تون اکھ آتش فشان۔ یہ ییلہ پھٹان چھہ اتھ چھہ نہ کانہہ وتھ ہاوان، نہ چھہ اتھ کانہہ رکاوٹ ہیکان کٔرتھ۔ اتہ چھہ پنن زور آسان۔ آتش فشانس چھہ نہ کانسہِ ہنز کٔرنۍ شیران سنبالان۔ ہنر مندی گیہ وۅستہ سنز کٔرنۍ۔ کرنۍ چھیہ اکس مرحلس پیٹھ منجہ مژِ ربہِ برونہہ کُن پکناوان مگر اگر یہ نرم میژِ بجایہ ہۅچھمژ میژ یا سیکھ آسہِ، سہ کیا کرِ اتھ؟ توے چھُس بہ ونان زِ فنک ارتقا تہِ چھہ امہِ کہ داخلی زورک نتیجہ آسان۔ اگر آبس کانہہ زور آسہِ نہ، سہ ہیکہِ نہ زمینس چاک کٔرتھ ناگچ صورت اختیار کٔرتھ۔ اصل چھہ کُنہِ چیزچ پننۍ فطرت تہ امکانی صلاحیت۔ اگر صلاحیت معدوم آسہِ تیلہ، ہیکہِ نہ کانہہ چیز برونہہ کُن یِتھ۔

نیب: متوجہ کرنۍ واجینۍ نظم نگاری گے کاشرس منز شیٹھ تہ ستتھ کین دہلین دوران نظرِ۔ چانہِ اتھ نظم نگاری برونہہ کنہِ کۅس روایت چھیہ؟ کاشرِ نظم نگاری متعلق کیا خیال چھہ چون؟
حیات عامر حسینی: بہ ونہ تۅہہِ زِ میہ یۅس روایت پتہ کنہِ چھیہ تتھ منز چھہِ نہ دور تام کُنہِ جایہ شاعر یا شاعری نظرِ گژھان۔ میون جد حضرت خواجہ داوود آخوند ختلانی اوس اکھ عالم، حافظ قرآن، مبلغ تہ ولی۔ سہ اوس تتھۍ دورس منز بنڈہ پور ووتمت ییلہ وسط ایشیا پیٹھہ اسلام کہ تبلیغہ خاطرہ انفرادی یا جماعژن ہندس صورتس منز مبلغ یور آے۔میانہِ شاعری منز یُس یادہ ووٚتُر چھہ سہ چھہ مختلف کۅلن ہندِ رلنک تہ مختلف آگرن ہندس اکس مرکزی آگرس سیتۍ رٔلتھ برونہہ کُن یوان۔ میانہِ شاعری منز یم علامژ تہ استعارہ تہ لفظ برونہہ کُن چھہِ یوان تم چھہِ نہ کُنہِ زبردستی ہند نتیجہ بلکہ چھہِ پانے برونہہ کُن یوان۔ میٲنس لاشعورس منز چھہ نہ کُنہِ تہِ جایہ شرک تہ تمکۍ اعلام برونہہ کُن یوان۔ اگرے میہ کُنہِ ساتہ کانہہ کوشش کٔر تہِ سۅ گیہ ناکام۔ میٲنس ذہنس پیٹھ تہ میانہِ وجود چہ گہرایی منز چھہِ خبر کتیتھ صحرا، نخلستان، گُرۍ، اونٹ، پہاڑ، طوفان، تلوارہ، نیزہ، تیرکمان، قافہ چہ پرۍیہ، فارسکۍ مرغزار، کۅلہ تہ ناگ ژورِ بہت۔ ابراہیمی کاروان یمۍ مختلف شکلن منز تاریخکۍ پڑاو وُچھ چھہ کُنہِ نتہ کُنہِ صورژ منز برونہہ کُن یوان۔ بدر و احد، حنین، کربلا، جبل الطارق، اسپین، بخارا و سمر قند، ڈھابیل، تہ شاہ ہمدانہ سند کشیرِ تشریف انُن تہ پتہ مغل دور ، پتہ میانہِ وطنچ زیٹھ غلامی تہ لاچاری تہ امی منزہ نیبر نیرنچ کشمکش۔ کاشرِ زبانۍ منز چھیہ نہ اسہِ تژھ کانہہ روایت مگر سانیو ماجو تہ بینیو چھہ امی المیہک، دادیک تہ گرزنگ اظہار پننین رٔہۍ بٲتن تہ کھاندر بٲتن منز کوٚرمت۔ امیک بیاکھ صورت اظہار چھہ کاشرۍ محاورہ یتھ منز خوف و دہشت تہ بے بسی ہندس اظہارس سیتۍ ظلمس تہ جبرس خلاف نفرتک اکھ عالم حیرت بٔستھ چھہ۔ زبانۍ ہند یہ ورتاو چھہ زیادہ اسلام آباد (مراز) کس علاقس منز درینٹھۍ گژھان تہ حقیقت چھیہ یی زِ کشیرِ ہندۍ بڈۍ ذہن تہ تہذیبی صورژ چھیہ اتھۍ علاقس منز درینٹھۍ گژھان۔ ویتھ چھیہ اسلام آباد پیٹھے وۅرہ مل واتان، حضرت سمنانی سند قافلہ جان فضا، مارۍ مندس نندہ ریشۍ (یُس سون حضرت علمدار چھہ) سند میوٹھ آلو تہ سادہ کھیوٚن تہ تسنز محاوراتی زبان یمۍ کاشرِ قرآنچ صورت اختیار کٔر چھیہ امہِ علاقچ عظمت تہ جدید دورس منز طنز کس صورتس منز راونک احساس تہِ چھہ اتہِ کہ سے امین کاملنہ شاعری منز۔ بہ ونہ یہ کتھ زِ راونک تہ المیک احساس چھہ نہ کاشرِ شاعری منز بلکہ چھہ کاشرس محاورس تہ لوکہ بٲتن منز۔ وجہ چھہ تاریخی۔
یہ حقیقت گژھہِ نہ مشراونۍ زِ حاکم یا غالب قومن یا فردن ہند رویہ چھہ ہمیشہ آسان زِ تم چھہِ مختلف حربو تہ طریقو سیتۍ غلام یا مغلوب قومن یا فردن ہند تشخص مٹاونہ خاطرہ تہنز نفسیات دبراوان، مجروح کران، تہ اتھ بدلاونچ کوشش کران۔ اگر تہنز یہ کوشش کامیاب گیہ تیلہ چھہ پس پا قوم یا فرد اکھ بمہ سنۍ بنان یس نہ پنن سوچ، احساس، وجود تہ شناخت آسان چھیہ۔دۅشونۍ طبقن چھیہ پننۍ نفسیات تہ دۅشوے چھہِ امی اندازہ دنیا ورتاوان۔ یہے نفسیات چھیہ یہندس سماجس، سیاستس، انفرادی طور طریقن تہ مذہبس تژھ تشریح کران یا کرناوان زِ خداہے چھہ حافظ۔ توے وچھیو تۅہۍ زِمغلوب قومن ہنز شاعری تہ فن چھہِ پریژھن، حد درجہ گریامتس تہ حقیقتہ نش دور سِری نظامس منز پناہ نوان تہ چھہِ بمہ سنہِ ہندۍ پاٹھۍ پنن پان وٹان تہ ژوٚمراوان۔ زندہ قومن ہند سوچ، فکر، احساس، سیاست، سماجی نظام تہ فن تہ مذہب تہِ چھہِ زندہ تہ حرکی آسان۔ وۅں گوٚو یہ زندہ قوم کمہِ عقیدک مانن وول چھہ۔ سہ چھہ تسندس روحانی تہ سماجی یا سارۍ سے سماجی تہ تہذیبی نظامس قدرن ہند لباس لاگان۔اگر یہ توحیدک مانن وول اوس تیلہِ آسہِ امۍ سنزن قدرن ہند رۅخ فلاحی، قانونی، انسانی تہ زندگی کلہم مژھیل بناونک تہ اگر یہ مشرکانہ اوس تیلہ آسن امۍ سنزہ قدرہ مفاداتن ماتحت۔ یم ساری معاملات چھہِ نفسیات طے کران۔ تۅہہِ گژھہِ یہ یاد آسُن زِ کاشرین ہنز نفسیات بدلاونہ تہ لتہ مۅنجہ کرنہ خاطرہ کرۍ مغل، سکھ، پٹھان تہ ڈوگرہ سامراجن تم حربہ استعمال زِ بوزۍ تھے چھہِ تیرِ کنڈۍ پھٹان۔ حد چھہ یہ تمے ٲسۍ یہ طے کران زِ اسۍ کم کار کرو، کیا کھین کھیمو، تہ کیا لباس لاگو۔ گرس منز شراکہ پچ تھاونس تہِ اوس نہ اجازت۔ گاڈہ مارنہِ اوس جرم۔ تہ اسۍ واتنٲوکھ بے عزتی ہندس تتھ ستھرس پیٹھ یمیک اسہِ کانہہ احساس چھہ نہ۔ تۅہہ چھا یہ پتاہ زِ عام کاشرس مردس تہ زنہِ اوس نہ یزارہ لاگنس اجازتھے۔ گامس یا قصبس یا علاقس منز ٲسۍ زیلدار، برہمن تہ ملہ اکھ زہ یزارہ عام لوکن ہندِ خاطرہ تھاوان۔ کھاندرہ وزِ اوس مہرازس تہ مہرنہِ یۅہے یزارہ لاگن آسان۔ اگر ہے کانہہ ماجہ ہند گوٚبر ہمت کرِ ہے یزارہ سونچ تس اوس زندے یوان مسلہ والنہ۔ یہ ٲس انفرادی تہ قومی بے عزتی تہ ذلتچ انتہا۔یمیک اظہار ونہِ تہِ اسۍ لاشعوری طور چھہِ کران۔ دنیاہس منز چھہ نہ کانہہ قوم یہندۍ بٔڈہ یزار نکھس لٔدتھ گژھن بُتھ چھلنہِ یا مسجدِ یا دِن اتھ شاند۔ سانین بڈین تہ بجن ہند زیوٹھ پھیرن لاگُن تہِ چھہ امی نفسیاتی بیمارِ ہند اظہار یۅس تمن پشراونہ آمژ ٲس۔ اتھ پتہ کنہِ کم طبقہ ٲسۍ جارح تہ جابر قومن سیتۍ تتھ پیٹھ کرہ بہ بییہ کُنہِ ساتہ کتھ۔ البتہ یہ ونہ زِ یہ چھہ سہ الم ناک داستان یُس سوچن والین زندہ روحن وانجہِ چھہ دگ تُلان تہ گگ کران۔ یمن حالاتن منز ہیوٚک نہ اسہِ کانہہ فلسفیانہ، علمیاتی، سماجی، سیاسی، تہذیبی، فکری، فنی تہ مذہبی نظام پیدہ کٔرتھ۔ البتہ کٔر منفی محاورن منز پنن دود ژورِ تھاونچ تہ اکھ اکس باونچ کوشش۔ تہ اتھ منز چھہ سانین ماجین کورین ہند اہم کردار۔ غلامی ہندِ امہِ زہرک تہ قومی تہ انفرادی تباہی ہند احساس اوس فقط اکس کاشرس سہ گوٚو علامہ محمد اقبال تہ امۍ دتۍ امکۍ ویداکھ۔

نیب: چانۍ شاعری ہیکہِ یہ سوال تُلتھ زِ شاعری منز کیا اہمیت چھیہ نظریس۔ چون کیا خیال چھہ؟
حیات عامر حسینی: پتھ کالچ شاعری چھیہ محض لولہ ویداکھ یا عشقچ تہ تصوفچ داستان طرازی۔ حبہ خوتونہِ ہنزِ شاعری منز چھہ نہ یوسف شاہُن گرفتار گژھن، جلاوطنی تہ راوُن قومی المیہ بٔنتھ ہیکان۔ یہ چھیہ محض اکس زنہِ ہند ذاتی تعلق تہ تمہِ چہ مختلف جہژ یم ٹاکارہ چھیہ گژھان۔ جدید دورس منز تہِ چھہ نہ عبدالاحد آزاد تہ مہجورس ہوۍ بڈۍ شاعر تہِ اتھ المیہ ہس کُن اشارہ کران۔ رساجاودانی، غلام رسول نازکی، رحمان راہی، دیناناتھ نادم، حامدی کاشمیری بیترِ سنزِ شاعری ہندۍ چھہِ پننۍ رنگ، مگر انفرادی تہ قومی شناخت تہ کاشرِ تاریخک معنوی ژھریر چھہ نہ کُنہِ تہِ حیثیتہ یہنزِ شاعری منز تہِ درینٹھۍ گژھان۔ یہندۍ زہ ہمعصر شاعر چھہِ البتہ اتھ احساسس برونہہ کُن انان۔ محمد امین کامل تہ مشتاق کاشمیری۔ امین کامل چھہ بوٚڈ شاعر تہ تمۍ کوٚر یہ احساس طنز کس صورتس منز برونہہ کُن اننچ کوشش۔ مشتاق چھہ اکھ نطریاتی شاعر مگر بوٚڈ چھہ نہ۔ تسنز ہ نظمہ چھیہ نہ فنی صورت لٔبتھ ہیکان یمیک نتیجہ یہ چھہ زِ سہ چھہ پیغام بر بنان مگر تھدس ادبہ کس صورتس منز چھہ نہ ہیکان پننۍ کتھ ورتٲوتھ یُتھ زن تسند احساس تہ دود آفاقی تہ معنوی اظہار لبہِ ہے۔ یوٚتامت نظریاتی شاعری ہند تعلق چھہ۔ نظریہ چھہ نہ فنس کمزور بناوان بلکہ چھہ یہ اتھ مختلف رنگ تہ سنیر ہیکان دِتھ مگر شرط چھہ یہ زِ فن پارس منز گژھہِ پیغام علامت تہ استعارہ بنُن نہ کہ کریکہ ناد تہ تقریر۔ اردو شاعری منز گوٚو یہ گٲیلہ فیض ہوس بٔڈس شاعرس، یسنزہ واریاہ نظمہ فن پارہ بننہ بجایہ موٚزورہ سند کریکہ ناد بنیایہ۔ ییلہ دود، مصیبت تہ پریشانی وجودی کربچ صورت اختیار کٔرتھ ادب پارہ کس روحس منز وسہِ تہ وجودس سٕسراے پیدہ کٔرتھ لفظن، رنگن، شکلن، استعارن تہ علامژن ہنز رنبہ ونۍ تارکھ مال بناوِ تیلہ چھہ یہ روح لطیف بٔنتھ ادب پارس وسوار کران۔انسانی زندگی چھہ نہ اکہِ یا بییہ کہ نظریہ تہ نظامہ ورٲے چارہ۔ انسان چھہ نہ گُپُن۔ امس چھہِ پننۍ روحانی، جسمانی، نفسیاتی تہ وجودی تقاضہ یم امس سوچنہ خاطرہ ، عملہِ خاطرہ تہ نوۍ جہان تعمیر کرنہ خاطرہ مجبور چھہِ کران۔ یہ چھہ امۍ سند بجر نہ کہ ژھریر۔ مگر یہ نظام گژھہِ اکھ زیریں لہر بٔنتھ شاعری ہندس سازس منز رقص کرُن، نہ کہ کمچہ بٔنتھ اتھ ماز وُٹھن۔ مثلا ییلہ روحانیت ملہ گی بنہِ یا بتہ ترامین منز شرپہِ تیلہِ چھیہ سۅ روحانیت انسانہ سندِ خاطرہ شراپ بنان۔ مگر اگر یہ محبت، اعلی قدرہ تہ روحانی بنیاذن تلاش کران انسانس پننس تہ کاینات کس حقیقتس نزدیک انہِ، تیلہ چھہ یہ خدایہ سندس صفت تخلیقس، ربوبیتس تہ محبتس پانس منز شرپرتھ سہ زمزمۍ ساز بنان یُس تخلیقس رنزہ ناوان تہ نوۍ معنی عطا کران چھہ۔ دنیاہکۍ کٲتیا بٔڈۍ فنکار چھہِ نظریاتی فنکار ٲسۍ متۍ۔ مگر تمو دیت نہ پننس نظریس فنس پیٹھ حاوی گژھنہ تکیازِ فن چھہ اکھ آزادانہ تخلیقی عمل تہ یہ چھہ واریاہ چیز پانس اندر شرپراوان، مگر اگر یم چیز اتھ شولہ ونہِ کۅلہِ کھین تیلہ چھہ نہ یہ فن روزان۔ یہ ہیکہِ نظم گری ٲستھ شاعری نہ ۔ سوال چھہ نہ یہ زِ شاعری منز چھا پیغام کِنہ نہ، سوال چھہ یہ زِ یہ چھا شاعری۔ شیلے تہِ چھہ انقلابچ کتھ ونان تہ روسی تہ دنیا ہکۍ باقی کمیونسٹ شاعر تہِ۔ مگر شیلے سنز نظم چھیہ انقلابک استعارہ بنان، انقلابک کریکہ ناد نہ۔اوڈ ٹو دا ویسٹ ونڈچھہ انسانہ سندِ کربک تہ آزادانہ تخلیقی عملک اظہار حالانکہ اتھ منز چھہ اکھ پیغام۔ علامہ اقبال چھہ پنن سورے فلسفہ شاعری منز ونان، مگر ییلہ فنی جہژہ پننس مٔدرِس سازس سیتۍ رقص چھیہ کران تیلہ چھیہ نہ سۅ محض پیغامی شاعری بنان۔ بال جبریل تہ ارمغان حجاز، جاوند نامہ تہ زبور عجم چہ نظمہ چھیہ امیک ثبوت۔ مگر ییلہ پیغام لفظن ہند جامہ ژٔٹتھ تہ علامت تہ استعارہ، ساز تہ رقص تہ تصویر بننہ بجایہ وعظ چھہ بنان سہ چھہ ضرب کلیم چہ نظم گری ہنز صورت اختیار کران۔یہ چھ واریاہ مزہ دار مگر ورہ ہوٚل مسلہ، بہ کرہ اتھ پیٹھ بییہ کُنہِ ساتہ کتھ۔

نیب: پننہِ شاعری ہندین تمن چیزن پیٹھ ما ونکھ ژہ کینہہ یم چانہِ خیالہ کاشرِ شاعری ہندِ تعلقہ توجہس لایق چھہِ؟
حیات عامر حسینی: بہ کیا ونہ پننہِ شاعری متعلق۔ بہتر گیاو زِ نقاد تہ کاشر شاعری پرن والۍ کرہن اتھ پیٹھ پانہ کتھ۔ البتہ ابتداہس تہ سارنی جوابن منز چھہ میہ واریاہن کتھن کُن اشارہ دیتمت یم زن میانس انفرادی تہ اجتماعی لاشعورس، مذہبی، تاریخی، فلسفیانہ، فنی، سیاسی تہ تہذیبی نکتہ نظرس کُن اشارہ چھہ کران۔

زمرے:انٹرویو

Tagged as:

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s